Sunday - 2018 April 22
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 183318
Published : 7/9/2016 6:37

نئے تعلیمی سال کے موقع پر درس خارج میں رھبر انقلاب اسلامی کا خطاب:

علماء کا اولین اور اھم ترین فریضہ دین اور عفت و حیا کے دشمنوں سے مقابلہ کرنا ہے

آج اسلام کے خلاف دشمن اپنی ساری توانائی استعمال کررھا ہے لھذا علماء اور مؤمنین کو شیطانی حربوں سے محفوظ رہنے کے لئے بصیرت، سعی و کوشش سے کام لینا چاھئے تاکہ اسلامی تعلیمات کی نشر و اشاعت میں موجود دشمن کے تمام منصوبوں کا ناکام بنایا جاسکے۔
نئے تعلیمی سال کے موقع پر فقہ کے درس خارج میں رہبر انقلاب اسلامی نے فرمایا کہ علماء کا اولین اور اہم ترین فریضہ دین اور عفت و حیا کو مٹانے کے منصوبوں کا مقابلہ کرنا ہے-
 رھبر انقلاب اسلامی حضرت آیۃ اللہ العظمی خامنہ ای نے منگل کو حوزات علمیہ(علمی مراکز) کے نئے تعلیمی سال کے آغاز کے موقع پر اپنے پھلے درس خارج میں دینی اصول  سے عوام اور جوانوں کے ذھن و دل کو منحرف کرنے کے لئے انجام پانے والے وسیع منصوبوں کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا حوزہ ہای علمیہ اور علماء کو چاہئے کہ سائبر اسپیس اور اس سے استفادے کے مواقع کی شناخت کے ذریعے اسلامی تعلیمات سے لوگوں کو آگاہ کریں-
حضرت آیۃ اللہ العظمی خامنہ ای نے دینی مسائل کی نشر و اشاعت اور اسے بیان کرنے میں  «فرض شناسی»او موقع ومحل کی  صحیح شناخت کی اہمیت پر تاکید کرتے ہوئے فرمایا اگر انسان اپنی ذمہ داریوں اور فرائض کا صحیح طور پرادراک نہ کرسکے تو علم و تقوی حتی شجاعت کا بھی موثر اور مثبت نتیجہ برآمد نہیں ہوگا-
آپ نے لوگوں کے ایمان و عقائد کے خلاف وسیع پیمانے پر کی جانے والی منصوبہ بندیوں اور اس سلسلے میں بھاری رقومات خرچ کئے جانے کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ دشمن لوگوں میں شبھات پیدا کرنے اور اسی طرح عفت وحیا مخالف اقدامات کے ذریعے، مومن جوانوں کو اصول دین سے منحرف کرنے اور عفت و حیا کا پردہ چاک کرنے کے درپئے ہے اور آج یہ کام سائبر اسپیس کے ذریعے انجام پا رہا ہے-
حضرت آیۃ اللہ العظمی خامنہ ای نے اس منصوبے سے مقابلے کو علماء کا پہلا اور اہم ترین فریضہ قرار دیا اور فرمایا کہ علمی مراکز اور علمائے دین کو، اپنے آپ میں دشمن کے عظیم لشکر سے مقابلے کی صلاحیت پیدا کرنی چاہئے-
رھبر انقلاب اسلامی نے فرمایا کہ سائبر اسپیس میں فوائد و نقصانات دونوں ساتھ ہیں اس لئے ضرورت اس بات کی ہے کہ اس کے صحیح استعمال کے ذریعے اور مواقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے اسلامی تعلیمات کی وسیع پیمانے پر ترویج کی جائے-
حضرت آیۃ اللہ العظمی خامنہ ای نے روزمرہ کے شبہات اور ان کے جواب کی شناخت کو علمی مراکز کے اہم کاموں میں سے قرار دیا اور فرمایا کہ یہ کام فقاہت سے کوئی منافات نہیں رکھتا کیوں کہ فقہ، احکام عملی میں ہی منحصر نہیں ہے بلکہ«فقہ اللہ الاکبر»درحقیقت وہی اسلامی تعلیمات ہیں اور دین میں پیدا کئے جانے والے شبھات کے جواب کے لئے بھی، فقہ کے تعلق سے انجام پانے والی وسیع و صحیح کاوشوں کی مانند اقدام اور عمل کی ضرورت ہے۔
abna news 24


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 April 22