Friday - 2019 January 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 183913
Published : 23/10/2016 18:33

کربلا میں پیاس کی کیفیت کیا تھی؟

علامہ مجلسی ایک روایت نقل کرتے ہیں،جس میں آیا ہے کہ جناب عباس علیہ السلام نے جنگ کی اجازت مانگی لیکن آپ کو امام نے بچوں کے لئے پانی لانے پر مامور کیا،چنانچہ جیسا کہ مشہور ہے کہ جناب عباس علیہ السلام پانی لانے میں کامیاب نہ ہوسکے اور (خیموں کی طرف)واپسی میں درجۂ شہادت پہ فائز ہوگئے۔

ولایت پورٹل:
کربلا میں پیاس کی کیفیت کیا تھی؟
معتبر تاریخی مطالعہ سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ امام حسین علیہ السلام کی شہادت سے تین روز پہلے (ساتویں محرم کو) ابن زیاد کی طرف سے عمر بن سعد کو یہ پیغام ملا کہ«حسین علیہ السلام کو پانی سے دور رکھو اور انھیں ایک بوند پانی نہ پینے دو» اور اپنے اس طرز عمل کو حضرت عثمان پہ پانی بند کئے جانے کے مقابلے میں ایک طرح کا انتقام بتایا۔(۱)
ابن سعد نے یہ حکم ملتے ہی عمرو بن حجاج کو پانچ سو سواروں کے ساتھ دریائے فرات کی نگرانی پہ تعینات کردیا تاکہ امام (ع)اور آپ کے اصحاب و انصار تک پانی نہ پہنچ سکے۔(۲)
ان دو،تین،دنوں میں امام(ع) اور آپ(ع) کے اصحاب نے مختلف طریقے سے پانی حاصل کرنے کی کوشش کی اس لئے کہ اس تپتے ہوئے صحراء میں (جب کہ آپ کے کارواں میں عورتیں اور بچے بھی تھے ) پیاس کاتحمل کرنا بہت حوصلہ شکن تھا۔
بعض روایتوں میں آیا ہے کہ امام حسین علیہ السلام نے اپنے خیموں کے اطراف میں کئی کنویں کھودے لیکن جس وقت ابن زیاد کو یہ خبر پہنچی تو اس نے اور زیادہ سختی برتنے اور کنواں کھودنے کی ممانعت کا حکم ابن سعد کو لکھ بھیجا۔(۳)
اسی معتبر کتابوں میں یہ روایت ملتی ہے کہ تیس سوار اور بیس پیادہ کے ہمراہ نافع ابن ہلال کی علمداری میں حضرت عباس علیہ السلام نے رات کے وقت فرات پہ حملہ کیا۔
یہ حضرات عمرو بن حجاج کے سپاہیوں سے مقابلہ کرنے کے بعد پانی کی بیس مشکیں بھرنے میں کامیاب ہوجاتے ہیں۔(۴)اس روایت میں اس کا صحیح وقت تو نہیں بیان کیا گیا ہے،لیکن اس میں یہ عبارت«وَلَمَّا اشْتَدَّ عَلَی الْحُسَیْنِ(ع) وَاَصْحَابِهٖ الْعَطَشُ»(جب حسین علیہ السلام و اصحاب حسین علیہ السلام کی پیاس نے شدت اختیار کی نقل) ہوئی ہے۔
علامہ مجلسی نے اسی روایت میں آگے تمیم بن حصین خزاری نام کے عمر بن سعد کے ایک فوجی کے تمسخر کی بات لکھی ہے جو کہتا ہے:
اے حسین علیہ السلام !اور اے اصحاب حسین علیہ السلام:کیا تم آب فرات کو نہیں دیکھ رہے ہو کہ سانپ کے شکم کی طرح موجیں مار رہا ہے، خدا کی قسم! اس کا ایک قطرہ نہیں پی سکوگے یہاں تک کہ موت سے جاملو۔(۵)
حر نے بھی روز عاشورا کوفیوں کو نصیحت کرتے ہوئے امام(ع) اور آپ کے اصحاب پہ آب فرات بند کرنے کی بناء پر ان کی توبیخ و سرزنش کی ہے۔(۶)
اسی طرح پانی حاصل کرنے کے تئیں امام کی کوشش اور شمر کی طرف سے ممانعت اور امام سے اس کے تمسخر کرنے اور اس پر آپ ؑکے نفرین کرنے سے متعلق روایت بھی بعض کتابوں میں آئی ہے۔(۷)
علامہ مجلسی ایک روایت نقل کرتے ہیں،جس میں آیا ہے کہ جناب عباس علیہ السلام نے جنگ کی اجازت مانگی لیکن آپ کو امام(ع) نے بچوں کے لئے پانی لانے پر مامور کیا،چنانچہ جیسا کہ مشہور ہے کہ جناب عباس علیہ السلام پانی لانے میں کامیاب نہ ہوسکے اور (خیموں کی طرف)واپسی میں درجۂ شہادت پہ فائز ہوگئے۔(۸)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:    
۱۔بلاذری ، ج۳، ص ۱۸۰۔
۲۔ ایضاً،الفتوح ، ج۵، ص ۹۱۔
۳۔الفتوح،ج:۵،ص:۹۱«فقد بلغنی ان الحسین یشرب الماء ھو اولادہ و قد حضروا الآباء و نصبوا الآعلام فانظر اذا ورد علیک کتابی ھذا فامنعھم من حضر الآباء ما استطعت و ضیق علیہم و لا تدعھم یشربوا من ماء الفرات قطرۃ واحدۃ»۔
۴۔ بحار الانوار ، ج۴۴، ص ۳۱۷۔
۵۔ بحار الانوار ، ج۴۴، ص: ۳۱۷۔
۶۔ انساب الاشراف، ج۳، ص ۱۸۹، الارشاد، ص ۴۵۳۔
۷۔ابو الفرج اصفہانی،مقاتل الطالبین ، ص ۸۶، (بحار الانوار، ج۴۵، ص۵۱،کے نقل کرنے کے مطابق)۔
۸۔بحارالانوار،ج۴۵،ص۴۱۔۴۲ ۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2019 January 18