Monday - 2018 August 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 183934
Published : 25/10/2016 18:47

مولانا آباد حسین بجنوری

یاد رہے ! تقریباً ۱۰۰ برس قبل ہندوستان میں علوم دینیہ کے ساتھ اکثر علماء علم طب کو بھی حاصل کیا کرتے تھے اور وہ جب کسی دیہات یا علاقہ میں تبلیغ کے لئے جاتے تو دینی مسائل کے ساتھ ساتھ وہاں کے باشندوں کے لئے ایک اچھے طبیب بھی ہوتے تھے،شاید یہ ایک بہترین عمل تھا جس کے سبب علماء خدمت دین کرنے کے ساتھ اپنی معاشی حالات کو بھی بہتر طریقے سے چلاتے تھے۔


ولایت پورٹل:
مولانا سید آباد حیسن ایک بلند پایہ عالم ہونے کے ساتھ ساتھ ایک،زاہد اور پارسا انسان بھی تھے،آپ مغربی اترپردیس کے ضلع بجنور،گاؤں نگلی ڈھکیا کے رہنے والے تھے،اپنی ابتدائی تعلیم مکمل کرنے کے بعد عازم لکھنؤ ہوئے اور وہاں جاکر علوم معقول ومنقول میں مشغول ہوگئے، آپ نے علم تفسیر، حدیث اور فقہ کو صدر المحققین مولانا ناصر حسین صاحب سے حاصل کیا، آپ اتنے عظیم المرتبت شاگرد ثابت ہوئے کہ ناصر الملت ان پر افتخار کیا کرتے تھے،آپ نے سابق علماء کی روایت کو باقی رکھتے ہوئے علوم دینی کے ساتھ ساتھ علم طب میں بھی کمال حاصل کیا کہ جو بعد میں ان کا ذریعہ معاش بنا۔
یاد رہے ! تقریباً ۱۰۰ برس قبل ہندوستان میں علوم دینیہ کے ساتھ اکثر علماء علم طب کو بھی حاصل کیا کرتے تھے اور وہ جب کسی دیہات یا علاقہ میں تبلیغ کے لئے جاتے تو دینی مسائل کے ساتھ ساتھ وہاں کے باشندوں کے لئے ایک اچھے طبیب بھی ہوتے تھے،شاید یہ ایک بہترین عمل تھا جس کے سبب علماء خدمت دین کرنے کے ساتھ اپنی معاشی حالات کو بھی بہتر طریقے سے چلاتے تھے۔
وفات
آپ نے فیض آباد کے دیوگاؤں میں مستقل قیام کیا جہاں آپ تدریس و تبلیغ کے ساتھ ساتھ طبابت بھی کیا کرتے تھے،اگرچہ آپ کی تاریخ ولادت کے بارے میں کوئی دقیق اطلاع موجود نہیں ہے،لیکن آپ نے سن ۱۳۳۱ ہجری میں انتقال کیا،آپ کی اولاد میں سے مولانا محمد ابو جعفر تھے کہ جو آزادی ہند کے وقت پاکستان منتقل ہوگئے تھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔تذکرہ بے بہا،ص ۷۴ ۔
۲۔مطلع انوار ، ص ۳۳۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 August 20