Monday - 2018 June 25
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 184010
Published : 30/10/2016 19:53

دربار شام میں امام سجاد (ع) کا تاریخی خطبہ(۲)

خطیب جب منبر پر چڑھا اور خدا کی حمد و ثناء کے بعد امیرالمۆمنین اور امام حسین (علیہما السلام) کی بدگوئی اور معاویہ اور یزید کی تمجید و تعریف میں مبالغہ کیا اور طویل خطبہ دیا،اسی حال میں امام سجاد (علیہ السلام) نے کرائے کے خطیب سے مخاطب ہو کر بآواز بلند فرمایا: اے خطیب! وائے ہو تم پر کہ تم نے مخلوق کی خوشنودی کے وسیلے سے خالق کا غضب خرید لیا۔

ولایت پورٹل:
اس سے پہلی کڑی کے لئے نیچے لنک پر کلک کیجئے!
دربار شام میں امام سجاد (ع) کا تاریخی خطبہ(۱)
اس عرصے میں اہل شام نے اسلام کو امویوں کی آنکھ سے دیکھا تھا اور معاویہ کی جھوٹی تشہیری مہم کی وجہ سے وہ امویوں کو رسول اللہ (ص) کے پسماندگان اور اہل خاندان کے طور پر جانتے تھے،انہیں رسول اللہ (ص) کے دیدار کا شرف حاصل نہیں ہوا تھا اور انہیں امویوں نے بتایا تھا اور صرف یہی جانتے تھے کہ ایک«خارجی» کو قتل کیا گیا ہے جس نے "امیر مۆمنین یزید بن معاویہ کے خلاف خروج کیا تھا،اور اب اس کے خاندان کو قید کرکے شام لایا جارہا ہے؛ جبکہ کوفیوں کو معلوم تھا کہ قتل اور اسیر کئے جانے والے افراد کون ہیں اور کس خاندان سے تعلق رکھتے ہیں،چنانچہ شامیوں نےاس فتح کے شکرانے کے طور پر،شہر کی تزئین و آرائش کی تھی اور جشن منارہے تھے
امام سجاد (ع) کا مۆثر ترین اور حساس ترین خطبہ وہی تھا جو آپ (ع) نے دمشق کی مسجد میں دیا اور اس کی وجہ سے شام کے عوام نے معاویہ کے زمانے سے لے کر یزید کے زمانے تک ہونے والی یزیدی تشہیر کی حقیقت کو سمجھ لیا اور خاندان ابوسفیان کے سلسلے میں عوام کی نگاہ بالکل بدل گئی۔
اس مجلس میں یزید نے اپنے ایک درباری خطیب کو حکم دیا کہ علی اور آل علی (علیہم السلام) کی مذمت اور المیۂ کربلا کی توجیہ اور یزید کی تعریف کرے۔
خطیب منبر پر چڑھ گیا اور خدا کی حمد و ثناء کے بعد امیرالمۆمنین اور امام حسین (علیہما السلام) کی بدگوئی اور معاویہ اور یزید کی تمجید و تعریف میں مبالغہ کیا اور طویل خطبہ دیا،اسی حال میں امام سجاد (علیہ السلام) نے کرائے کے خطیب سے مخاطب ہو کر بآواز بلند فرمایا: اے خطیب! وائے ہو تم پر کہ تم نے مخلوق کی خوشنودی کے وسیلے سے خالق کا غضب خرید لیا،اب تم دوزخ کی بھڑکتی ہوئی آگ میں اپنا ٹھکانہ تیار سمجھو اورخود کو اس کے لئے تیار رکھو،اور پھر یزید سے مخاطب ہوئے اور فرمایا: اجازت دو گے کہ میں بھی لوگوں سے بات کروں؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حولہ جات:
۱۔ بحار الانوار ،ج ۴۵ ،ص ۱۳۹-
tebyan



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 June 25