Monday - 2018 Sep 24
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 184048
Published : 2/11/2016 16:57

اصو ل دین اور فروع دین کے لئے شیعہ مآخذ

شیعوں کے نزدیک بھی ائمہ طاہرین(ع)کی تعلیمات کے مطابق قرآن کریم دینی عقائد واحکام اور اسلامی علوم کا سب سے اہم سرچشمہ ہے۔


ولایت پورٹل:
شیعیت کی پہچان کے سلسلہ میں ایک اہم گفتگو یہ بھی ہے کہ شیعہ مذہب کے بنیادی مآخذ و مدارک کیا ہیں ؟یعنی شیعہ حضرات اپنے اصول دین اور فروع دین کو کس طرح اور کن ذرائع سے حاصل کرتے ہیں اور اس سلسلہ میں دوسرے مذاہب اور مذہب شیعہ کے درمیان کیا امتیازی یا مشترک نکات پائے جاتے ہیں ؟ان سوالات کا جواب یہ ہے کہ بارہ اماموں کے ماننے والے شیعہ اصول وفروع دین کو چار مآخذ سے حاصل کرتے ہیں:
۱۔قرآن مجید  
۲۔ سنت نبوی(ص)
۳۔اہل بیت(ع)کی احادیث
۴۔ عقل

چنانچہ ہم ذیل میں ہر ایک تفصیل ذکر کررہے ہیں۔    
الف :قرآن کریم
قرآن کریم کوتمام اسلامی مذاہب قبول کرتے ہیں، اگر چہ قرآن کریم کے مفاہیم سے استفادہ کے سلسلہ میں بعض جزئی مسائل کے بارے میں اختلاف پایا جاتا ہے مگر پھر بھی قرآن کریم تمام مسلمانوں کا مشترکہ مآخذ و مدرک ہے،اس طرح شیعوں کے نزدیک بھی ائمہ طاہرین(ع)کی تعلیمات کے مطابق قرآن کریم دینی عقائد واحکام اور اسلامی علوم کا سب سے اہم سرچشمہ ہے جیسا کہ امام جعفر صادق(ع)ارشاد فرماتے ہیں:«ان اللّٰه تبارک وتعالیٰ انزل فی القرآن تبیان کل شیء حتیٰ واللّٰه ما ترک اللّٰه شیئا یحتاج الیه العباد حتٰی لا یستطیع عبد یقول ولوکان ھٰذا انزل فی القرآن الاوقد انزله اللّٰه فیه»۔(۱)
ترجمہ:خدا وندعالم نے قرآن مجید میں ہر چیز کی وضاحت نازل فرما دی ہے اور خدا کی قسم ہدایت کے سلسلہ میں بندوں کو جن چیز وں کی ضرورت محسوس ہو سکتی ہے ان میں سے خداوند عالم نے کوئی چیز بھی نہیں چھوڑی ہے تاکہ کوئی یہ نہ کہہ سکے کہ اگر یہ حکم خداوند عالم کی جانب سے ہوتا تو قرآن مجید میں نازل ہوتا ،آگاہ ہو جاؤ کہ خداوند عالم نے اسے قرآن مجید میں نازل فرمادیا ہے۔
دوسرے مقام پر آپ(ع)نے یہ ارشاد فرمایا ہے:«ما من امر یختلف فیه اثنان الا وله اصل فی کتاب اللّٰه عزّوجلّ ولکن لا تبغله عقول الرجال»۔(۲)
ترجمہ:کوئی چیز ایسی نہیں ہے کہ جس کے بارے میں دولوگوں کے درمیان اختلاف ہو اور اللہ تعالیٰ کی کتاب میں اس کا بنیاد ی تذکرہ موجودنہ ہو لیکن لوگوں کی عقلیں اسے سمجھنے سے عاجز ہیں۔
(لہٰذا قرآن مجید کے ایسے ماہر مفسروں کی ضرورت ہے جو قرآن کے حقائق جانتے ہوں)ائمہ طاہرین(ع)کی نظر میں قرآن مجید کو اس درجہ بنیادی حیثیت حاصل ہے کہ اسلامی روایات قابل قبول ہونے کی شرط یہ ہے کہ قرآن مجید کے مطابق ہوں چنانچہ اگر کوئی روایت اس معیار پر کھری نہ اترے اور قرآن مجید سے میل نہ کھاتی ہو تو وہ قابل قبول نہیں ہے چنانچہ امام جعفر صادق(ع)نے فرمایا:«ماوافق کتاب الله فخذوہ وما خالف کتاب اللہ فدعوہ»۔(۳)
ترجمہ:جو(حدیث)کتاب خدا کے مطابق ہو اسے لو لے ،اور جو کتاب خدا کے بر خلاف ہو اسے چھوڑ دو۔
دوسرے مقام پر آپ نے ارشاد فرمایا:«ما لم یوافق من الحدیث القرآن فھو زخرف»۔(۴)
ترجمہ:جو حدیث قرآن مجید کے موافق نہ ہو وہ بکواس ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔اصول کافی، ج۱،ص۵۹ ،باب الرد الیٰ الکتاب والسنة،حدیث۱ـ
۲۔گذشتہ حوالہ،حدیث۶،ص۶۰ـ
۳۔اصول کافی، ج۱،باب الاخذ بالسنة، اور شواهد الکتاب، ج۱ـ
۴۔گذشتہ حوالہ، ج۴ـ
 
 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Sep 24