Monday - 2018 June 25
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 184064
Published : 3/11/2016 18:42

امام کاظم(ع)اور امام رضا(ع)کی عزاداری کا طریقہ کیا تھا؟

دعبل حضرت امام رضا علیہ السلام کی خدمت میں آئے آپ(ع) نے شعر اور امام حسین علیہ السلام پر گریہ سے متعلق کچھ کلمات ارشاد فرمائے منجملہ یہ کہ اے دعبل! جو شخص میرے جد حسین علیہ السلام کی مصیبتوں پر گریہ کرے خدا اس کے گناہوں کو بخش دیتا ہے۔

ولایت پورٹل:امام موسیٰ کاظم علیہ السلام کی عزاداری

امام رضا علیہ السلام سے نقل ہوا ہے کہ آپ(ع) نے فرمایا:جب ماہ محرم داخل ہوجاتا تو کوئی میرے پدر کو ہنستا ہوا نہیں دیکھتا،اور یہی کیفیت روز عاشورا تک باقی رہتی، اس روز میرے پدر پر حزن و مصیبت و اندوہ چھا جاتا،آپ(ع) گریہ کرتے اور فرماتے آج ہی کے دن حسین علیہ السلام کو (ان پر خدا کا درود و سلام ہو ) قتل کیا گیا۔(۱)
امام رضا علیہ السلام کی عزاداری
امام رضا علیہ السلام کا گریہ اس منزل میں تھا کہ فرمایا: یقیناً امام حسین علیہ السلام کی مصیبت کے دن نے ہماری پلکوں کو زخمی اور ہمارے آنسوؤں کو جاری کردیا ہے۔(۲)
دعبل حضرت امام رضا علیہ السلام کی خدمت میں آئے آپ(ع) نے شعر اور امام حسین علیہ السلام پر گریہ سے متعلق کچھ کلمات ارشاد فرمائے منجملہ یہ کہ اے دعبل! جو شخص میرے جد حسین علیہ السلام کی مصیبتوں پر گریہ کرے خدا اس کے گناہوں کو بخش دیتا ہے، پھر آپ(ع) نے حاضرین اور اپنے خانوادہ کے بیچ ایک پردہ نصب کیا تاکہ وہ امام حسین علیہ السلام کے مصائب پر آنسو بہائیں۔
اس کے بعد آپ(ع) نے دعبل سے فرمایا: امام حسین علیہ السلام  کا مرثیہ پڑھو کہ جب تک تم زندہ ہو ہمارے ناصر و مداح رہو، اور جب تک تمہیں قدرت ہے ہماری نصرت میں کوتاہی نہ کرو  دعبل نے اس حال میں کہ ان کی آنکھوں سے آنسو جاری تھے یہ شعر پڑھا:
                             أفاطم لو خلت الحسین مجدّلا               و قد مات عطشاناً بشط فرات
ترجمہ:اگر فاطمہ زہرا سلام اللہ علیھا اپنے حسین کو زمین پر پڑا دیکھ لیں کہ جو فرات کے کنارہ بھی پیاسا  شہید کردیا گیا۔
                            اذاً للطمت الخد فاطم عنده                     وأجریت دمع العین فی  الوجنات
ترجمہ:
اسی وقت فاطمہ( سلام اللہ علیھا ) اپنا چہرہ پیٹنے لگے گی اور ان کے رخساروں پر آنسو بہنے لگے گے۔
تو امام(ع) ور آپ(ع)کے اہل حرم کی صدائے گریہ بلند ہوگئی۔(۳)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔حسین نفس مطمئنہ،ص۵۶۔
۲۔ بحارالانوار،ج۴۴،ص۲۸۴۔
۳۔سابق حوالہ،ج۴۵،ص۲۵۷۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 June 25