Thursday - 2018 Sep 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 184864
Published : 1/1/2017 18:16

توحید کے متعلق شیعہ عقیدہ(۴)

ایک شخص نے امیر المومنین حضرت علی(ع)سے دریافت کیا:«کیا آپ نے اپنے پروردگار کو دیکھا ہے؟آپ(ع) نے فرمایا:میں ایسے خدا کی عبادت نہیں کرتا میں نے جسے نہ دیکھا ہو۔ اس شخص نے سوال کیا:خدا کو کیسے دیکھا؟امام (ع)نے فرمایا:«لاتدرکه العیون بمشاہدۃ العیان ولکن تدرکه القلوب بحقائق الایمان»۔آنکھیں اسے ظاہری طورپر نہیں دیکھ سکتیں بلکہ حقائق ایمانی کے سہارے قلوب اس کا ادراک کرتے ہیں۔


ولایت پورٹل:
ہم نے گذشتہ مسلسل تین مضامین توحید خداوندی سے متعلق شیعہ عقائد کو مدلل طور پر قارئین کی خدمت میں پیش کیا آج اسی سلسلے کی آخری کڑی نظر قارئین کرنے کی سعادت حاصل کررہے ہیں لہذا گذشتہ گفتگو کے تسلسل کو قائم رکھنے کے لئے ذیل میں دیئے گئے لنکس پر کلک کیجئے!
توحید کے متعلق شیعہ عقیدہ(۱)
توحید کے متعلق شیعہ عقیدہ(۲) 
توحید کے متعلق شیعہ عقیدہ(۳)
عدم رؤیت
خدا کی جسمانیت کے انکار کا لازمہ آنکھوں کے ذریعہ رؤیت باری تعالیٰ کے انکارکا مسئلہ ہے اس لئے کہ آنکھوں سے دیکھنے کے لئے ضروری ہے کہ کوئی چیز کسی خاص جگہ ، خاص فاصلہ پر روشنی میں سامنے موجود ہو ورنہ رؤیت ممکن نہ ہوگی،بدیھی طور پر ان تمام شرائط کا لازمہ جسمانیت ہے جو خدا کے لئے محال ہے،ہاں دل کی آنکھوں سے اس کی رؤیت ممکن ہے۔کیونکہ اس کی حقیقت علم اور ایمان کامل سے تعلق رکھتی ہے ۔اسی لئے ائمہ طاہرین(ع) ظاہری آنکھوں سے خدا کی رؤیت کا شدت سے انکار کرتے تھے،اور ساتھ ہی ساتھ رؤیت قلبی کی تاکید فرماتے تھے۔
ایک شخص نے امیر المومنین حضرت علی(ع)سے دریافت کیا:«کیا آپ نے اپنے پروردگار کو دیکھا ہے؟
آپ(ع) نے فرمایا:میں ایسے خدا کی عبادت نہیں کرتا میں نے جسے نہ دیکھا ہو۔ اس شخص نے سوال کیا:خدا کو کیسے دیکھا؟امام (ع)نے فرمایا:«لاتدرکه العیون بمشاہدۃ العیان ولکن تدرکه القلوب بحقائق الایمان»۔(۱)آنکھیں اسے ظاہری طورپر نہیں دیکھ سکتیں بلکہ حقائق ایمانی کے سہارے قلوب اس کا ادراک کرتے ہیں۔
چونکہ آنکھوں کے ذریعہ رؤیت باری تعالیٰ عقلا محال ہے لہٰذا رؤیت بصری کے لئے آیات یا روایات کا سہارا نہیں لیا جا سکتا اس لئے کہ جیسے «الرحمٰن علی العرش استویٰ»کو خدا کے تخت یا کرسی وغیرہ پر بیٹھنے کی دلیل کو تسلیم نہیں کیا جاسکتا اسی طر ح ایۂ کریمہ «وُجُوہٌ یَوْمَئِذٍ نَاضِرَۃٌ إِلَی رَبِّہَا نَاظِرَۃٌ »(۲)کے ظاہری معنی کو بھی قیامت میں صاحبان ایمان کے لئے اپنی آنکھوں سے خداکی رؤیت کی دلیل قرار نہیں دیا جا سکتا۔
اسی طرح سے پیغمبر اکرم(ص) کی جانب منسوب یہ روایت «مؤمنین خدا کو روز قیامت اسی طرح دیکھیں گے جیسے چودھویں کے چاند کودیکھتے ہیں»بھی قابل قبول نہیں ہے اس لئے کہ اگر قرآن کے ظاہری معنی یا کوئی حدیث عقل قطعی کے حکم سے ٹکرا رہے ہوں اور تجسیم وتشبیہ کے مستلزم ہوں توآیت کے ایسے معنی یا حدیث کوقبول نہیں کیا جاسکتا بلکہ یا تو ان کی تاویل کی جائے گی یا توقف کیا جائے گا۔
حلول واتحاد کا انکار
تنزیہہ کا ایک اورلا زمہ خدا کے بارے میں حلول اور اتحاد کا انکارہے،خدا کی ذات نے نہ کسی چیز میں حلول کیا ہے اور نہ کرے گی وہ چیز انسان ہو یا انسان کے علاوہ کچھ اور، انسان بھی نبی اور ولی خدا ہو یا عام آدمی ـــــــــ اسی طرح اس کی ذات کسی شئے کے ساتھ نہ متحد ہوئی تھی اور نہ ہوگی،اس لئے کہ حلول اور اتحاد کے حقیقی معنی کا لازمہ نقص اور احتیاج ہے ،حلول کرنے والی چیز محل کی محتاج ہوتی ہے ،اور اتحاد ترکیب و محدودیت کا مستلزم ہوتا ہے،اس بناء پر حضرت عیسیٰ(ع)کے جسم میں خداکاحلول یا ان سے ذات الٰہی کے اتحاد کاعیسائیوں کا عقیدہ درست نہیں ہے۔بعض مسلم عرفاء اور اہل تصوف کی بعض عبارتیں جو حلول یا اتحاد پر دلالت کرتی ہیں ان کی تاویل ضروری ہے اور اگر واقعاً کوئی ان کے ظاہری معنی کا واقعاًمعتقد ہے تو وہ کافر ہے۔(۳)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔نہج البلاغہ، خطبہ۱۷۹۔
۲۔سورہ قیامت:آیت۲۱۔۲۲
۳۔تلخیص المحصل، ص۳۶۰ ۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Sep 20