Thursday - 2018 Sep 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 185107
Published : 17/1/2017 17:14

رسول اللہ(ص) ایک مہربان طبیب:امام علی علیہ السلام

رسول اللہ (ص) ایسے طبیب تھےکہ جو اپنے طب کے وسائل وعلاج کو ( لوگوں کے درمیان موجود مہلک اورمختلف بیماریوں کےعلاج کے لیے) ہمیشہ آمادہ رکھتے تھے،انہوں نے اپنے مرہم کو اچھی طرح آمادہ اوروسائل کو اچھی طرح تیار کررکھا تھا اورضرورت کے وقت ایسے دلوں پررکھتے تھےکہ جو حقائق کو نہیں دیکھتے تھے اورایسے کانوں کو ٹھیک کرتے تھےکہ جو حق کی آواز کو نہیں سنتے تھےاورحق کو بیان کرنےسے عاجز زبانوں کو درست کرتے تھے اوراپنی دوائی کے ذریعے ایسے دلوں کی شفا عطا کرتے تھے کہ جو غفلت اورسرگردانی میں ڈوبے ہوئے تھے۔


ولایت پورٹل:
حقیقی کمال کے حصول کے لئے تشویق و ترغیب وہ اہم ذریعہ ہے جس کے سبب انسان منزل کمال تک پہونچنے کے ساتھ ساتھ غفلت اور ظلمت سے بھی دور رہتا ہے،چنانچہ پیغمبراکرم صلی اللہ علیہ وآلہ  وسلم اپنی تربیتی رسالت میں حق کی جانب راغب کرنے کے ذریعے لوگوں کو تشویق دلاتے تھے اورخبردار اورڈرانے کے ذریعے انہیں ہلاکت سے دور کرتے تھے،امیرالمؤمنین علی علیہ السلام نے اس بارے میں فرمایا ہے: «طبیب دوار بطبه، قد أحکم مراهمه، و أحمی مواسمه، یضع ذلک حیث الحاجة الیه، من قلوب عمی، و آذان صم، و ألسنة بکم، متتبع بدوائه مواضع الغفلة، و مواطن الحیرة»۔
 وہ ایک ایسے طبیب تھےکہ جو اپنی طب کے وسائل اورعلاج کے ذریعے( لوگوں کے درمیان موجود مہلک اورمختلف بیماریوں کےعلاج کے لیے) ہمیشہ گھومتےتھے، انہوں نے اپنی مرہم کو اچھی طرح آمادہ اوروسائل کو اچھی طرح سرخ کررکھا تھا اورضرورت کے وقت ایسے دلوں پررکھتے تھےکہ جو حقائق کو نہیں دیکھتے تھےاورایسے کانوں کو ٹھیک کرتے تھےکہ جو حق کو نہیں سنتے تھے اورحق کو بیان کرنے سےعاجز زبانوں کو درست کرتے تھےاوراپنی دوائی کے ذریعے ایسے دلوں کی تلاش کیا کرتے تھے کہ جوغفلت اورسرگردانی میں ڈوبے ہوئے تھے۔
دینی محقق ڈاکٹرمصطفی دلشاد تہرانی نےاپنی کتاب(مشرب مہر،روش ہای تربیت در نہج البلاغہ) میں امام علی علیہ السلام کی نظر میں نفس کی تربیت اوراس کےباطنی آرام وسکون پرپہنچنےاورانسان کے اندربرپا ہونے والے آشوب کےمقابلے میں نفس کی حفاظت کی روش کو بیان کیا ہے،تاہم بحث کے دوران علماء کے نقطہ نظرات اورآیات اورروایات سے بھی استفادہ کیا ہے،یہاں پرہم  اس کتاب کا اقتباس پیش کرتےہیں۔
تشویق کا مطلب ابھارنا ،شوق دلانااورترغیب دلانا ہےاورتنبیہ یعنی بیدارکرنا، آگاہ کرنا اورخبردارکرنا ہے اورتشویق اورتنبیہ کی روش سے مراد آدمی کے اندراس معنی کے تحقق کے لیےآداب کا استعمال ہے یعنی کمال مطلق کی جانب انسان کی صلاحیتوں کو پروان چڑھانے کے لیے ابھارنے اورخبردار کرنے کے لیے آداب ہیں،جیسا کہ امیرالمؤمنین علی علیہ السلام نے آدمی کی تربیت میں الہی ثواب وعذاب کے کردارکے بارے میں فرمایا ہے:«ان الله سبحانه وضع الثواب علی طاعته، و العقاب علی معصیته، ذیادة لعباده عن نقمته، و حیاشة لهم الی جنته»۔
ترجمہ:بتحقیق اللہ تعالیٰ نے اطاعت پرثواب اورگناہ اورمعصیت پرعذاب قراردیا ہوا ہے تاکہ اپنے بندوں کواپنے عذاب سے روکےاورجنت کی  جانب روانہ کرے۔
الہی انبیاء بھی لوگوں کو بشارت بھی دیتے تھےاورعذاب سے ڈراتے بھی تھے اورپیغمبراکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بھی یہی کیفیت تھی،جیسا کہ امیرالمؤمنین علیہ السلام فرماتے ہیں :«فان الله جعل محمدا - صلی الله علیه و آله - علما للساعة، و مبشرا بالجنة، و منذرا بالعقوبة»۔
ترجمہ:بتحقیق اللہ تعالیٰ نے محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو قیامت کی علامت اورجنت کی بشارت دینے والے اوراپنے عذاب سے ڈرانے والے قراردیا تھا۔
حقیقی کمال  کے حاصل کرنے کے لئے شوق دلانا اورخبردار کرنا ایک بہترین طریقہ تربیت ہے،پیغمبراکرم صلی اللہ علیہ وآلہ  وسلم اپنی تربیتی رسالت میں حق کی جانب راغب کرنے کے ذریعے  لوگوں کو ابھارتے تھے اورخبردار اور ڈرانے کے ذریعے انہیں ہلاکت سے دور کرتے تھے،امیرالمؤمنین علی علیہ السلام نے اس بارے میں فرمایا ہے:«طبیب دوار بطبه، قد أحکم مراهمه، و أحمی مواسمه، یضع ذلک حیث الحاجة الیه، من قلوب عمی، و آذان صم، و ألسنة بکم، متتبع بدوائه مواضع الغفلة، و مواطن الحیرة»۔
ترجمہ:وہ ایک ایسے طبیب تھےکہ جو اپنی طب کے وسائل وعلاج کو ( لوگوں کے درمیان موجود مہلک اورمختلف بیماریوں کےعلاج کے لیے) ہمیشہ آمادہ رکھتے تھے،انہوں نے اپنے مرہم کو اچھی طرح آمادہ اوروسائل کو اچھی طرح تیار کررکھا تھا اورضرورت کے وقت ایسے دلوں پررکھتے تھےکہ جو حقائق کو نہیں دیکھتے تھے اورایسے کانوں کو ٹھیک کرتے تھےکہ جو حق کی آواز  کو نہیں سنتے تھےاورحق کو بیان کرنےسے عاجز زبانوں کو درست کرتے تھے اوراپنی دوائی کے ذریعے ایسے دلوں کی شفا عطا کرتے تھے کہ جو غفلت اورسرگردانی میں ڈوبے ہوئے تھے۔
شبستان



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Sep 20