Wed - 2018 Oct. 17
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 186427
Published : 3/4/2017 15:41

امام کا علم اور اس کے کمالات

امام علی رضا علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں:امام ایساعالم ہوتاہے جس میں جہالت کا کوئی امکان نہیں ہے ایسا راہبر ونگہبان ہے جس میں ضعف وسستی نہیں ہوتی،تقدس وطہارت ،زہد وپارسائی اور علم وعبادت کا سر چشمہ ہوتا ہے اس کے نسب میں کوئی عیب نہیں ہوتا، حسب میں کوئی اس کی برابری نہیں کرسکتا، اس کا علم زیادہ اور حلم کامل ہوتاہے وہ واقف امامت اور دانائے سیاست ہو تا ہے۔

ولایت پورٹل:قارئین کرام! ہم نے امامت کے حوالہ سے جن ابحاث کا آغاز کیا تھا ہم آج اس کے اہم مرحلے میں داخل ہورہے ہیں کہ جس کا تعلق امام کے علم و معرفت سے ہے،چونکہ خداوند عالم نے امامت کو نبوت کا استمرار بناکر نظام ہدایت میں جگہ عطا فرمائی ہے جب تک امام کے خداداد علم کے ہم معترف نہ ہوں تب تک اس سے حاصل شدہ ہدایت بے معنی ہوکر رہ جائے گی لہذا علم امام کی اس اہم گفتگو کو ابتداء سے انتہا تک ملاحظہ فرمائیں:
امام کے لئے دین کے احکام اور مسلمانوں کے مصالح و مفاسد سے واقف ہونا ضروری ہے اسی طرح تربیت اور تزکیۂ نفوس کی راہ و روش سے بھی آگاہ ہونا چاہئے تاکہ امامت کے اہداف کو عملی جامہ پہنا سکے اور چونکہ اس کا اخلاق و کردار لوگوں کے لئے نمونہ اور اسوہ ہے لہٰذا اسے تمام فضائل وکمالات نفسانی کا مالک اور اعلیٰ اخلاقی اقدار سے آراستہ ہو نا چاہئےچنانچہ امام رضا علیہ السلام اس سلسلہ میں فرماتے ہیں:
«الامام عالم لا یجھل وراع لاینکل ،معدن القدس والطهارۃ والنسک والزھادۃ والعلم والعبادۃ لا مغمزفیة فی نسب ولا یدانیه ذو حسب ۔۔۔۔۔۔نامی العلم ،کامل الحلم ،مصطلع بالامامة عالم بالسیاسة»امام ایساعالم ہوتاہے جس میں جہالت کا کوئی امکان نہیں ہے ایسا راہبر ونگہبان ہے جس میں ضعف وسستی نہیں ہوتی،تقدس وطہارت ،زہد وپارسائی اور علم وعبادت کا سر چشمہ  ہوتا ہے اس کے نسب میں کوئی عیب نہیں ہوتا، حسب میں کوئی اس کی برابری نہیں کرسکتا، اس کا علم زیادہ اور حلم کامل ہوتاہے وہ واقف امامت اور دانائے سیاست ہو تا ہے۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Oct. 17