Tuesday - 2018 August 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 186515
Published : 6/4/2017 15:14

کھیل کود کے اوقات میں کیسے کریں بچوں کی تربیت؟(2)

آنٹن سمیو نویچ ماکارنو جو روس کے معروف ماہر امور پرورش ہیں، کہتے ہیں:کھیل میں بچہ جیسا ہوتا ہے، بڑا ہوکر کام میں بھى ویسا ہى ہوگا، کیونکہ ہر کھیل میں ہر چیز سے پہلے فکر و عمل کى کوشش کارفرما ہوتى ہے،اچھا کھیل اچھے کام کے مانند ہے، جو کھیل آشکارہوتا ہے اس میں بچے کے احساسات اور آرزوئیں ظاہر ہوتى ہیں،کھیلنے والے بچے کو غور سے دیکھیں،اسے دیکھیں کو جو پروگرام اس نے اپنے لیے بنایا ہے اس پر کیسے حقیقت پسندى سے عمل کرتا ہے،کھیل میں بچے کے احساسات حقیقى اور اصلى ہوتے ہیں،بڑوں کو ان سے کبھى بھى بے اعتناء نہیں رہنا چاہیئے۔


ولایت پورٹل:قارئین کرام! ہم نے تربیت اولاد کے متعلق کھیل کی اہمیت کے پیش نظر یہ بیان کیا تھا کہ:کھیل بچے کے لیے ایک فطرى ورزش ہے ،اس سے اس کے پٹھے مضبوط ہوتے ہیں،اس کى فہم اورعقلى قوتوں کو کام میں لاتى ہے اور اسے مزید طاقت عطا کرتى ہے، بچے کے اجتماعى جذبات اور احساسات کو بیدار کرتى ہے، اسے معاشرتى زندگى گزارنے اور ذمہ داریوں کو قبول کرنے پر آمادہ کرتى ہے،لہذا اس موضوع پر مکمل معلومات کے لئے نیچے دیئے گئے لنک پر کلک کیجئے!
کھیل کود کے اوقات میں کیسے کریں بچوں کی تربیت؟(1)
گذشتہ سے پیوستہ:الیکسى میکیم دیچ گورکى لکھتے ہیں:کھیل بچوں کے لیے جہاں ادراک کى طرف راستہ ہے،وہ راستہ کہ جس پہ وہ زندگى گزارتے ہیں، وہ راستہ کہ جس پہ بدل کے انہیں جانا ہے،کھیلنے والا بچہ اچھلنے کودنے کى ضرورت پورى کرتا ہے چیزوں کے خواص سے آشنا ہوتا ہے،کھیل بچے کو آداب معاشرت سیکھنے میں مدد دیتا ہے،بچے نے جو کچھ دیکھا ہوتا ہے اور جو کچھ وہ جانتا ہے اسے کھیل میں ظاہر کرتاہے،کھیل اس کے احساس کو مزیدگہرا کردیتا ہے اور اس کے تصورات کو واضح تر بنادیتا ہے ۔بچے گھر بناتے ہیں،کارخانہ تعمیر کرتے ہیں، قطب شمالى کى طرف جاتے ہیں، فضا میں پرواز کرتے ہیں، سرحدوں کى حفاظت کرتے ہیں اور گاڑى چلاتے ہیں۔
آنٹن سمیو نویچ ماکارنو جو روس کے معروف ماہر امور پرورش ہیں، کہتے ہیں:کھیل میں بچہ جیسا ہوتا ہے، بڑا ہوکر کام میں بھى ویسا ہى ہوگا، کیونکہ ہر کھیل میں ہر چیز سے پہلے فکر و عمل کى کوشش کارفرما ہوتى ہے،اچھا کھیل اچھے کام کے مانند ہے، جو کھیل آشکارہوتا ہے اس میں بچے کے احساسات اور آرزوئیں ظاہر ہوتى ہیں،کھیلنے والے بچے کو غور سے دیکھیں،اسے دیکھیں کو جو پروگرام اس نے اپنے لیے بنایا ہے اس پر کیسے حقیقت پسندى سے عمل کرتا ہے،کھیل میں بچے کے احساسات حقیقى اور اصلى ہوتے ہیں،بڑوں کو ان سے کبھى بھى بے اعتناء نہیں رہنا چاہیئے۔(1)
ولیم میکڈوگل رقم طراز ہیں:قبل اس کے کہ فطرت میدان عمل میں داخل ہو، کھیل کسى شخص کے فطرى میلان کا مظہر ہوتا ہے۔(2)
لہذا بچہ اگر چہ کھیل میں ظاہراً کوئی اہم مرسوم کام بھی انجام نہ دے لیکن اس کے باوجود کھیل،بچے کے لئے ایک مستقل کام ہے،اسى کھیل کے دوران بچے کے فطرى اور ذاتى میلانات ظاہر ہوتے ہیں اسى میں اس کا اجتماعى و انفرادى کردار صحت پذیر ہوتا ہے اور اس کے مستقبل کو روشنی ملتی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱ ۔روان شناسى تجربى کودک،ص 130۔
۲۔روان شناسى کودک،ڈاکٹر جلالى، ص 332۔


جاری ہے۔ ۔ ۔ ۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 August 14