Tuesday - 2018 August 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 186522
Published : 6/4/2017 16:21

رؤیت خدا کے سلسلے میں ابن قیّم کا نظریہ(۱)

ابن قیم کہتے ہیں کہ:جس وقت اہل بہشت جنت میں عیش و آرام اور بہشتی نعمتوں میں غرق ہوں گے اور ایک دوسرے کو مبارک باد دے رہے ہوں گے،اچانک ایک نور چمکے گا جو تمام جنت کو روشن ومنو ر کردے گا اس وقت تمام لوگ اوپر کی طرف اپنا سر اٹھائیں گے، تو پتہ چلے گا کہ یہ تو خدا کا نور ہے جو کسی پر بھی مخفی و پوشیدہ نہیں ہے، اسی حالت میں وہ خدا کو اپنے سروں کے اوپر دیکھیں گے،جو اہل بہشت کو سلام کرنے کے لئے حاضر ہوا ہوگا۔

ولایت پورٹل:ابن تیمیہ کے شاگرد اور ہم فکرابن قیّم نے اس سلسلہ میں ایک طویل قصیدہ کہا ہے، جس کا نام کافیۃ الشافیہ ہے جس کی شرح حنبلی علماء میں سے احمد بن ابراہیم نے دوجلدوں میں توضیح المقاصد کے نام سے لکھی ہے ، ابن قیّم لکھتا ہے کہ اہل بہشت خداوند عالم کا دیدار کریں گے اور اس کے چہرۂ مبارک پر نظر کریں گے، اس نے اسی موضوع کو اپنے اشعار میں بیان کیا:
                                                     وَیَرَوْنَهُ سُبْحَانَهُ مِنْ فوَقِهِمْ       رُوْیَا الْعِبَادِ کَمَاْ یُریَ الْقَمَرَانِ
                                                   هٰذَا تَوَاتَرَ عَنْ رَسُوْلِ اللہِ لَمْ         یُنْکِرہُ اِلاّٰ فَاْسِدُ الاِیْمَانِ

ترجمہ:اہل بہشت خداوندعالم کو اپنے سر کے اوپر سے دیکھیں گے، جس طرح چاند و سورج کو دیکھتے ہیں،یہ بات حضرت رسول اکرم(ص) سے بطور تواتر نقل ہوئی ہے اور اس بات کا انکار وہی کرتا ہے جس کا ایمان فاسد ہے۔
شارح (صاحب توضیح المقاصد) کہتا ہے کہ تمام انبیاء و مرسلین،صحابہ وتابعین اور ائمہ اسلام کا اس بات(کہ اہل بہشت خدا کا دیدار کریں گے) پر اتفاق ہے، لیکن بعض اہل بدعت فرقے مثلاً جُہمَیہ، معتزلہ، باطنیہ اور رافضیہ خدا کے دیدار کے منکر ہیں،لہٰذا جو بھی اس کی ملاقات کا امیدوار ہے اسے چاہئے کہ عمل صالح کرے۔
ابن قیّم اپنے مذکورہ قصیدہ میں مزید کچھ اشعار کہتا ہے ہم جن کے ترجمہ پر اکتفاء کررہے ہیں۔
ترجمہ اشعار:
جس وقت اہل بہشت جنت میں عیش و آرام اور بہشتی نعمتوں میں غرق ہوں گے اور ایک دوسرے کو مبارک باد دے رہے ہوں گے،اچانک ایک نور چمکے گا جو تمام جنت کو روشن ومنو ر کردے گا اس وقت تمام لوگ اوپر کی طرف اپنا سر اٹھائیں گے، تو پتہ چلے گا کہ یہ تو خدا کا نور ہے جو کسی پر بھی مخفی وپوشیدہ نہیں ہے، اسی حالت میں وہ خدا کو اپنے سروں کے اوپر دیکھیں گے،جو اہل بہشت کو سلام کرنے کے لئے حاضر ہوا ہے، اس وقت خداوندعالم ان سے خطاب کرے گا: السلام علیکم ، اس موقع پر اہل بہشت خدا کو واضح طور پر دیکھیں گے۔(توضیح المقاصد،ج۲،ص۵۷۳)
جاری ہے ۔۔۔۔۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 August 14