Saturday - 2018 july 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 186791
Published : 20/4/2017 14:46

شوہر کے فرائض:

بیوی کے ساتھ خوش اخلاقی کا مظاہرہ(1)

ممکن ہے کہ آپ ان حوادث سے اتنے کبیدہ خاطر ہوجائیں کہ کوہ آتش فشاں کی مانند پھٹنے کے لئے تیار ہوں چونکہ اس چرخ کہن اور ظالم لوگوں تک آپ کے دست انتقام نہیں پہونچتے لیکن جیسے ہی گھر میں داخل ہوتے ہیں اب چاہتے ہو کہ اپنی طاقت کا مظاہرہ کریں اور اپنی انتقام کی آگ کو ان مظلوم اور بے گناہ بیوی بچوں پر اگل ڈالیں تاکہ آپ کا غصہ ٹھنڈا ہوجائے اور اب ایسا معلوم ہوتا ہے کہ گھر میں باپ نہیں موت کا فرشتہ نازل ہوگیا ہے۔

ولایت پورٹل:یہ دنیا ایک منظم نقشہ کے ماتحت اپنے معین راستہ  کی طرف رواں دواں ہے، حوادث زمانہ  ایک نامحسوس نظم و ترتیب کے ساتھ ہمارے سامنے ظاہر ہوتے  رہتے ہیں اور ہمارا ناچیز وجود اس وسیع و عریض  عالم  میں  ایک چھوٹے سے ذرہ کی مانند ہے کہ جو ہر لمحہ ایک سمت میں حرکت کرتا ہے اور دوسرے ذرات سے ٹکرا جاتا ہے،اس عالم  کے نظم کی باگ ڈٖور ہمارے ہاتھوں میں نہیں ہے اور اس کائنات  میں رونما ہونے والے حوادث ہماری مرضی کے مطابق واقع نہیں ہوتے، صبح کو جب ہم گھر سے نکلتے ہیں ہمیں یہ معلوم نہیں ہوتا کہ کون سا حادثہ ہماری گھات میں بیٹھا ہے  کہ جس کے سبب ہم شام کو گھر لوٹ کر آئیں یا نہ آئیں   اور ہم اس زندگی اور تلاش معاش کے میدان میں ۔ کہ جو  بلا مبالغہ  میدان جنگ سے کم نہیں ۔بہت سی جاں فرسا مشکلات کے روبرو ہوتے ہیں  مثلاً ٹیکسی کے انتظار میں گھنٹوں کھڑے رہے، فلاں شخص نے ہماری توہین کی ہے، کچھ دیگر افراد نے ہماری عیب جوئی اور ہمیں ملامت کیا ہے، فلاں شخص نے ہمارے معاشی حالات کو بگاڑنے کی کوشش کی ہے، دفتر کا سربراہ ہمہارے کام سے خوش نہیں ،حساب کتاب میں انسان کا چیک واپس ہوگیا ،اب معلوم نہیں اسٹامپ واپس ملے یا نہ ملے ، قرضدار اپنے قرضہ کے لئے اصرار کررہا ہے  اور اسی کے مانند دوسرے دسیوں بلکہ سینکڑوں چھوٹے بڑے حوادث  ہر روز ہم سب کی زندگی میں پیش آتے رہتے ہیں۔
اور ممکن ہے کہ آپ ان حوادث سے اتنے کبیدہ خاطر ہوجائیں  کہ کوہ آتش فشاں کی مانند پھٹنے کے لئے تیار ہوں چونکہ اس چرخ کہن اور ظالم لوگوں تک آپ کے دست انتقام نہیں پہونچتے لیکن جیسے ہی گھر میں داخل ہوتے ہیں اب چاہتے ہو کہ اپنی طاقت کا مظاہرہ کریں اور اپنی انتقام کی آگ کو ان مظلوم اور بے گناہ بیوی بچوں پر اگل ڈالیں  تاکہ آپ کا غصہ ٹھنڈا ہوجائے  اور اب ایسا معلوم ہوتا ہے  کہ گھر میں باپ نہیں موت کا فرشتہ نازل ہوگیا ہے، بچے چوہوں کی طرح فرار کرتے ہوئے نظر آتے ہیں کہ خدا نہ کرے ! کوئی چھوٹا سا بہانہ باپ کے ہاتھ آجائے ، کھانے میں نمک کم یا زیادہ ہوجائے ، چائے تیار  نہ ہو ، کوئی بچہ ذرا شور مچادے ، گھر کی حالت ذرا نامنظم ہو کوئی ایسی بات زوجہ کے منھ سے نکل جائے کہ جس کو جناب پسند نہیں کرتے پھر کیا کہنا جناب بمب کی طرح پھٹ جائیں گے اور چلّانا اور دھاڑنا شروع کردیں گے اس کو برا بھلا کہیں گے تو اس کو ماریں گے اس طرح گھر کی پر سکون فضا کہ جس میں آرام کرنے کی خاطر آئے تھے جہنم کی طرح جلادینے والی  آگ میں تبدیل ہوجائے گی ، اور پھر  اپنی  ہاتھوں سے  بھڑکائی ہوئی دوزخ میں یہ خود بھی جلیں گے اور اس کے ساتھ ساتھ معصوم بچے اور بے گناہ بیوی بھی جلتی رہی گی اور اگر بچے  اس وحشناک ماحول سے فرار ہوکر گلی کوچہ میں پریشان پھرنے بھی لگیں تو دل سے یہی دعا کریں گے ، خدایا  کب یہ جہنم کا داروغہ گھر سے جائے کب ہمیں سکون میسر ہو؟
جاری ہے ۔۔۔۔۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 july 21