Tuesday - 2018 Dec 11
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 186871
Published : 24/4/2017 15:39

شوہر کے فرائض:

بیوی سے بد اخلاقی کا انجام

جناب لقمان حکیم فرماتے ہیں:ہوشیار اور عقلمند انسان کو اپنے گھر کے افراد کے درمیان بچے کی طرح رہنا چاہیئے اور مردانہ طور طریقوں کو گھر سے باہر کے لئے رکھنا چاہیئے۔


ولایت پورٹل:قارئین کرام! ہم نے گذشتہ کالم میں بیوی کے ساتھ خوش اخلاقی کے بعض عملی نمونوں کی طرف آپ کی توجہات مبذول کرائی تھیں، اور آج اسی ضمن میں پیغمبر اکرم(ص) اور ان کی آل پاک کے اقوال کی روشنی میں خوش اخلاقی کی اہمیت پر گفتگو ہوگی لہذا سابق کالم سے واقفیت کے لئے اس لنک پر کلک کیجیئے!
بیوی کے ساتھ خوش اخلاقی کا مظاہرہ(3)
گذشتہ سے پیوستہ:دین اسلام نے اچھے اخلاق کو کمال ایمان اور دینداری کی علامت قرار دیا ہے چنانچہ جناب ختمی مرتبت(ص) ارشاد فرماتے ہیں: لوگوں کے درمیان ایمان کے اعتبار سے وہ شخص کامل ہے کہ جو ان میں سب سے زیادہ خوش اخلاق ہو  اور تم میں سب سے اچھا وہ شخص ہے کہ جو اپنے اہل و عیال کے ساتھ نیکی اور احسان کرتا ہو۔(۱)
نیز آپ(ص) نے ارشاد فرمایا:کوئی بھی عمل حسن خلق سے بہتر نہیں ہے۔(۲)
حضرت امام صادق علیہ السلام نے ارشاد فرمایا:دوسروں کے ساتھ نیکی  اور حسن خلق سے پیش آنے کے سبب گھر آباد اور عمریں لمبی ہوتی ہیں۔(۳)
نیز آپ(ص) ہی کا ارشاد گرامی ہے کہ:بد اخلاق اپنے آپ کو عذاب میں مبتلاء کرلیتا ہے۔(۴)
جناب لقمان حکیم فرماتے ہیں:ہوشیار اور عقلمند انسان کو اپنے گھر  کے افراد کے درمیان بچے کی طرح رہنا چاہیئے اور  مردانہ طور طریقوں کو گھر سے باہر کے لئے رکھنا چاہیئے۔(۵)
پیغمبر اکرم (ص) ارشاد فرماتے ہیں:خوش اخلاقی سے بہتر کوئی زندگی نہیں ہے۔(۶)
نیز آنحضرت(ص)نے ارشاد فرمایا:حسن خلق نصف دین ہے۔(۷) چنانچہ جب پیغمبر اکرم(ص)کے ایک مشہور صحابی کہ جو حضرت(ص) کے نزدیک قابل احترام تھے، سعد ابن معاذ کی وفات ہوگئی تو حضرت(ص) نے پسماندگان  حقیقی کی طرح برہنہ پا ان کی تشیع جنازہ میں شرکت فرمائی  اور اپنے دست مبارک سے ان کے جنازہ کو قبر میں اتارا اور ان کے چہرے کو ڈھکا  اس دوران سعد کی ماں کہ جو پیغمبر(ص) کے محترم عمل کو اپنے بیٹے کے لئے دیکھ رہی تھی  انہوں نے اپنے بیٹے کو مخاطب کرتے ہوئے کہا:اے سعد ! تجھے جنت مبارک ہو !
جناب رسالتمآب(ص) نے ارشاد فرمایا:اے سعد کی ماں ! یہ مت کہو! چونکہ اس وقت سعد کو شدید فشار قبر ہورہا ہے ،  بعد میں صحابہ نے آپ(ص) سے سعد پر فشار قبر کی علت کو  دریافت کیا تو آپ(ص) نے فرمایا :سعد پر فشار قبر کی علت یہ تھی کہ وہ اپنے اہل وعیال پر سختی کرتے تھے۔(۸)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔ بحار الانوار، ج 103، ص 226 ۔
۲۔ شافی، ج 1، ص 166 ۔
۳۔ شافی ، ج 1 ، ص 166 ۔
۴۔ شافی ، ج 1 ، ص 176 ۔
۵۔ محجۃ البیضاء، ج 2 ، ص 54 ۔
۶۔بحار الانوار ،ج 71 ، ص 389 ۔
۷۔بحار الانوار، ج 71 ، ص 385 ۔
۸۔ بحار الانوار، ج 73 ، ص 298 ۔

 

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Dec 11