Friday - 2019 January 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187431
Published : 24/5/2017 17:34

عورت کا عورت رہنا فضیلت ہے مرد بننا نہیں:رہبر انقلاب

صنف نسواں کی حیثیت و اصلیت کو ایک قدر جاننا اور خود عورت ہونا بھی عورت کے لئے ایک عظیم منزلت کا حامل ہے،مردوں جیسا ہونا عورت کے لئے ہرگز فضیلت نہیں،ان میں سے ہر ایک کاالگ الگ کردار ہے، الگ الگ مقام ہے، الگ الگ طبیعت ہے،الٰہی خلقت و آفرینش میں ان کی تخلیق کا ایک خاص مقصد ہے جسے پورا ہونا چاہیئے۔

ولایت پورٹل:ہمیں خواتین کے سلسلہ میں ہمہ گیر اور جامع نظر رکھنی ہوگی،یہ جامع نظر اسلام کے پاس موجود ہے،صنف نسواں کی حیثیت و اصلیت کو ایک قدر جاننا اور خود عورت ہونا بھی عورت کے لئے ایک عظیم منزلت کا حامل ہے،مردوں جیسا ہونا عورت کے لئے ہرگز فضیلت نہیں،ان میں سے ہر ایک کاالگ الگ کردار ہے، الگ الگ مقام ہے، الگ الگ طبیعت ہے،الٰہی خلقت و آفرینش میں ان کی تخلیق کا ایک خاص مقصد ہے جسے پورا ہونا چاہیئے، یہ ایک اہم مسئلہ ہے۔
عورت، جمال و زیبائی اور احساسیت و لطافت کا مظہر و نمونہ
مرد کے سلسلہ میں عورت کی نظر اور عورت کے سلسلہ میں مرد کی نظر میں فرق ہے اور ہونا بھی چاہیئے،اس میں کوئی حرج نہیں،مرد عورت کو حسن، ظرافت اور احساس کے نمونہ کی شکل میں دیکھتا ہے،اس کی لطافت کا قائل ہوتا ہے، اسلام نے بھی یہی تاکید کی ہے:«اَلْمَرْأَۃُ رَیْحَانَةٌ وَلَیْسَتْ بِقَھْرَ مَانَة»
یعنی عورت پھول ہے،اس زاویۂ دید کے مطابق عورت ایک نرم و لطیف موجود کا نام ہے،وہ نرمی و لطافت و حسن کا مظہر ہے،مرد اسے اس شکل میں دیکھتا ہے،وہ اس کی محبت کی تصویرکشی اسی پیکر میں کرتا ہے،لیکن مرد، عورت کی نظر میں مظہر اعتماد ہوتا ہے، نقطۂ اعتماد ہوتا ہے،عورت اس کے لئے اپنی محبت کی ترسیم  اسی صورت میں کرتی ہے۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2019 January 18