Sunday - 2018 Nov 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188128
Published : 2/7/2017 15:37

آل سعود کی آمریت کا راز؛ امریکی تجزیہ نگار کی زبانی

امریکی ایک تجزیہ نگار کا کہنا ہے کہ آل سعود مذہب کی آڑ میں انتہا پسندی کرکے اپنی آمریت کو بچانا چاہتی ہے۔


ولایت پورٹل
:امریکی تجزیہ نگار Walt pritto نے  آل سعود کو نہایت ہی بے رحم قرار دیتےہوئےکہا:یہ مذیب کے نام پر انتہاپسندی اور بربریت کے سہارے اپنی شہنشاہیت کو بچانا چاہتے ہیں نیز یہ لوگ نہایت ہی بے رحم ہیں اور اسلام کے نام پر ایسے قوانین نافذ کرتے ہیں کہ جن کا اسلام سے دور دور تک کوئی واسطہ نہیں بلکہ یہ قوانین تو امریکہ اور اسرائیل میں سی۔آئی۔اے اور مواساد کے ذریعہ بنائے جاتے ہیں ،تجزیہ نگار سے جب شاہ سلمان کے حالیہ فیصلہ کے بارے میں سوال کیا گیا  کہ انھوں نے بن نائف کو ہٹا کر اپنے بیٹے بن سلمان کو کیوں ولی عہد بنایا ہے ؟اس کے جواب میں انھوں نے کہا :یقینی طور پر نہیں کہا جاسکتا کہ سعودی بادشاہ کے ذہن میں کیا تھا کہ انھوں نے ایسا کیا لیکن یہ کہا جاسکتا ہے کہ انھیں تیس سالہ جوان میں وہ کچھ دکھائی دیا جو بن نائف میں نہیں دکھائی دیا ،شائد اس ملک کے جوان بن سلمان کو زیادہ پسند کریں اور وہ ملکی سطح پر لیبرل طریقہ سے رہے لیکن یہ صرف ایک خیال ہے،سب کو معلوم ہے کہ سعودی عرب میں سیاسی عہدہ اور سلطنت ایک دوسرے میں ضم ہیں تا کہ آل سعود کسی بھی طرھ تخت بادشاہی پر جمی رہےاور اپنے راستہ میں آنے والی ہر رکاوٹ کو دور کرتی رہے چاہے اس کے لیے اس کو کچھ بھی کرنا پڑے،یہ ایک طرف سے عرب ممالک میں اپنی حیثیت منوانا چاہتے ہیں اور دوسری طرف سے اپنے اقتصادی مرکز لندن اور فوجی مرکز واشنگٹن کو بھی ہاتھ سے نہیں جانے دینا چاہتےیہی وجہ ہے اس وقت ان پر مکمل طور سے مغربی بلاک کا قبضہ ہوچکا ہے اور یہ اس بلاک کے بغیر کچھ بھی نہیں کر سکتے،ان کا سارا تیل بھی اسی  کو جاتا ہے۔
تسنیم



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Nov 18