Tuesday - 2018 Nov 13
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188154
Published : 3/7/2017 16:11

جنت البقیع میں مدفون باعظمت خواتین

ﺭﺳﻮﻝ ﺍﺳﻼﻡ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلمﮐﯽ ﭘﮭﻮﭘﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺍﻡ ﺑﻦ ﺧﻮﻟﺪ ﮐﯽ ﺯﻭﺟﮧ ﺗﮭﯿﮟ، ﺁﭖ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺷﮩﺎﻣﺖ ﺍﻭﺭ شجاع ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺟﻨﮓ میں جب ﺑﻨﯽ ﻗﺮﯾﻈﮧ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﯾﮩﻮﺩﯼ، مسلمان ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﮯ تجسس ﻣﯿﮟ، ﺧﯿﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺲ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺣﺴﺎﻥ ﺑﻦ ﺛﺎﺑﺖ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻗﺘﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﮩﺎ ﻣﮕﺮ ﺟﺐ ﺍﻧﮑﯽ ﮨﻤﺖ ﻧﮧ ﭘﮍﯼ ﺗﻮ ﺁﭖ ﺧﻮﺩ بنفس ﻧﻔﯿﺲ ﺍﭨﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ حملہ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﺳﮯ ﻗﺘﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔،ﺁﭖ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ 20 ﮪ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺑﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﻣﻐﯿﺮﮦ ﺑﻦ ﺷﻌﺒﮧ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺩﻓﻦ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ، پہلے ﯾﮧ ﺟﮕﮧ ''ﺑﻘﯿﻊ ﺍﻟﻌﻤﺎﺕ'' ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺗﮭﯽ،ﻣﻮﺭﺧﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﺣﻮ ﮞ ﮐﮯ ﻧﻘﻞ ﺳﮯ معلوم ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ پہلے ﺗﻌﻮﯾﺬ ﻗﺒﺮ ﻭﺍﺿﺢ ﺗﮭﯽ ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﻓﻘﻂ ﻧﺸﺎﻥ ﻗﺒﺮ ہی ﺑﺎﻗﯽ ﺑﭽﺎ ﮨﮯ۔

ولایت پورٹل:ﺳﺎﺯﺵ ﻭ ﺗﻌﺼﺐ ﮐﮯ ﻣﺮﻣﻮﺯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺳﯿﺪ ﺍﻟﻤﺮسلین ‏صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﯽ ﻣﺤﺒﻮﺏ ازواج اور اولاد کی ﺯﯾﺎﺭﺕ ﮔﺎہوں ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﭼﮭﻮﮌﺍ ﺍﻭﺭ ﻗﺒﮧ ﺯﻣﯿﻦ ﺑﻮﺱ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻗﺒﺮوں ﮐے ﻧﺸﺎنات ﻣﭩﺎ ﺩئے گئے،لہذا جنت البقیع میں صرف یہی نہیں کہ آئمہ معصومین(ع) کے منور مقابر ہیں بلکہ اس قبرستان میں صدر اسلام کی معتبر اور پروقار شخصیات آرام فرما ہیں،اور بہت سی خواتین کہ جن کی اسلام میں قربانیاں فراموش نہیں کی جاسکتیں۔
ﺍﺯﻭﺍﺝ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﯽ ﻗﺒﺮﯾﮟ:
ﺑﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺪﺭﺟﮧ ﺫﯾﻞ ﺍﺯﻭﺍﺝ ﮐﯽ ﻗﺒﺮﯾﮟ ﮨﯿﮟ
۱۔حضرت ﺯﯾﻨﺐ ﺑﻨﺖ ﺧﺰﯾﻤﮧ ‏( ﻭﻓﺎﺕ 4 ﮪ‏)
۲۔حضرت ﺭﯾﺤﺎﻧﮧ ﺑﻨﺖ ﺯﯾﺪ ‏( ﻭﻓﺎﺕ 8 ﮪ‏)
‏۳۔ حضرت ﻣﺎﺭﯾۂ ﻗﺒﻄﯿﮧ ‏( ﻭﻓﺎﺕ 16 ﮪ‏)
‏۴۔ حضرت ﺯﯾﻨﺐ ﺑﻨﺖ ﺟﺤﺶ ‏( وفات 20 ھ ‏)
‏۵۔ حضرت ﺍﻡ ﺣﺒﯿﺒﮧ ‏( ﻭﻓﺎﺕ 42 ﮪ ﯾﺎ 43 ﮪ‏)
‏۶۔حضرت ﺣﻔﺼﮧ ﺑﻨﺖ ﻋﻤﺮ ‏( ﻭﻓﺎﺕ 45 ﮪ‏)
‏ ۷۔حضرت ﺳﻮﺩﮦ ﺑﻨﺖ ﺯﻣﻌﮧ ‏( وفات 50 ھ ‏)
‏۸۔ حضرت ﺻﻔﯿﮧ ﺑﻨﺖ ﺣﯽ ‏( وفات 50 ھ ‏)
‏۹۔ حضرت حضرت ﺟﻮﯾﺮﯾﮧ ﺑﻨﺖ ﺣﺎﺭﺙ ‏( وفات 50 ھ ‏)
۱۰۔ام المومنین حضرت عائشہ ‏( ﻭﻓﺎﺕ 58 ﮪ‏)
‏۱۱۔ حضرت ام سلمیٰ ‏( ﻭﻓﺎﺕ 61 ﮪ‏)

ﯾﮧ ﻗﺒﺮﯾﮟ ﺟﻨﺎﺏ ﻋﻘﯿﻞ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﮨﯿﮟ، چنانچہ ان کا تذکرہ ﺍﺑﻦ ﺑﻄﻮﻃﮧ ﮐﮯ ﺳﻔﺮ ﻧﺎﻣﮧ ﻣﯿﮟ  بھی موجود ہے۔(رحلۃ ﺍﺑﻦ ﺑﻄﻮﻃﮧ ﺝ ١ ،ﺹ ١٤٤)
ازواج پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے علاوہ جنت البقیع میں درج ذیل باعظمت خواتین مدفون ہیں:
ﺟﻨﺎﺏ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺑﻨﺖ ﺍﺳﺪ:
ﺁﭖ ﺣﻀﺮﺕ علی علیہ السلام ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﮨﯽ ﻧﮯ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﭘﻨﺎﮦ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﮐﮯ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺁﻧﺤﻀﺮﺕ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﯽ ﭘﺮﻭﺭﺵ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﺗﮭﯽ، ﺁﻧﺤﻀﺮﺕ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﻮ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺑﯿﺤﺪ ﺍﻧﺴﯿﺖ ﻭ ﻣﺤﺒﺖ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ آﭖ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﻣﺂﺏ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ، ہجرت ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺣﻀﺮﺕ علی علیہ السلامﮐﮯ ﮨﻤﺮﺍﮦ مدینہ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻻﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮ ﻋﻤﺮ ﺗﮏ ﻭﮨﯿﮟ ﺭﮨﯿﮟ،ﺁﭖ ﮐﮯ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﭘﺮ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﻣﺂﺏ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﻮ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺻﺪﻣﮧ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﻧﮯ ﮐﻔﻦ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﻋﻨﺎﯾﺖ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ،ﻧﯿﺰ ﺩﻓﻦ ﺳﮯ ﻗﺒﻞ ﭼﻨﺪ ﻟﻤﺤﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻗﺒﺮ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﭩﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﺗﻼﻭﺕ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﺗﮭﯽ، ﻧﻤﺎﺯ ﻣﯿﺖ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ:ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﻓﺸﺎﺭ ﻗﺒﺮ ﺳﮯ نجات ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺳﻮﺍﺋﮯ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺑﻨﺖ ﺍﺳﺪ ﮐﮯ۔ ﻧﯿﺰ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻗﺒﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ:ﺟﺰﺍﮎ اللہ ﻣﻦ ﺍﻡ ﻭ ﺭﺑﯿﺒﺔ ﺧﯿﺮﺍ، ﻓﻨﻌﻢ ﺍﻻﻡ ﻭ ﻧﻌﻢ ﺍﻟﺮﺑﯿﺒﺔ ﮐﻨﺖ ﻟﯽ ۔
ﺁﭖ ﮐﺎ ﺭﺳﻮﻝ ﻣﻘﺒﻮﻝ ‏صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﻧﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﻣﮕﺮ ﺁﻧﺤﻀﺮﺕ ‏صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﯽ ﺍﻣﺖ ﻧﮯ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺴﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﻧﮧ ﺭﮐﮭﯽ، ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﺑﮭﯽ ﻭﯾﺮﺍﻥ ﮐﺮ ﺩﯼ گئی، ﺟﺲ ﻗﺒﺮ ﻣﯿﮟ ﺭﺳﻮﻝ ‏صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﻧﮯ ﻟﯿﭧ ﮐﺮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻓﺸﺎﺭ ﻗﺒﺮ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﺗﻼﻭﺕ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﺗﮭﯽ، ﺍﺱ ﭘﺮ بلڈوزر ﭼﻼ ﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﻌﻮﯾﺬ ﻗﺒﺮ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻣﭩﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔(ﻣﻌﺎﻟﻢ ﻣﮑﮧ ﻭﺍﻟﻤﺪﯾﻨﮧ ﺹ ٤٢٨)
ﺟﻨﺎﺏ ﺍﻡ ﺍﻟﺒﻨﯿﻦ:
ﺁﭖ ﺣﻀﺮﺕ علی علیہ السلام ﮐﯽ ﺯﻭﺟﮧ ﺍﻭﺭ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﺑﻮﺍﻟﻔﻀﻞ ﻋﺒﺎﺱ علیہ السلام ﮐﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﮨﯿﮟ، ﺻﺎﺣﺐ «ﻣﻌﺎﻟﻢ ﻣﮑﮧ ﻭﺍﻟﻤﺪینة» ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺁﭖ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺻﺮﻑ ﺍﺱ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﺎﻡ ﺑﺪﻝ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﺒﺎﺩﺍ ﺣﻀﺮﺍﺕ ﺣﺴﻦ ﻭ ﺣﺴﯿﻦ ﮐﻮ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ ﮐﻮﻧﯿﻦ ‏سلام اللہ علیہا ﻧﮧ ﯾﺎﺩ ﺁﺟﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ تکلیف ﭘﮩﻧﭽﮯ، ﺁﭖ ﺍﻥ ﺩﻭ ﺷﮩﺰﺍﺩﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﮯ ﭘﻨﺎﮦ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ، ﻭﺍﻗﻌﮧ ﮐﺮﺑﻼ میں  آﭖ ﮐﮯ ﭼﺎﺭ ﺑﯿﭩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﻣﺎﻡ ﺣﺴﯿﻦ علیہ السلام ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻥ ﻧﺜﺎﺭ ﮐﯽ ، ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺁپ کو ﺑﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﻣﺂﺏ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلمﮐﯽ ﭘﮭﻮﭘﮭﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻐﻞ ﻣﯿﮟ ﺩﻓﻦ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ، ﯾﮧ ﻗﺒﺮ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﻗﺒﺮﺳﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﺎﺋﯿﮟ ﺟﺎﻧﺐ ﻭﺍﻟﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺳﮯ ﻣﺘﺼﻞ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺯﺍﺋﺮین ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺜﯿﺮ ﺗﻌﺪﺍﺩ میں آﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔(ﻣﻌﺎﻟﻢ ﻣﮑﮧ ﻭﺍﻟﻤﺪﯾﻨﮧ،ﺹ 440)
ﺟﻨﺎﺏ ﺻﻔﯿﮧ ﺑﻨﺖ ﻋﺒﺪالمطلب:
ﺭﺳﻮﻝ ﺍﺳﻼﻡ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلمﮐﯽ ﭘﮭﻮﭘﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺍﻡ ﺑﻦ ﺧﻮﻟﺪ ﮐﯽ ﺯﻭﺟﮧ ﺗﮭﯿﮟ، ﺁﭖ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺷﮩﺎﻣﺖ ﺍﻭﺭ شجاع ﺧﺎﺗﻮﻥ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺟﻨﮓ میں جب ﺑﻨﯽ ﻗﺮﯾﻈﮧ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﯾﮩﻮﺩﯼ، مسلمان ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﮐﮯ تجسس ﻣﯿﮟ، ﺧﯿﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺲ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺣﺴﺎﻥ ﺑﻦ ﺛﺎﺑﺖ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻗﺘﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﮩﺎ ﻣﮕﺮ ﺟﺐ ﺍﻧﮑﯽ ﮨﻤﺖ ﻧﮧ ﭘﮍﯼ ﺗﻮ ﺁﭖ ﺧﻮﺩ بنفس ﻧﻔﯿﺲ ﺍﭨﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ حملہ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﺳﮯ ﻗﺘﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔،ﺁﭖ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ 20 ﮪ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺑﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﻣﻐﯿﺮﮦ ﺑﻦ ﺷﻌﺒﮧ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺩﻓﻦ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ، پہلے ﯾﮧ ﺟﮕﮧ ''ﺑﻘﯿﻊ ﺍﻟﻌﻤﺎﺕ'' ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺗﮭﯽ،ﻣﻮﺭﺧﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﺣﻮ ﮞ ﮐﮯ ﻧﻘﻞ ﺳﮯ معلوم ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ پہلے ﺗﻌﻮﯾﺬ ﻗﺒﺮ ﻭﺍﺿﺢ ﺗﮭﯽ ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﻓﻘﻂ ﻧﺸﺎﻥ ﻗﺒﺮ  ہی ﺑﺎﻗﯽ ﺑﭽﺎ ﮨﮯ۔(رحلۃ ﺍﺑﻦ ﺑﻄﻮﻃﮧ ﺝ ١ ،ص 144)
‏‏ﺟﻨﺎﺏ ﻋﺎﺗﮑﮧ ﺑﻨﺖ ﻋﺒﺪ المطلب:
ﺁﭖ ﺭﺳﻮﻝ اللہ ‏صلی اللہ علیہ و آلہ وسلمﮐﯽ ﭘﮭﻮﭘﮭﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﻣﺪﯾﻨﮧ ﻣﻨﻮﺭﮦ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ اپنی ﺑﮩﻦ ﺻﻔﯿﮧ ﮐﮯ پہلو ﻣﯿﮟ ﺩﻓﻦ ہیں، ﺭﻓﻌﺖ ﭘﺎﺷﺎ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﻔﺮ ﻧﺎﻣﮧ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﮐﺎ ﺗﺬﮐﺮﮦ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ  ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﺻﺮﻑ ﻧﺸﺎﻥ ﮨﯽ ﺑﺎﻗﯽ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔(ﻣﺮﺁﺓ ﺍﻟﺤﺮﻣﯿﻦ ﺝ ١، ﺹ ٤٢٦)
ﺟﻨﺎﺏ حلیمہ سعدیہ:
بعض روایات کی بنیاد پر ﺁﭖ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﺳﻼﻡصلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﯽ ﺭﺿﺎﻋﯽ ﻣﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﺎ تعلق قبیلہ ﺳﻌﺪ ﺑﻦ ﺑﮑﺮ ﺳﮯ ﺗﮭﺎ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﻣﺪﯾﻨﮧ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺑﻘﯿﻊ ﮐﮯ ﺷﻤﺎﻝ ﻣﺸﺮﻗﯽ ﺳﺮﮮ ﭘﺮ ﺩﻓﻦ ﮨﻮﺋﯿﮟ، ﺁﭖ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﻟﯽ ﺷﺎﻥ ﻗﺒﮧ ﺗﮭﺎ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﻣﺂﺏ ‏صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﺍﮐﺜﺮ ﻭ ﺑﯿﺸﺘﺮ ﯾﮩﺎﮞ ﺁﮐﺮ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺯﯾﺎﺭﺕ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔(ﻣﻌﺎﻟﻢ ﻣﮑﮧ ﻭﺍﻟﻤﺪﯾﻨﮧ ﺹ ٤٤٣)
ﻣﮕﺮ ﺍﻓﺴﻮﺱ ! ﺳﺎﺯﺵ ﻭ ﺗﻌﺼﺐ ﮐﮯ ﻣﺮﻣﻮﺯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺳﯿﺪالمرسلین ‏صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮐﯽ ﺍﺱ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﺯﯾﺎﺭﺕ ﮔﺎﮦ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﭼﮭﻮﮌﺍ ﺍﻭﺭ ﻗﺒﮧ ﺯﻣﯿﻦ ﺑﻮﺱ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻗﺒﺮ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻥ ﻣﭩﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔
ﺟﻨﺎﺏ ﺭﻗﯿﮧ،ﺍﻡ کلثوم،ﺯﯾﻨﺐ:
ﺁﭖ ﺗﯿﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﭘﺮﻭﺭﺵ ﺟﻨﺎﺏ ﺭﺳﺎﻟﺘﻤﺂﺏ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﺍﻭﺭ ﺣﻀﺮﺕ خدیجۃ الکبری سلام اللہ علیہا ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﺗﮭﯽ، ﺍﺳﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺑﻌﺾ ﻣﻮﺭﺧﯿﻦ ﻧﮯ ﺁﭖ ﮐﯽ ﻗﺒﺮﻭﮞ ﮐﻮ:«ﻗﺒﻮﺭ ﺑﻨﺎﺕ ﺭﺳﻮﻝ اللہ» ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﯾﺎﺩ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ، ﺭﻓﻌﺖ ﭘﺎﺷﺎ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﯽ ﺍﺷﺘﺒﺎﮦ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻥ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺍﻭﻻﺩ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮصلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻟﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ:ﺍﮐﺜﺮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﺒﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﭘﮩﭽﺎﻧﻨﺎ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﮯ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﺑﻌﺾ ﺑﺰﺭﮔﺎﻥ ﮐﯽ ﻗﺒﺮﻭﮞ ﭘﺮ ﻗﺒﮧ ﺑﻨﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ، ﺍﻥ ﻗﺒﮧ ﺩﺍﺭ ﻗﺒﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﻨﺎﺏ ﺍﺑﺮﺍﮬﯿﻢ، ﺍﻡ کلثوم، ﺭﻗﯿﮧ، ﺯﯾﻨﺐ، ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺍﻭﻻﺩ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﮐﯽ ﻗﺒﺮﯾﮟ ﮨﯿﮟ۔(ﻣﺮﺁﺓ ﺍﻟﺤﺮﻣﯿﻦ ﺝ ١ ،ﺹ ٤٢٦).
تسنیم


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Nov 13