Friday - 2018 Nov 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188187
Published : 4/7/2017 18:7

تاریخ کا ایک ورق:

عرب میں لڑکیوں کو زندہ درگور کرنے کی رسم کا آغاز(1)

یہ بات مشہور ہے کہ عربوں میں سب سے بری رسم یہ تھی کہ وہ لڑکیوں کو زندہ درگور کردیتے تھے،کیونکہ لڑکیاں ایسے سماج میں جو تہذیب اور تمدن سے دور،ظلم و بربریت میں غرق ہو،مردوں کی طرح لڑکر اپنے قبیلہ سے دفاع نہیں کرسکتی تھیں کیونکہ لڑنے کی صورت میں یہ ممکن تھا لڑکیاں دشمن کے ہاتھ لگ جائیں اور ان سے ایسی اولادیں پیدا ہوں جو باعث ننگ اور عار بنیں لہٰذا وہ لڑکیوں کو زندہ درگور کردیتے تھے،اور کچھ لوگ مالی مشکلات کی خاطر،فقر و افلاس کے خوف سے ایسا کرتے تھے۔


ولایت پورٹل:
یہ بات مشہور ہے کہ عربوں میں سب سے بری رسم یہ تھی کہ وہ لڑکیوں کو زندہ درگور کردیتے تھے،کیونکہ لڑکیاں ایسے سماج میں جو تہذیب اور تمدن سے دور،ظلم و بربریت میں غرق ہو،مردوں کی طرح لڑکر اپنے قبیلہ سے دفاع نہیں کرسکتی تھیں کیونکہ لڑنے کی صورت میں یہ ممکن تھا لڑکیاں دشمن کے ہاتھ لگ جائیں اور ان سے ایسی اولادیں پیدا ہوں جو باعث ننگ اور عار بنیں لہٰذا وہ لڑکیوں کو زندہ درگور کردیتے تھے۔(۱) اور کچھ لوگ مالی مشکلات کی خاطر،فقر و افلاس کے خوف سے ایسا کرتے تھے۔(۲)
مجموعی طور پر لڑکیاں اس سماج میں منحوس سمجھی جاتی تھیں قرآن کریم نے ان کی اس غلط فکر کو اس طرح سے نقل کیا ہے:«اور جب ان میں سے کسی کو لڑکی کی بشارت دی جاتی ہے تو اس کا چہرہ سیاہ پڑجاتا ہے اور وہ خون کے گھونٹ پینے لگتا ہے ،قوم سے منھ چھپاتا ہے کہ بہت بری خبر سنائی گئی ہے اب اس کو ذلت سمیت زندہ رکھے یا خاک میں ملا دے ،یقیناً یہ لوگ بہت برا فیصلہ کررہے ہیں»۔(۳)
عورت کو محروم اور دبانے کی باتیں اس زمانے کے عربی ادب اور آثار میں بہت زیادہ ملتی ہیں جیسا کہ ان کے درمیان یہ بات عام تھی کہ جس کے پاس لڑکی ہوتی تھی اس سے وہ لوگ کہتے تھے کہ:«خدا تم کو اس کی ذلت سے محفوظ رکھے اور اس کے اخراجات کو پورا کرے اور قبر کو داماد کا گھر بنادے»۔(۴)
ایک عرب شاعر نے اس بارے میں کہا ہے:
جس باپ کے پاس لڑکی ہو اور وہ اس کو زندہ رکھنا چاہے تو اس کے لئے تین داماد ہیں:
۱۔ایک وہ گھر جس میں وہ رہتی ہے۔
۲۔دوسرے اس کا شوہر جو اس کی حفاظت کرتا ہے۔
۳۔اور تیسرے وہ قبر جو اس کو اپنے اندر چھپا لیتی ہے ۔لیکن ان میں سب سے بہتر قبر ہے۔(۵)
کہتے ہیں کہ ایک شخص جس کا نام ابو حمزہ تھا وہ صرف اس وجہ سے اپنی بیوی سے ناراض ہوگیا اور پڑوسی کے یہاں جاکر رہنے لگا کہ اس کے یہاں لڑکی پیدا ہوئی تھی،لہٰذا اس کی بیوی اپنی بچی کو لوری دیتے وقت یہ اشعار پرھتی تھی:
ابو حمزہ کو کیا ہوگیا ہے کہ جو ہمارے پاس نہیں آتا ہے اور پڑوسی کے گھر میں رہ رہا ہے،وہ صرف اس بنا پر ناراض ہے کہ ہم نے لڑکا نہیں جنا؟! خداکی قسم یہ کام میرے دائرۂ اختیار میں نہیں ہے،جو بھی وہ ہم کو دیتا ہے ہم اسے لے لیتے ہیں،ہم بمنزلۂ زمین ہیں کہ کھیت میں جو بویا جائے گا وہی اگے گا۔(۶)
حقیقت میں اگر دیکھا جائے تو اس کی ماں کی باتیں اس سماج کے نظام کے خلاف ایک احتجاج ہیں اور ان کے درمیان عورت کی پائمالی کا ایک طرح سے اظہار ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔شیخ عباس قمی،سفینۃ البحار(تہران:کتابخانۂ سنایی،ج۱)ص۱۹۷(کلمۂ جھل)ابن ابی الحدید،شرح نہج البلاغہ تحقیق:محمد ابوالفضل ابراہیم(قاہرہ:داراحیاء العربیہ،۱۹۶۱ء)ج۱۳،ص۱۷۴؛کلینیؒ،الا صول من الکافی (تہران: داراالکتب الا سلامیہ)ج۲،باب’’البر بالوالدین‘‘،ح۱۸،ص۱۶۳،قرطبی،تفسیر جامع الا حکام (بیروت:دارالفکر) ج۱۹،ص۲۳۲۔
۲۔سورۂ انعام ،۶،آیت۱۵۱،سورۂ اسراء،۱۷،آیت ۳۱،قرطبی ،ایضاً،ص۲۳۲۔
۳۔  سورۂ نحل ،۱۶،آیت ۵۹،۵۸۔
۴۔آمنکم اللّٰہ عار ھا وکفاکم مؤ نتھا، وصاھرتم القبر!
۵۔لکل اب بنت یرجی بقائھا      ثلاثۃ اصھار اذا ذکرو الصھر
 فبیت یغطیھا وبعل یصونھا     وقبر یواریھاو خیر ھم القبر! (عائشہ عبد الرحمن بنت الشاطی،موسوعۃ آل النبی(بیروت:دارالکتاب العربیہ،۱۳۸۷ ھ۔ق، ص: ۴۳۵)۔
۶۔ما   لا  بی حمزۃ لا یأ تینا     یظل فی البیت الذی یلینا
   غضبان الا نلد البنینا            تاللّٰہ ماذالک فی ایدینا
    وانمانأ خذ ماأعطینا         ونحن کالا رض لزارعینا
ننبت ماقدزر عوہ فینا ۔(جاحظ،البیان والتبیین ،بیروت :داراحیاء التراث العرب ،۱۹۶۸ء،ج۱،ص۱۲۸،۱۲۷،عایشہ بنت الشطی ، ایضاً ،ص ۴۳۴،۴۳۳،آلوسی ،بلوغ الارب فی معرفۃ احوال العرب ،ج۳،ص۵۱۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 Nov 16