Saturday - 2018 August 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188382
Published : 15/7/2017 16:49

تاریخ کا ایک ورق:

رسول اللہ(ص) کی امانتداری اور قریش کی مکاریاں

امام علیہ السلام نے گواہوں کے اختلافات کو واضح کیا جس سے قریش کا مکر و فریب ظاہر ہوگیا،اور بعد میں حضرت علی علیہ السلام نے عمیر کی طرف دیکھا اور اس سے کہا کہ تونے جھوٹ کیوں باندھا اور تیرے چہرے کی رنگت زرد کیوں ہو رہی ہے؟عمیر نے عرض کی ہم مکر و فریب سے کام لے رہے تھے،مجھے خداۓ کعبہ کی قسم میں نے محمد(ص)کے پاس کوئی امانت نہیں رکھی تھی،اور اس جھوٹے دعویٰ کے لئے حنظلہ نے مجھے تھوڑا سونا اور ہندہ کا گلوبند بطور رشوت دیا تھا،اس لئے میں ان کے بہکاوے میں آگیا تھا۔

ولایت پورٹل:جب رسول صلى الله عليہ وآلہ و سلم نے مکہ سے مدینہ ہجرت فرمائی تو امیرالمؤمنین علی علیہ السلام کو مکہ میں اس ہدایت کے ساتھ ٹھہرایا کہ وہ تمام امانتیں ان کے مالکوں کو واپس دے کر بعد میں مدینہ کی طرف روانہ ہوں۔
حنظلہ ابن ابوسفیان نے عمیر ابن وائل سے کہا کہ تم علی(ع) کے پاس جاؤ اور ان سے کہو کہ میں نے سو مثقال سرخ سونا (خالص سونا) آپ کے پیغمبر(ص) کے پاس امانت رکھا تھا وہ تو مدینہ فرار ہوگئے ہیں، ان کے بعد تم امین ہو تو میری امانت مجھے واپس کردو،اور دیکھو اگر علی(ع) تم سے گواہ طلب کریں تو میں قریش کی جماعت لے کر ان سے تمہاری صداقت کی گواہی دوں گا۔
عمیر ذاتی طور پر یہ کام نہیں کرنا چاہتا تھا لیکن حنظلہ نے اسے تھوڑا سا سونا اور اپنی ماں ہند کا گلوبند دیا،اور اس سے کہا کہ تم علی(ع)کے پاس جاؤ اور علی(ع) سے سو مثقال سونے کا مطالبہ کرو۔
عمیر علی(ع) کے پاس آیا اور اپنی امانت کا دعویٰ کیا،حضرت علی(ع) نے اس سے پوچھا کہ تیرا کوئی گواہ ہے؟ اس نے جواب میں کہا کہ جی ہاں! ابوجہل، عکرمہ، عقبہ، ابوسفیان اور حنظلہ میرے گواہ ہیں۔
امام(ع)نے اس سے کہا تم مکر(حیلہ و فریب) کر رہے ہو اور تمیں ان مکاریوں سے ناکامی ہوگی،جاؤ اپنے گواہوں کو صحن کعبہ میں لے کر آجاؤ،وہ گیا اور اس نے اپنے گواہوں کو امام(ع)کے پاس حاضر کیا۔
امام علیہ السلام نے علیحدہ علیحدہ گواہوں سے امانت کی نشانیاں پوچھیں،آپ نے عمیر کو الگ کر کہ پوچھا کہ یہ بتا کہ کس وقت تونے یہ امانت محمد صلى الله عليہ وآلہ و سلم کے پاس  رکھی تھیں ،ایک نے کہا صبح کے وقت اس نے امانت دی تھی۔
آپ نے ابوجہل سے پوچھا کہ بتا عمیر نے کس وقت یہ امانت محمد(ص)کے سپرد کی۔ اس نے کہا مجھے معلوم نہیں ہے۔
پھر ابوسفیان سے یہ سوال کیا تو اس نے جواب دیا کہ وہ غروب آفتاب کا وقت تھا جب محمد(ص) نے وہ امانت اٹھا کر اپنی آستین میں رکھی۔
پھر آپ نے یہی سوال حنظلہ سے دہرایا تو اس نے جواب دیا کہ وہ ظہر کا وقت تھا جب اس نے اپنی امانت محمد(ص) کے پاس جمع کرائی۔
اس کے بعد آپ نے یہی سوال عقبہ سے پوچھا تو اس نے جواب دیا کہ وہ عصر کا وقت تھا اور حضرت محمد(ص) وہ امانت اٹھا کر اپنے گھر گئے تھے۔
آپ نے یہی سوال عکرمہ سے پوچھا تو اس نے جواب دیا اس وقت دن چڑھا ہوا تھا اس وقت محمد(ص) نے وہ امانت اپنے ہاتھ میں لیکر فاطمہ(ع) کے گھر کی طرف روانہ ہوئے۔
امام علیہ السلام نے گواہوں کے اختلافات کو واضح کیا جس سے قریش کا مکر و فریب ظاہر ہوگیا،اور بعد میں حضرت علی علیہ السلام نے عمیر کی طرف دیکھا اور اس سے کہا کہ تونے جھوٹ کیوں باندھا اور تیرے چہرے کی رنگت زرد کیوں ہو رہی ہے؟
عمیر نے عرض کی ہم مکر و فریب سے کام لے رہے تھے،مجھے خداۓ کعبہ کی قسم میں نے محمد(ص)کے پاس کوئی امانت نہیں رکھی تھی،اور اس جھوٹے دعویٰ کے لئے حنظلہ نے مجھے تھوڑا سونا اور ہندہ کا گلوبند بطور رشوت دیا تھا،اس لئے میں ان کے بہکاوے میں آگیا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔رہنمائی سعادت ج٢ ص٤٣٥۔
۲۔ناسخ التواریخ ص٦٧٦ ۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 August 18