Saturday - 2018 Oct. 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188403
Published : 16/7/2017 16:36

75 ہزار روہنگیا مسلمان کہاں ہیں ؟!!!

میرا بیٹا دہشتگرد نہیں ہے اس کو کھیت میں کام کرتے ہوئے اغوا لیا گیا ہے:روہنگیا خاتون۔


ولایت پورٹل:بین الاقوامی نامہ نگاروں نے میانمار کی اقلیت روہنگیا مسلمانوں پر ہونے والے مظالم کی  رپورٹ پیش کی ہے ،روئٹر نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق شمالی میانمار کے راخین گاؤں میں پہلی بار بین الاقوامی نامہ نگار پہنچے ہیں جہاں انھوں نے اس علاقہ  کی مسلمان خواتین کی زبانی ان  کے باپ ،بیٹوں اور شوہروں  کے اغوا ہونے کی کہانی سنی،یاد رہے کہ پچھلے اکتوبر سے سرکاری دہشتگردی کا شکار ہے ،روئٹر نے نقل کیا ہے  سارا بیدا ایک جوان مسلمان خاتون نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ اس کا بیٹا دہشتگرد نہیں ہے اس کو کھیت میں کام کرتے ہوئے اغوا لیا گیا ہے ،ایک دودھ پیٹے بچے کو گود میں لیے  اپنے شوہر کی غیر قانونی گرفتاری کی روداد سنائی ،اس کے علاوہ اقوام متحدہ کے تفتیش کاروں کا کہنا ہے کہ  میانمار کی فوج کے مظالم سے ڈر کر تقریباً75ہزار روہنگیا مسلمان  بنگلادیش سرحد کے قریب بھاگ چکے ہیں ،نیزفوج نے ظلم کی انتہا کر تے ہوئے خواتین کے ساتھ زیادتی تک کہ جرائم انجام دیے ہیں۔
العالم






آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 Oct. 20