Thursday - 2018 August 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188429
Published : 17/7/2017 15:53

امام صادق(ع) کے شاگردوں کی تعداد

سید محمد صادق نشأت کا کہنا ہے کہ:امام جعفر صادق(ع) کا بیت الشرف یزدان کی یونیورسٹی کے مثل تھا جو ہمیشہ علم حدیث ،تفسیر ،حکمت اور کلام کے بڑے بڑے علماء سے چھلکتا رہتا تھا، اکثر اوقات آپ(ع) کے درس میں دو ہزار طلبا حاضر ہوتے تھے اور بعض اوقات چار ہزار مشہور علماء حاضر ہوتے تھے، آپ(ع) کے شاگردوں نے آپ(ع) کی وہ تمام احادیث اور دروس تحریر کئے جو بعد میں شیعہ یا جعفری مذہب کے علمی خزانہ کے مانند کتابوں کی شکل میں آئے۔


ولایت پورٹل:قارئین کرام! ہم نے گذشتہ چند کالمس میں امام جعفر صادق علیہ السلام کے علمی خدمات پر روشنی ڈالتے ہوئے بیان کیا تھا کہ آپ نے بنی امیہ اور بنی عباس کی آپسی رسہ کشی سے فائدہ اٹھاتے ہوئے امت اسلامیہ کے شعور کو بلند کرنے اور انہیں حقیقی اسلام سے متعارف کرانے کے لئے جو اقدام کئے ان میں ایک عظیم علمی مرکز کا قیام اور مخالفین کی جانب سے ہر روز اٹھنے والے نت نئے شبہات کا ازالے کے ساتھ ساتھ بہت سے گرانقدر شاگردوں کی تربیت تھی جو تاریخ کے دامن میں اپنی مثال آپ ہیں ،آئیے جانتے ہیں کہ امام علیہ السلام کے شاگردوں کی اصل تعداد کتنی تھی۔
بعض مورخین کے نزدیک امام  جعفر صادق(ع) کی یونیورسٹی کے طالب علموں کی تعداد چار ہزار تھی۔(۱)یہ بہت بڑی تعداد تھی جس کی اس دور کے علمی مدرسوں میں کوئی نظیر نہیں ملتی،حافظ ابو عباس بن عقدہ ہمدانی کوفی نے امام جعفر صادق(ع)سے حدیث نقل کر نے والے راویوں کے نام کے متعلق ایک کتاب تالیف کی ہے جس میں چار ہزار طلاب کے نام تحریر کئے ہیں۔(۲)
ڈاکٹر محمود خالدی کا کہنا ہے کہ :امام جعفر صادق(ع)کے مؤثق راویوں کی تعداد چار ہزار تھی اور ہم اس بڑی تعداد سے بالکل بھی متعجب نہیں ہیں بلکہ اگر اس کے برعکس واقع ہو اور نقل کیا جائے تو تعجب کا امکان ہے۔(۳)
محقق نے معتبر میں کہا ہے کہ:امام جعفر صادق(ع) کے زمانہ میں ایسے علوم شائع ہوئے ہیں کہ جن سے عقلیں مبہوت ہو کر رہ گئیں ،امام جعفر صادق(ع)سے تقریباً چار ہزار راویوں نے روایت کی ہے۔(۴)
سید محمد صادق نشأت کا کہنا ہے کہ:امام جعفر صادق(ع) کا بیت الشرف یزدان کی یونیورسٹی کے مثل تھا جو ہمیشہ علم حدیث ،تفسیر ،حکمت اور کلام کے بڑے بڑے علماء سے چھلکتا رہتا تھا، اکثر اوقات آپ(ع) کے درس میں دو ہزار طلبا حاضر ہوتے تھے اور بعض اوقات چار ہزار مشہور علماء حاضر ہوتے تھے، آپ(ع) کے شاگردوں نے آپ(ع) کی وہ تمام احادیث اور دروس تحریر کئے جو بعد میں شیعہ یا جعفری مذہب کے علمی خزانہ کے مانند کتابوں کی شکل میں آئے۔(۵)
حیاۃ الامام الصادق(ع)میں آپ کے تین ہزار چھ سو باسٹھ راویوں کاتذکرہ ملتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔الارشاد ،ج۲،ص۵۹،اعلام الوریٰ،ج۱،ص۵۳۵،المعتبر،ج۱،ص۲۶۔
۲۔صواعق محرقہ،ص۱۲۰۔
۳۔اصول الفکریہ للثقافۃ الاسلامیۃ،ج۱،ص۲۰۳۔
۴۔حیاۃ الامام جعفر صادق،ج۱،ص۱۳۴۔
۵۔کیاب سابق،اور مذاہب اربعۃ،ج۱،ص۶۲۔




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 August 16