Thursday - 2018 july 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188714
Published : 29/7/2017 18:39

ہارون مکی کا کردار شیعہ ہونے کی کسوٹی

امام علیہ السلام نے سہل خراسانی سے پوچھا خراسان میں ایسے افراد کی کتنی تعداد ہے؟سہل نے کہا کہ خدا کی قسم ایک بھی نہیں۔آپ نے فرمایا کہ جب اس طرح کے ہمیں پانچ افراد مل جائیں گئے تو ہم اپنے حق کے لئے اٹھ کھڑے ہوں گے ہم بہتر جانتے ہیں کہ ہمیں کب قیام کرنا ہے۔

ولایت پورٹل:مامون رقی کہتے ہیں کہ میں ایک دن امام جعفر صادق علیہ السلام کی خدمت میں بیٹھا تھا کہ سہل بن حسن خراسانی امام کی خدمت میں حاضر ہوئے اور سلام کر کے بیٹھ گئے اور امام علیہ السلام کی خدمت میں عرض کیا:مولا آپ رحیم و کریم خاندان کے فرد ہیں، امامت آپ کا حق ہے پھر کیا وجہ ہے کہ آپ اپنے حق کے لئے جنگ نہیں کرتے جبکہ اس وقت آپ کے لاکھوں عقیدت مند موجود ہیں اور ہزاروں شرربار تلواريں آپ کی نصرت کے لئے حاضر ہیں۔
امام علیہ السلام نے فرمایا ابھی بیٹھو تھوڑی دیر بعد تمہیں جواب دونگا۔
پھر آپ نے کنیز کو حکم دیا کہ تنور کو روشن کیا جائے،جب تنور روشن ہوگیا اور آگ سے بھر گیا تو آپ نے سہل سے فرمایا اس تنور میں جا کر بیٹھ جاؤ،سہل خراسانی یہ حکم سن کر پریشان ہوا اور معزرت طلب کی۔ اس دوران ہارون مکی امام علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہوئے،امام علیہ السلام نے فرمایا ہارون جوتی باہر رکھ دو اور تنور میں جاکر بیٹھ جاؤ۔
ہارون نے فوراً آپ کے حکم کی تعمیل کی ،جیسے ہی ہارون تنور میں جاکر بیٹھے،تو آپ نے اوپر سے تنور کا منھ بند کروادیا اور سہل سے خراسان کے متعلق کافی دیر تک گفتگو کرتے رہے پھر آپ نے خراسانی سے فرمایا ذرا تنور کے پاس جاؤ اور ہارون کا حال ملاحظہ کرو۔
سہل تیزی سے تنور پر آئے اور جیسے ہی ڈھکن اٹھایا تو ہارون کو عجب حال میں پایا، ہارون ایک سرسبز باغیچہ میں بیٹھا ہوئے تھے،تنور کا منھ کھلتے ہی ہارون باہر آگئے۔
امام علیہ السلام نے سہل خراسانی سے پوچھا خراسان میں ایسے افراد کی کتنی تعداد ہے؟
سہل نے کہا کہ خدا کی قسم ایک بھی نہیں۔
آپ نے فرمایا کہ جب اس طرح کے ہمیں پانچ افراد مل جائیں گئے تو ہم اپنے حق کے لئے اٹھ کھڑے ہوں گے ہم بہتر جانتے ہیں کہ ہمیں کب قیام کرنا ہے۔
حکایتھائی شنیدانی ج٤ ص٦٥۔
سفینۃالبحار ج٢ ص٧١٤۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 july 19