Wed - 2018 Dec 12
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188730
Published : 30/7/2017 16:38

مہمان افضل یا میزبان

آپ علیہ السلام نے ارشاد فرمایا:ہاں!چونکہ جب یہ تمہارے مؤمن بھائے تمھارے گھر داخل ہوتے ہیں تو تمھاری مغفرت لے کر آتے ہیں،اور جب تمھارے گھر سے روانہ ہوتے ہیں، تو تمھارے اور تمھارے خاندان کے گناہ لے کر رخصت ہوتے ہیں۔


ولایت پورٹل:شیخ کلینی رحمۃ اللہ علیہ اصول الکافی میں رقمطراز ہیں کہ  ایک مرتبہ حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے حسین بن نعیم سے دریافت فرمایا: کیا تم اپنے دینی بھائیوں سے محبت رکھتے ہو؟
انہوں  نے کہا: ہاں مولا۔
آپ علیہ السلام نے فرمایا: کیا تم تنگ دست مؤمین کی مدد کرتے ہو؟
انہوں نے جواب دیا:ہاں مولا ۔
پھر آپ علیہ السلام نے فرمایا:ہاں! ان لوگوں سے محبت رکھنی ضروری ہے۔
اس کے بعد آپ علیہ السلام نے فرمایا:تو کیا کبھی غریب و مسکین مؤمنین کو اپنے گھر بلا کر کھانا کھلاتے ہو؟
انہوں نے کہا:ہاں مولا!میں اکیلا کھانا کھانے کا عادی ہی نہیں،میں ہمیشہ دو تین مؤمنین کو اپنے ساتھ بٹھا کر کھانا کھاتا ہوں۔
آپ علیہ السلام نے فرمایا:آگاہ ہوجاؤ،انہیں تم پر فضیلت حاصل ہے۔
حسین بن نعیم نے عرض کی:مولا میرے ماں باپ آپ پر قربان، میں ان کو دعوت دیتا ہوں اور  اپنے گھر بلا کر اپنے ساتھ دسترخوان پر بٹھا کر کھانا کھلاتا ہوں پھر بھی ان کو مجھ پر فضیلت حاصل ہے؟
آپ علیہ السلام نے ارشاد فرمایا:ہاں!چونکہ جب  یہ تمہارے مؤمن بھائے تمھارے گھر داخل ہوتے ہیں تو تمھاری مغفرت لے کر آتے ہیں،اور جب تمھارے گھر سے روانہ ہوتے ہیں، تو تمھارے اور تمھارے خاندان کے گناہ لے کر رخصت ہوتے ہیں۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Dec 12