Saturday - 2018 july 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188754
Published : 31/7/2017 16:13

امام رضا(ع)کے علوم کی وسعت

بصرہ،خراسان اور مدینہ میں علماء کے ساتھ آپ(ع) کے مناظرے آپ(ع) کے علوم کی وسعت پردلالت کرتے ہیں،دنیاکے جن علماء کو مامون آپ کا امتحان لینے کے لئے جمع کرتا تھا وہ ان سب سے زیادہ آپ پر یقین اور آپ کے فضل وشرف کا اقرار کرتے تھے ،کسی علمی وفدنے امام (ع)سے ملاقات نہیں کی مگر یہ کہ اس نے آپ کے فضل کا اقرار کرلیا،مامون آپ(ع) کو لوگوں سے دور رکھنے پر مجبور ہوگیاکہ کہیں آپ کی وجہ سے لوگ اس سے بدظن نہ ہوجائیں۔

ولایت پورٹل:
امام رضا(ع)اپنے زمانہ میں سب سے زیادہ اعلم اور افضل تھے اور آپ نے ان (اہل زمانہ) کو مختلف قسم کے علوم جیسے علم فقہ،فلسفہ ،علوم قرآن اور علم طب وغیرہ کی تعلیم دی۔
ہروی نے آپ(ع) کے علوم کی وسعت کے سلسلہ میں یوں کہا ہے:میں نے علی بن موسی رضا(ع)سے زیادہ اعلم کسی کو نہیں دیکھا، مامون نے متعددجلسوں میں علماء ادیان ،فقہاء شریعت اور متکلمین دہر کو جمع کیا،لیکن آپ ان سب پر غالب آگئے یہاں تک کہ ان میں کوئی ایسا باقی نہ رہا جس نے آپ(ع) کی فضیلت کا اقرار نہ کیاہو،اور میں نے آپ (ع)کو یہ فرماتے سنا ہے:میں ایک مجلس میں موجود تھا اور مدینہ کے متعدد علماء بھی موجود تھے ،جب ان میں سے کوئی کسی مسئلہ کے بارے میں پوچھتا تھا تو اس کو میری طرف اشارہ کردیتے تھے اور مسئلہ میرے پاس بھیج دیتے تھے اور میں اس کا جواب دیتا تھا۔(۱)
ابراہیم بن عباس سے مروی ہے:میں نے امام رضا(ع)کونہیں دیکھامگریہ کہ آپ(ع)نے ہر سوال کا جواب دیا ہے، میں نے آپ کے زمانہ میں کسی کو آپ(ع) سے اعلم نہیں دیکھا اور مامون ہر چیز کے متعلق آپ(ع) سے سوال کرکے آپ(ع) کا امتحان لیتاتھا اورآپ(ع)اس کا جواب عطا فرماتے تھے۔(۲)
مامون سے مروی ہے :میں اُن (یعنی امام رضا)سے افضل کسی کو نہیں جانتا۔(۳)
بصرہ،خراسان اور مدینہ میں علماء کے ساتھ آپ(ع) کے مناظرے آپ(ع) کے علوم کی وسعت پردلالت کرتے ہیں،دنیاکے جن علماء کو مامون آپ کا امتحان لینے کے لئے جمع کرتا تھا وہ ان سب سے زیادہ آپ پر یقین اور آپ کے فضل وشرف کا اقرار کرتے تھے ،کسی علمی وفدنے امام (ع)سے ملاقات نہیں کی مگر یہ کہ اس نے آپ کے فضل کا اقرار کرلیا،مامون آپ(ع) کو لوگوں سے دور رکھنے پر مجبور ہوگیاکہ کہیں آپ کی وجہ سے لوگ اس سے بدظن نہ ہوجائیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔کشف الغمۃ،ج۳،ص۱۰۷۔
۲۔حیاۃ الامام الجواد،ص۴۲۔
۳۔اعیان الشیعۃ ،ج۴،ص۲۰۰۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 july 21