Thursday - 2018 Sep 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 188949
Published : 9/8/2017 19:10

عقیدہ مہدویت:

اہلسنت کی کتابوں میں امام مہدی(عج) کی ولادت باسعادت کا تذکرہ

شیعی عقیدہ کے مطابق مہدی موعود(عج)بارہویں امام ہیں جن کی ولادت باسعادت۲۵۵ ہجری نیمۂ شعبان کو سامرہ میں ہو چکی ہے۔پانچ برس کی عمرتک اپنے پدر بزرگوار امام حسن عسکری(ع)کے زیر سایہ زندگی بسر کی۔سن۲۶۰میں جب امام حسن عسکری(ع) کی شہادت ہو گئی تو آپ نظروں سے غائب ہو گئے اور ۳۲۹ہجری تک چار وکلاء اور نواب خاص آپ کی طرف سے شیعوں کے مسائل حل کرتے رہے اس عرصہ کو غیبت صغریٰ کہا جاتاہے اس کے بعد سے غیبت کبریٰ کا دور شروع ہوا آپ کی جانب سے شیعوں کے مسائل حل کرنے کی ذمہ داری عادل ومتقی فقہاء کے حوالہ کر دی گئی۔

ولایت پورٹل:شیعی عقیدہ کے مطابق مہدی موعود(عج)بارہویں امام ہیں جن کی ولادت باسعادت۲۵۵ ہجری نیمۂ شعبان کو سامرہ میں ہو چکی ہے۔(۱)پانچ برس کی عمرتک اپنے پدر بزرگوار امام حسن عسکری(ع)کے زیر سایہ زندگی بسر کی۔
سن۲۶۰میں جب امام حسن عسکری(ع) کی شہادت ہو گئی تو آپ نظروں سے غائب ہو گئے اور   ۳۲۹ہجری تک چار وکلاء اور نواب خاص آپ کی طرف سے شیعوں کے مسائل حل کرتے رہے اس عرصہ کو غیبت صغریٰ کہا جاتاہے اس کے بعد سے غیبت کبریٰ کا دور شروع ہوا آپ کی جانب سے شیعوں  کے مسائل حل کرنے کی ذمہ داری عادل ومتقی فقہاء کے حوالہ کر دی گئی۔(۲)
حضرت مہدی (عجل)کی ولادت کا عقیدہ شیعوں سے مخصوص نہیں ہے بلکہ بہت سے علماء اہل سنت کا بھی یہی عقیدہ ہے،چنانچہ ابن حجر ہیثمی شافعی نے اپنی کتاب«الصواعق المحرقہ»،سید جمال الدین نے«روضة الاحباب» ابن صباغ مالکی نے«الفصول المھمة»سبط ابن الجوزی نے «تذکرۃ الخواص»،عبد الرحمٰن جامی حنفی نے«شواہد النبوۃ»حافظ ابو عبد اللہ گنجی شافعی نے«البیان فی اخبار صاحب الزمان» اور «کفایة الطالب فی مناقب امیر المومنین»ابو بکر بہیقی نے «شعب الایمان»کمال الدین محمد بن طلحہ شافعی نے«مطالب السئول فی مناقب آل الرسول»حافظ ابو محمد البلاذری نے «الحدیث المتسلسل »ابو محمد عبد اللہ بن الخشاب نے«تاریخ موالید الائمة ووفیاتھم»شیخ محی الدین عربی نے«الفتوحات الملکیة»شیخ عبد الوہاب شعرانی نے «الیواقیت والجواہر»حافظ محمد بخاری حنفی نے«فصل الخطاب»حافظ ابو الفتح محمد بن ابی الفوارس نے«الاربعین»عبد الحق دہلوی نے«مناقب واحوال الائمة»حافط سلیمان القندوزی حنفی نے«ینابیع المودۃ» عبد اللہ بن محمد المطیری نے«الریاض الزاہرۃ»ابو المعالی سراج الدین الرفاعی نے«صحاح الاخبار فی نسب السادة  الفاطمیة الاخیار»مشہور مورخ محمد بن خاوند شاہ نے«روضۃ الصفا»اور دیگر بہت سے علماء نے اپنی کتب میں آپ کی ولادت کا تذکرہ کیا ہے:«منتخب الاثر»میں ساٹھ سے زیادہ ایسے علماء اہل سنت کے اسماء مذکور ہیں۔(۳)
البتہ علماء اہل سنت کے نزدیک مشہور قول یہی ہے کہ مہدی موعود (عجل)کی ولادت نہیں ہوئی ہے بلکہ آخر زمانہ میں ظہور اور قیام سے قبل دنیا میں تشریف لائیں گے لیکن علماء شیعہ نے آپ کی ولادت باسعادت اور حیات طیبہ پر عقلی ونقلی دلائل پیش کئے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔کان الامام بعد ابی محمد ابنه المسمیٰ باسم رسول اللّٰه المکنی بکنیته ولم یخلف ابوہ ولداً ظاہراً ولاباطناً غیرہ وکان مولدہ لیلة النصف من شعبان سنة  ۲۲۵  
۲۔غیبت کبریٰ اور فقہاء کی نیابت عامہ کے سلسلہ میں اس کے بعد بحث وگفتگوکی جائے گی۔
۳۔منتخب الاثر،ص/۳۲۲،۳۴۰۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Sep 20