Tuesday - 2018 Sep 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 189011
Published : 13/8/2017 17:47

وہابیوں کے نزدیک روضہ رسول(ص) میں نماز پڑھنا یا دعا مانگنا حرام

اگرچہ ابن تیمیہ روضہ رسول(ص) پر نماز پڑھنے اور دعا مانگنے کو حرام کیتے ہیں جبکہ اہل سنت کے نزدیک صحیح ترین کتاب صحیح بخاری کے مؤلف نے خود تحریر کیا ہے کہ میں نے آنحضرت کی قبر مطہر کے پاس بیٹھ کر یہ کتاب لکھی ہے۔


ولایت پورٹل:
ابن تیمیہ کہتے ہیں: ایسی کوئی حدیث نہیں ہے جو آنحضرت(ص) کی قبر مطہر کی زیارت کے مستحب ہونے پر دلالت کرے۔(۱)اسی وجہ سے خلفاء (ظاہراً خلفائے راشدین مراد ہیں) کے زمانہ میں کوئی شخص بھی آنحضرت(ص) کی قبر کے نزدیک نہیں جاتا تھا، بلکہ مسجد النبی(ص) میں داخل ہوتے وقت اور وہاں سے نکلتے وقت فقط آنحضرت(ص) کو سلام کیا کرتے تھے، اس کے بعد ابن تیمیہ کہتے ہیں:آنحضرت(ص)کی قبر مطہر کے نزدیک ہوجانا بدعت ہے۔(۲)نیز آنحضرت(ص)کی قبر منور کی طرف رخ کر کے بلند آواز میں سلام کرنا بھی جائز نہیں ہے۔
ابن تیمیہ، ان باتوں کو نقل کرنے کے بعد آنحضرت(ص)کی قبر مطہر کے بارے میں اس طرح کہتے ہیں:آنحضرت(ص) کا جسد حضرت عائشہ کے حجرہ میں دفن ہوا ہے، آنحضرت(ص) کی ازواج کے حجرے مسجد کے مشرق میں قبلہ کی طرف تھے اور حضرت عائشہ کے مرنے کے بعد ولید بن عبد الملک بن مروان کی خلافت کے زمانہ تک ان کے حجرے میں تالا لگا ہوا تھا،ولید نے عمر بن عبد العزیز (مدینہ میں ولید کے نائب)کو خط لکھا کہ پیغمبر(ص)کی ازواج کے تمام حجرے ان کے وارثوں سے خرید لئے جائیں اور ان کو گراکر مسجد النبی کا حصہ قرار دیدیا جائے۔
اس کے بعد ابن تیمیہ کہتے ہیں: جب تک عائشہ زندہ تھیں لوگ ان کے پاس احادیث سننے کے لئے جاتے تھے لیکن کوئی بھی آنحضرت(ص)کی قبر کے نزدیک نہیں جاتا تھا، نہ نماز کے لئے اور نہ دعا کے لئے،اس وقت قبر پر کوئی پتھر وغیرہ نہیں تھا بلکہ موٹی ریت کا فرش تھا۔(۳)
اور آپ (حضرت عائشہ) کسی کو بھی آنحضرت(ص)کی قبر والے حجرے میں نہیں جانے دیتی تھیں اور کسی کو بھی یہ حق حاصل نہیں تھا کہ آنحضرت(ص) کی قبر کے پاس جاکر دعا کرے یا نماز پڑھے۔
لیکن بعض جاہل اور نادان افراد آنحضرت(ص) کی قبر کی طرف رخ کرکے نماز پڑھتے تھے اور نالہ وفریاد کرتے تھے اور ایسی باتیں کہتے تھے جن کے بارے میں منع کیا گیاہے، البتہ یہ تمام چیزیں حجرے کے باہر ہوتی تھیں اورکسی کوبھی اتنی جرأت نہیں ہوتی تھی کہ وہ قبر پیغمبر سے نزدیک ہو او روہاں نماز پڑھے یا دعا کرے، کیونکہ جناب عائشہ کسی کو بھی اجازت نہیں دیتی تھیں کہ کوئی قبر کے نزدیک جاکر نماز پڑھے یا دعا کرے، جناب عائشہ کے بعد تک اس حجرے کے دروازہ پر تالا تھا یہاں تک کہ ولید بن عبد الملک نے اس حجرہ کو مسجد النبی(ص) میں شامل کروا دیا اور اس کے دروازے کو بند رکھا اور اس کے چاروں طرف ایک دیوار بنادی گئی۔(۴)
حجرے کے اندر قبر مطہر پر نہ تو کوئی پتھر ہے اور نہ ہی کوئی تختی اور نہ ہی کوئی گل اندود(ایسا مادّہ جس کو در و دیوار پر ملا جاتا ہے تاکہ خراب نہ ہوں)تھا بلکہ قبر مطہرموٹی ریت سے چھپی ہوئی تھی۔(۶)ان مطالب کے ذکر کرنے سے ابن تیمیہ کا مقصود آنحضرت(ص) کی قبر مطہر کے پاس نماز پڑھنا اور دعا کرنا بت پرستی کی مانند اور شرک کے حکم میں تھا،ابن تیمیہ نے ان باتوں کو ثابت کرنے کے لئے چند احادیث کا سہارا بھی لیا ہے،چنانچہ ہم آئندہ گفتگو میں اس کے نظریات کا رد پیش کریں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔کتاب الرد علی الاخنائی،ص۷۷۔
۲۔درحالیکہ اہل سنت کے نزدیک صحیح ترین کتاب صحیح بخاری کے مؤلف نے خود تحریر کیا ہے کہ میں نے آنحضرت کی قبر مطہر کے پاس بیٹھ کر یہ کتاب لکھی ہے۔
۳۔فاسی،شفاء الغرام،ج۲،ص۳۹۱ ۔
فاسی،شفاء الغرام،ج۲،ص۳۹۱۔
۴۔الجواب الباہر فی زوار المقابر،تالیف ابن تیمیہ،ص ۱۰ ۔۱۳ ۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Sep 18