Tuesday - 2018 Nov 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 189045
Published : 15/8/2017 18:8

نہج البلاغہ کا ایک سبق:

ترک معصیت اور نہج البلاغہ

بلا شبہ نماز گناہوں کو دامن سے جھاڑکر الگ کردیتی ہے جس طرح (درخت سے ) پتے جھڑتے ہیں اور گردنوں کو آزاد کردیتی ہے ۔رسول اللہ (ص) نے نماز کو اس گرم چشمہ سے تشبیہ دی ہے جو کسی شخص کے گھر کے دروازہ پر ہواور اس میں روزآنہ پانچ مرتبہ غسل کرے،آیا اس طرح کی مسلسل دھلائی کے بعد امید کی جاسکتی ہے کہ اس کے (جسم) پر کوئی میل رہ جائے گا ۔


ولایت پورٹل:اسلامی تعلیمات کی رو سے ہر گناہ دل پرتاریکی اور کدورت پیدا کرنے والے آثار چھوڑجاتا ہے جس کی وجہ سے کارخیر کی طرف رغبت کم ہوجاتی ہے اور دوسرے گناہوں کی طرف جرأت بڑھ جاتی ہے، اس کے برعکس عبادت وبندگی اور یاد خدا انسان کے مذہبی وجدان وافکار کو پروان چڑھاکر نیک کاموں کی رغبت میں اضافہ اور اور برے کاموں اور گناہوں کی طرف میلان میں کمی کردیتی ہے ،یعنی گناہوں سے پیدا ہونے والی تیرگی کو  زائل کرکے اس کی جگہ خیرونیکی کی طرف میلان ورغبت بڑھادیتی ہے۔
نہج البلاغہ کے ایک خطبہ میں نماز ،زکوٰۃ اورادائے امانت سے متعلق بحث کی گئی ہے ،نماز کی وصیت اور تاکید کے بعد حضرت علی علیہ السلام فرماتے ہیں:وَاِنَّھَا لَتَحُتُّ الذُّنُوْبَ حَتَّ الْوَرَقِ وَتَطْلُقُھَا اِطْلَاقَ الرِّبْقِ وَشَبَّھَھَا رَسولُ اللّٰہ بِالْحُمَّة تَکُوْنُ عَلیٰ بَابِ الرَّجُلِ فَھُوَ یَغْتَسِلُ مِنْھَا فِی الْیَوْمِ وَاللَّیْلَة خَمْسُ مَرَّاتِ فَمَا عَسیٰ اَنْ یَبْقیٰ عَلَیْه مِنَ الدَّرَنِ۔(نہج البلاغہ خطبہ ۱۹۷)    
بلا شبہ نماز گناہوں کو دامن سے جھاڑکر الگ کردیتی ہے جس طرح (درخت سے ) پتے جھڑتے ہیں اور گردنوں کو آزاد کردیتی ہے ۔رسول اللہ (ص) نے نماز کو اس گرم چشمہ سے تشبیہ دی ہے جو کسی شخص کے گھر کے دروازہ پر ہواور اس میں روزآنہ پانچ مرتبہ غسل کرے،آیا اس طرح کی مسلسل دھلائی کے بعد امید کی جاسکتی ہے کہ اس کے (جسم) پر کوئی میل رہ جائے گا ۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Nov 20