Thursday - 2018 Nov 15
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 189111
Published : 19/8/2017 18:30

نہج البلاغہ کا ایک سبق:

نہج البلاغہ کی روشنی میں حقیقی عبادت

حضرت امیر علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں:اگر خدا نافرمانی پر عقاب نہ رکھتا تب بھی اس کی نعمت پر شکر کا تقاضہ یہ تھا کہ اس کی معصیت اور اس کے حکم کی خلاف ورزی نہ کی جائے۔


ولایت پورٹل:حضرت امام علی علیہ السلام  کی نظر میں عبادت عارفانہ طرزفکر کی حامل ہے بلکہ عالم اسلام میں عارفانہ نظریات کی حامل عبادتوں کا منبع وسرچشمہ قرآن مجید اور سنت پیغمبر اسلام کے بعد حضرت علی علیہ السلام کے کلمات اور حضرت علی علیہ السلام کی عارفانہ عبادتیں ہی ہیں۔
ہم جانتے ہیں کہ اسلامی ادبیات کی عظمت وبلندی کے پہلوئوں میں سے ایک پہلو خواہ عربی ہو یا فارسی (یا اردو) ان میں انسان اور ذات احدیت کے درمیان عارفانہ اور عاشقانہ روابط ہیں،ایسے باریک و ظریف نظریات و فکارو خطاب ،دعا،تمثیل اور کنایہ وغیرہ کی شکل میں نثر یا نظم دونوں میں تخلیق ہوئے ہیں جو واقعاً لائق تحسین اور تعجب خیز ہیں۔
اسلامی مملکت میں اسلام سے ماقبل افکار کا موازنہ کرنے سے معلوم ہوسکتا ہے کہ اسلام نے دنیا کے افکار و نظریات کو وسعت وگہرائی اور لطافت و رقت کے لحاظ سے کتنی عظیم بلندی عطا کی ہے ! وہ لوگ جو بت یا انسان یا آگ کی پرستش کیا کرتے تھے اور کوتاہ اندیشی کی وجہ سے اپنے ہاتھوں سے تراشے ہوئے مجسموں کومعبود قرار دیتے تھے یا خدائے لایزال کو گراکر ایک انسان کے باپ کی صف میں لاکھڑا کرتے تھے اور کبھی کبھی باپ اور بیٹا ایک ہوجایا کرتے تھے یا اہورا مزدا۔(۱) کو قانوناً مجسم مانتے تھے اور اس کا مجسمہ ہر جگہ نصب کرتے رہتے تھے ،ان کو ایسا آدمی بنادیا کہ انھوں نے مجرد ترین معانی، باریک ترین نظریات، لطیف ترین افکار اور بلند ترین تصورات کو اپنے ذہنوں میں جگہ دینا شروع کردی ۔
آخر کس طرح سے ایک دم فکریں بدل گئیں ،منطقیں متغیر ہوگئیں ،افکار اوج پر پہنچ گئے  جذبات واحساس دلوں میں گھر بنانے لگے اور اقدار میں تبدیلیاں آگئیں ۔!؟
سبعۂ معلقہ اور نہج البلاغہ یکے بعد دیگرے وجود میں آنے  والی دو نسلیں ہیں اور دونوں نسلیں فصاحت و بلاغت کا نمونہ ہیں لیکن مطالب اور مفاہیم کے اعتبار سے دونوں میں زمین وآسمان کا فرق ہے،ایک میں بس گھوڑے اور نیزہ کی تعریف اونٹ کے اوصاف ،شب خون ،چشم و ابرو معاشقہ اور افراد کی مدح و ہجو ہے جبکہ دوسری میں عظیم ترین انسانی مفاہیم بیان کئے گئے ہیں۔
اب جبکہ ہم عبادت کے سلسلہ میں نہج البلاغہ کے نظریہ کی وضاحت کے لئے حضرت علی(ع) کے چند کلمات کوبطور نمونہ پیش کررہے ہیں تو اپنی بات کا آغاز آپ کے اس جملہ سے کرتے ہیں جس میں عبادت کے سلسلہ میں لوگوں کے طرز فکر کے فرق کو بیان کیا گیا ہے:
اِنَّ قَوْماً عَبَدُوا اللّٰهَ رَغْبَةً فَتِلْکَ عِبَادَۃُ التُّجَّارِ،
وَاِنَّ قَوْماً عَبَدُوا اللّٰهَ رَھْبَةً فَتِلْکَ عِبَادَۃُ الْعَبِیْدِ،
وَاِنَّ قَوْماً عَبَدُوا اللّٰهَ شُکْراً فَتِلْکَ عِبَادَۃُ الْاَحْرَارِ۔(۲)
ترجمہ:بیشک ایک جماعت نیثواب کی رغبت وخواہش کے پیش نظر اللہ کی عبادت کی یہ تاجروں کی عبادت ہے اور ایک جماعت نے خوف کی وجہ سے اس کی عبادت کی، یہ غلاموں کی عبادت ہے اور ایک جماعت نے از روئے شکر و سپاس گزاری اس کی عبادت کی تو یہ آزاد منشوں کی عبادت ہے۔
لَوْلَمْ یَتَوَعَّدِ اللّٰهُ عَلیٰ مَعْصِیَتِهٖ لَکَانَ یَجِبُ اَنْ لَا یُعْصٰی شُکْراً لِلنِّعْمَةِ.(۳)
ترجمہ:اگر خدا نافرمانی پر عقاب نہ رکھتا تب بھی اس کی نعمت پر شکر کا تقاضہ یہ تھا کہ اس کی معصیت اور اس کے حکم کی خلاف ورزی نہ کی جائے۔
حضرت علی علیہ السلام کے ارشادات میں سے ہے کہ آپ نے فرمایا:اِلٰھِیْ مَاعَبَدْتُکَ خَوْفاً مِنْ نَارِکَ وَلَاطَمَعاً فِی جَنَّتِکَ بَلْ وَجَدْتُکَ اَھْلاً لِلْعِبَادَۃِ فَعَبَدْتُکَ۔
ترجمہ:خدایا! میں نے تیری عبادت نہ تو جہنم کے خوف سے کی ہے نہ ہی جنت کی لالچ میں بلکہ تجھ کو لائق عبادت پایا تو تیری عبادت کی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔ اہورا یعنی خداوند روح و حیات اور مزدا ،اہوار کی صفت ہے۔
۲۔نہج البلاغہ کلمات قصار حکمت  ۲۳۷۔
۳۔نہج البلاغہ کلمات قصار حکمت :۲۹۰۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Nov 15