Friday - 2018 Oct. 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 189237
Published : 26/8/2017 17:45

وجود امام مہدی(عج) کے دلایل

ایسے افرادکے واقعات جنھوں نے غیبت کبریٰ کے دور میں امام زمانہ (عجل )سے ملاقات کی،ان واقعات کی تعداد اتنی زیادہ ہے کہ ان کے غلط ہونے کا احتمال بھی نہیں ہے،کسی بھی تاریخی یا سماجی مسئلہ کے بارے میں اگر مختلف زمان ومکان کے افراد خبر دیں تو اس واقعہ کی صحت کا یقین حاصل ہو جاتا ہے۔

ولایت پورٹل:قارئین کرام! ہم نے گذشتہ چند مقالات میں امامت خاصہ یعنی حضرت ولی عصر(عج) کی امامت پر متعدد عناوین سے گفتگو کی جس میں عقیدہ مہدویت اور امت مسلمہ کا اجماع نہایت قابل ملاحظہ امر ہے،اگرچہ شیعہ عقیدہ کے مطابق حضرت کی ولادت ہوچکی ہے اور اب ہم سب ظہور کے منتظر ہیں ،جبکہ بعض علماء اہل سنت اس نظریہ کے قائل ہیں کہ مہدی موعود(عج) ابھی پیدا نہیں ہوئے ہیں،آئیے اس مختصر سے مضمون میں ہم حضرت کے اس وقت بھی موجود ہونے اور یہ کہ آپ کی ولادت ہوچکی ہے اور اب صرف ظہور ہوگا،چند دلائل حاضر خدمت ہیں:
۱۔ہر زمانہ میں امام معصوم کی ضرورت پر عقلی دلائل:ان دلائل کا خلاصہ یہ ہے کہ انسانیت کے لئے ہر دور میں خدا کی «حجت بالغہ»کا ہونا ضروری ہے اور معصوم حجت بالغہ کا اتم مصداق ہوتا ہے ۔کلامی اور عقلی قاعدہ «قاعدۂ لطف»اسی کا تقاضا کرتا ہے البتہ امام معصوم کی غیبت ایک عارضی اور ثانوی چیز ہے لہٰذا غیبت اور امام کے وجود کی ضرورت ووجوب سے کوئی منافات نہیں ہے جیسا کہ محقق طوسی ؒ فرماتے ہیں: «و وجودہ لطف وتصرفه لطف آخر وعد معه منَّا»امام کا وجود لطف الٰہی کا مصداق ہے بشری امور میں اس کا تصرف بھی ایک الگ لطف ہے اور اس تصرف سے محرومی انسانوں کے اعمال وکردار کے باعث ہے۔
زمین کبھی حجت خدا سے خالی نہ ہوگی حجت خدا کبھی ظاہر و آشکار ہوگی اور کبھی غائب ومخفی، اس سلسلہ میں امیر المؤمنین(ع)ارشاد فرماتے ہیں:«اللّٰھم بلیٰ لا تخلو االارض من قائم للہ بحجة اما ظاہراً مشھوراً واما خائفا مغموراً لئلا تبطل حجج اللہ وبیناته»۔(۱)
خدا یا اس حقیقت کی تصدیق کرتا ہوں کہ زمین ایسے شخص سے خالی نہیں ہوتی ہے جو حجت خدا کے ساتھ قیام کرتا ہے چاہے وہ ظاہر ومشہور ہو یا خائف اور پوشیدہ تاکہ پروردگار کی دلیلیں اور نشانیاں مٹنے نہ پائیں۔
۲۔ حدیث ثقلین،بارہ خلفاء اور انہیں کے مانند دیگر احادیث جو قیامت تک ہر زمانہ میں امام معصوم کے وجود پردلالت کرتی ہیں جیسا کہ نصوص امامت کی بحث میں تفصیل بیان کیا گیا ہے۔
۳۔وہ روایات اور تاریخی دستاویزجو معین زمان ومکان میں آپ کی ولادت ثابت کرتی ہیں،لوگوں کی ولادت اور وفات کے سلسلہ میں عموماً ایسی تاریخی اسناد اور دستاویز ہی ثبوت تسلیم کی جاتی ہیں،اس سے قبل اہل سنت کے ان محدثین و مورخین کے اسماء پیش کئے جا چکے ہیں جنھوں نے اپنی کتب میں امام زمانہ (عجل )کی ولادت کا تذکرہ کیا ہے۔
۴۔ان لوگوں کے واقعات جنھوں نے امام حسن عسکری(ع)کی حیات طیبہ میں آپ کے بیت الشرف میں امام مہدی (عجل)سے ملاقات کی ہے۔
۵۔ایسے لوگوں کے واقعات جو غیبت صغریٰ کے دور میں حضرت مہدی (عجل )سے ملاقات کرتے تھے جن میں نواب اربعہ سر فہرست ہیں۔
یاد رہے کہ نواب اربعہ شیعوں کی عظیم شخصیات تھے اور ایمان و تقویٰ کے لحاظ سے اپنے زمانہ میں نادر روز گار تھے۔
۶۔ایسے افرادکے واقعات جنھوں نے غیبت کبریٰ کے دور میں امام زمانہ (عجل )سے ملاقات کی،ان واقعات کی تعداد اتنی زیادہ ہے کہ ان کے غلط ہونے کا احتمال بھی نہیں ہے،کسی بھی تاریخی یا سماجی مسئلہ کے بارے میں اگر مختلف زمان ومکان کے افراد خبر دیں تو اس واقعہ کی صحت کا یقین حاصل ہو جاتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 حوالہ:
۱۔نہج البلاغہ حکمت ،۱۴۷۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 Oct. 19