Monday - 2018 June 25
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 189527
Published : 11/9/2017 15:51

فکر قرآنی:

آسمانی ایام

ایسے ہی آسمانی کھڑکیوں میں سے حج کا پہلا عشرہ ہے، وہ دس راتیں کہ جن کا اختتام عید الضحیٰ کی صبح ہوتا ہے،اور دو دن اس کے بعد یعنی روز ترویہ کہ جب حجاج کرام عرفات کے میدان میں جاتے ہیں اور اپنے خدا سے مناجات کرتے ہیں اور روز عید قربان سے پہلے آخری شب یہ عجیب و غریب عشرہ ہے!

ولایت پورٹل:اگر یہ دنیا ایک پنجرہ کی مانند ہے تو حتمی طور پر آسمان کی طرف کھلنے والی ایک کھڑکی ہونی چاہیئے تاکہ آسمانی اور بہشتی ہوائیں اس دنیا میں چلے اور دنیا والوں کو حب دنیا اور دنیا دوستی سے نجات عطا کریں۔
ایسے ہی آسمانی کھڑکیوں میں سے حج کا پہلا عشرہ ہے، وہ دس راتیں کہ جن کا اختتام عید الضحیٰ کی صبح ہوتا ہے،اور دو دن اس کے بعد یعنی روز ترویہ کہ جب حجاج کرام عرفات کے میدان میں جاتے ہیں اور اپنے خدا سے مناجات کرتے ہیں اور روز عید قربان سے پہلے آخری شب یہ عجیب و غریب عشرہ ہے!
یہی وجہ ہے کہ قرآن مجید ان دس راتوں اور دنوں کی قسم کھاتا ہے تاکہ اہل عقل فکر ہوش کے ناخن لیں،اپنے گریبان میں جھانکے اور سورہ فجر کی برکتوں سے تعلقات دنیا سے دست بردار ہوجائیں لہذا ارشاد ہوتا ہے:
بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمنِ الرَّحیمِ
وَ الْفَجْرِ (1) وَ لَیالٍ عَشْرٍ (2) وَ الشَّفْعِ وَ الْوَتْرِ (3) وَ اللَّیْلِ إِذا یَسْرِ (4) هَلْ فی‏ ذلِکَ قَسَمٌ لِذی حِجْرٍ (5)
بنام خدائے رحمن و رحیم! قسم ہے فجر (عید قربان)کی،اور دس راتوں(ذی الحجہ کی) کی،اور جفت و طاق(عرفہ و ترویہ) کی،اور رات کی جب وہ جانے لگے،بے شک ان چیزوں میں قسم ہے صاحبِ عقل(جس میں حق و باطل کے اندر تفریق کی صلاحیت ہو) کے لئے۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 June 25