Monday - 2018 Oct. 22
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 189605
Published : 16/9/2017 16:12

۲۵ ذی الحجہ سن ۱۰ ہجری:

نزول سورہ دہر اور اہلبیت(ع) کا ایثار

رسول خدا(ص) نے یہ حال دیکھا تو بہت غمگین ہوئے،اور اللہ کی بارگاہ میں دعا کے لئے ہاتھ پھیلا دیئے:وا غوثاہ،یا اللہ ،اھل بیت محمد یموتون جوعاً؛یا اللہ فریاد ہے!تیرے نبی کے اہل بیت بھوک سے مر رہے ہیں!


ولایت پورٹل: بچپن میں ایک مرتبہ امام حسن و امام حسین علیہما السلام شدید بیمار ہوئے،تو پیغمبر خدا(ص) اپنے کچھ اصحاب کے ہمراہ شہزادوں کی عیادت کے لئے تشریف لائے اور آپ نے علی علیہ السلام سے ارشاد فرمایا:یا علی!ان دونوں کی شفایابی کے لئے نذر کرلیں،امید ہے کہ خدا انھیں جلد شفا عطا فرما دے گا۔
چنانچہ حضرت علی(ع) نے رسول خدا(ص) کی نصیحت سننے کے بعد عرض کیا:یا رسول اللہ(ص) ان دونوں بچوں کی صحت و شفا کے لئے میں یہ نذر کرتا ہوں کہ تین دن شکرانے کے روزے رکھوں گا،نذر تو علی(ع) نے کی لیکن حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا اور گھر کی کنیز فضہ نے بھی آپ کی تاسی میں یہ نذر مان لی۔
ابھی چند دن بھی نہ گذرے تھے کہ رسول خدا (ص) کا بتایا ہوا نسخہ کارگر ہوا اور علی و بتول(ع) کے دونوں دلارے صحت مند ہوگئے،لہذا علی و بتول(ع) نے اپنی نذر کو پورا کرنے کے لئے روزہ رکھنے کا قصد کیا،اس زمانہ میں مدینہ کے اکثر مسلمانوں کے مالی حالات چنداں بہتر نہیں تھے اور بالخصوص خاندان رسول(ص) کہ جو خدمت خلق میں ہی اپنا سب کچھ قربان کرنے کے لئے تیار رہتے تھے،ان کے پاس تو بدرجہ اولٰی کچھ بھی نہیں تھا،چنانچہ علی(ع) نے شمعون یہودی سے کچھ جو قرض لئے ،حضرت زہرا(س) نے انھیں پیسا اور ان کی روٹیاں تیار کیں،جبکہ ایک دوسری روایت میں یہ ہے کہ حضرت نے جو قرض نہیں لئے بلکہ اس کی کچھ روئی کو چرخہ سے کاتا اور اس کے عوض ۳ من جو آئے جس کو آپ نے ۳ دن  کے لئے رکھا۔
غرض! پہلے دن شہزادی(س) نے آٹا پیسا اور روٹی تیار کی مغرب کا وقت ہوا علی(ع) مسجد میں نماز کے لئے تشریف لے گئے،واپس آئے، دسترخوان بچھایا گیا تاکہ افطار کیا جائے لیکن ابھی پہلا ہی لقمہ توڑا تھا کہ دق الباب ہوا،اور کہا کہ میں مسکین ہوں کیا مجھے کچھ ملے گا،حضرت امیر(ع) نے اپنی روٹی اس مسکین کے حوالہ کردی،علی(ع) کی پیروی کرتے ہوئے گھر کے سب افراد نے اپنی اپنی روٹیاں اس کو دیدیں،اور خود پانی سے روزہ افطار کرلیا،اور پھر دوسرے اور تیسرے دن بھی اسی طرح کے واقعات پیش آئے،اور دوسرے دن یتیم اور تیسرے دن ایک اسیر کو افطار کی روٹیاں دیدیں گئیں۔
چوتھے دن امام علی(ع) اپنے دونوں بچوں کو لیکر رسول خدا(ص) کے پاس تشریف لے گئے،جیسے ہی رسول خدا(ص) نے امام حسن و حسین(ع) کی یہ حالت دیکھی کہ وہ بھوک کی شدت سے لرز رہے ہیں،حضرت(ص) نے علی(ع) سے ماجرا دریافت فرمایا،جناب امیر(ع) نے من و عن ساری داستان سنادی،رسولخدا(ص) نے دونوں نواسوں کو اپنی آغوش میں لیا اور اپنی بیٹی کے پاس آئے،دیکھا شہزادی(س) محراب عبادت میں مشغول عبادت و بندگی ہے لیکن چہرہ مبارک کا رنگ زرد ہے،نقاہت طاری ہے۔
رسول خدا(ص) نے یہ حال دیکھا تو بہت غمگین ہوئے،اور اللہ کی بارگاہ میں دعا کے لئے ہاتھ پھیلا دیئے:وا غوثاہ،یا اللہ ،اھل بیت محمد یموتون جوعاً؛یا اللہ فریاد ہے!تیرے نبی کے اہل بیت بھوک سے مر رہے ہیں!
اسی وقت جبرئیل امین نازل ہوئے اور عرض کیا:یا رسول خدا(ص) خداوند عالم نے آپ کے اہل بیت کے لئے ایک عظیم انعام قرار دیا ہے ذرا دیکھئے تو صحیح!یہ تحفہ سورہ دہر ہے اسے اللہ کی جانب سے قبول کیجئے!:«هَل اَتي عَلَي الاِنسانِ حينٌ مِنَ الدَّهرِ... اِنَّما نُطعِمُكُم لِوَجهِ اللهِ لانُريدُ مِنكُم جَزائاً وَ لاشَكوراً۔(۱)
ایک روایت میں یہ بھی ملتا ہے کہ سورہ دہر کے ساتھ ساتھ اللہ تعالیٰ نے آسمان سے ایک خوان نعمت اھل بیت(ع) کے لئے مزید اتارا تھا،جسے یہ حضرات(ع) ۷ دن تک تناول کرتے رہے۔(۲)
اس طرح اللہ نے رسول اللہ(ص) کی دل کو تسلی اور اہل بیت(ع) کے بے نظیر ایثار کی جزا عنایت فرمائی۔
چنانچہ یہ واقعہ ۲۵ ذی الحجہ سن ۹ یا سن ۱۰ ہجری میں پیش آیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱سوره انسان، كہ جو سوره «دهر» کے نام سے بھیی مشہور ہے۔
۲۔ مسارالشيعه شیخ مفید، ص 23؛ الاقبال بالاعمال الحسننة سيد بن طاووس، ج 2، ص 374.


 
 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Oct. 22