Thursday - 2018 Sep 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 190965
Published : 18/12/2017 16:12

حسن سیرت انسانی معیار

ہمیں کسی انسان کے ظاہری حسن و جمال اور لباس،حلیہ وغیرہ پر فریفتہ ہوکر اس کا انتخاب نہیں کرنا چاہیئے بلکہ اس کے کردار،اعمال اور حسن سیرت کو ملاحظہ کرنا چاہیئے،حسن صورت اگر حسن کردار کے ساتھ ہو تو یہ اللہ کا خاص عطیہ ہوتی ہے۔


ولایت پورٹل:ﺍﯾﮏ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞہوﺗﮯ ہی ﺍﭘﻨﮯ شاگردوں ﺳﮯ
دریافت کیا:ﺗﻢ ﺳﺐ ﮐﯽ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻥ ﺱ ﭼﯿﺰﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺑﻨﺎﺗﯽ ہے؟
ﺳﺐ ﺷﺎﮔﺮﺩﻭﮞ ﻧﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺌﮯ۔
ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: ﺑﮍﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ!
ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: ﮐﺘﺎﺑﯽ ﭼﮩﺮﮦ!
ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: طویل قامت!
ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: ﺳﻔﯿﺪ ﺭﻧﮓ!
ﺳﺐ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺳﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﻧﮯﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﮓ ﺳﮯ ﺩﻭ برتن ﻧﮑﺎﻟﮯ،ﺍﯾﮏ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻧﻔﯿﺲ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺭﻧﮕﻮﮞ ﻭﺍﻻ ﮔﻼﺱ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭﺩﻭﺳﺮﺍ ﻣﭩﯽ ﮐﺎ ﺑﻨﺎ ہوﺍ ﺑﮭﺪﺍ ﺳﺎ کٹورا!!
ﺍﺳﺘﺎﺩ ﻧﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ظروف ﻣﯿﮟ ﺍﻟﮓ ﺍﻟﮓﮐﻮﺋﯽ ﻣﺎﺋﻊ(لکوڈ) ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﮔﺮﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﻨﮧ ﮐﺮ ﮐﮯ ﮐﮩﺎ:ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﮯ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﮔﻼﺱ ﻣﯿﮟ ﺯہر ﮈﺍﻻ ہے ﺟﺒﮑﮧ ﻣﭩﯽ ﮐﮯ کٹورے ﻣﯿﮟ ﭘﯿﻨﮯ ﮐﺎ ﭘﺎﻧﯽ، ﺁﭖ ﻟﻮﮒ ﮐﻮﻥ ﺳﮯ برتن ﺳﮯ ﭘﯿﻨﺎ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ!!؟
ﺳﺐ نے ایک ﺯﺑﺎﻥ ہو ﮐﺮ ﮐﮩﺎ:ﻣﭩﯽ کے پیالے میں!!
ﺍﺳﺘﺎﺩ ﻧﮯ ﺑﻼ ﻓﺎﺻﻠﮧ ﮐﮩﺎ:ﺟﺐ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﻥ برتنوں ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﯽ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻣﻌﻠﻮﻡ ہو ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻇﺎ ہری ﺣﻠﯿﮧ ﺍﻭﺭ ﺭﻧﮓ ﻭ ﺭﻭﭖ ﺁﭖ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺑﮯ ﺍہمیت ہوگیا!
ہمیں بھی انسان کے ضمیر اور باطن کو پرکھنا چاہیئے ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺧﻮﺏ ﺻﻮﺭﺕ ﻟﺒﺎﺱﺍﯾﺴﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ بلکہ حیوان سے بھی پست کوئی مخلوق ہوتی ہے ان کا ظاہری حسن کو آنکھوں کو چکا چوندھ کردیتا ہے لیکن ضمیر اور روح آلودہ ہوتی ہے۔
لہذا ہمیں کسی انسان کے ظاہری حسن و جمال اور لباس،حلیہ وغیرہ پر فریفتہ ہوکر اس کا انتخاب نہیں کرنا چاہیئے بلکہ اس کے کردار،اعمال اور حسن سیرت کو ملاحظہ کرنا چاہیئے،حسن صورت اگر حسن کردار کے ساتھ ہو تو یہ اللہ کا خاص عطیہ ہوتی ہے۔


الاسوہ


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Sep 20