Sunday - 2018 Oct. 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 191029
Published : 20/12/2017 18:46

کلام خدا کی روشنی میں معصومین علیہم السلام

معصومین(ع)ایک ہی نور کا حصہ ہیں،اللہ تعالیٰ کی کامل ترین مخلوق اور موجودات کے درمیان خداوند عالم کے اسماء و صفات سے زیادہ مشابہت رکھتے ہیں،وہ خداوند عالم کے جانشین اور روئے زمین پر اس کے اسماء اور صفات کے کامل ترین مظہر ہیں،معصومین(ع) کا ایک نام جس سے ہم انہیں پکارتے ہیں«المثل الاعلیٰ» بھی ہے یعنی یہ سب عالی نمونہ ہیں جنکی نسبت قرآن مجید میں خداوند عالم نے اپنی طرف دی ہے

 
ولایت پورٹل: معصومین علیہم السلام کی معرفت کا بہترین ذریعہ اور منبع خداوند عالم کا کلام ہے،اس لئے کہ وہ معصومین(ع)کا خالق ہے اور دوسروں کے مقابلہ میں معصومین(ع) کو بہتر طریقہ سے پہچانتا ہے،کلام خدا کے بعد دوسرا معتبر ترین ذریعہ خود معصومین(ع) کا کلام ہے،چونکہ ہمارے کمالات محدود ہیں لہذا  کلام خدا یا کلام معصومین(ع) کے بغیر کما حقہ ان کی معرفت اور ان کے شایان شان ان کی تعریف و توصیف ہمارے لئے ممکن نہیں ہے اس لئے کہ یہ ایک مسلمہ ہے کہ ہر ظرف میں صرف اسی ظرف کے بقدر گنجائش ہوتی ہے،کسی بھی ظرف میں اس کی ظرفیت و گنجائش سے زیادہ سمائی ممکن نہیں ہوتی لہذا ہمارے محدود وجود اور محدود ظرف کمال میں معصومین(ع) کے تمام ترکمالات کو کما حقہ درک کرنے کی گنجائش نہیں ہے۔
خداوند عالم نے مختلف مواقع پر معصومین(ع) کا تعارف کرایا ہے اور لوگوں کو معصومین(ع)کے اتباع کی دعوت دی ہے،معصومین(ع) نے بھی دعاؤوں، خطبات یا حکیمانہ کلمات کے ذریعہ ان آیات کی تفسیر و تشریح کے ذیل میں اپنا تعارف کرایا ہے نیز متعدد مواقع پر لوگوں کو معصومین(ع) کے تئیں ان کی ذمہ داریوں کی جانب متوجہ کیا ہے۔
معصومین(ع)حقیقت واحدہ    
معصومین(ع)ایک ہی نور کا حصہ ہیں،اللہ تعالیٰ کی کامل ترین مخلوق اور موجودات کے درمیان خداوند عالم کے اسماء و صفات سے زیادہ مشابہت رکھتے ہیں،وہ خداوند عالم کے جانشین اور روئے زمین پر اس کے اسماء اور صفات کے کامل ترین مظہر ہیں،معصومین(ع) کا ایک نام جس سے ہم انہیں پکارتے ہیں«المثل الاعلیٰ» بھی ہے یعنی یہ سب عالی نمونہ ہیں جنکی نسبت قرآن مجید میں خداوند عالم نے اپنی طرف دی ہے:«وَلِلّٰهِ الْمَثَلُ الاَعْلٰیٰ»۔(۱) اور اللہ کے لئے بہترین مثال ہے۔
رسول خداؐ نے ارشاد فرمایا ہے:«نحن کلمة التقوی و سبیل الھدیٰ والمثل الاعلیٰ الحجة العظمیٰ والعروۃ الوثقٰی»۔(۲) ہم تقویٰ کا کلمہ ،ہدایت کا راستہ، سب سے اعلیٰ مثال (نمونہ) سب سے عظیم حجت اور نجات کاسب سے مستحکم سہارا ہیں۔
اسی طرح آپ(ص) نے حضرت علی علیہ السلام سے ارشاد فرمایا تھا:«یاعلی انت حجة اللہ وانت باب اللہ وانت الطریق الی اللہ وانت النباء العظیم وانت الصراط المستقیم وانت المثل الاعلیٰ»۔ (۳)
اے علی!تم ہی اللہ کی حجت ،خدا تک پہونچنے کا دروازہ اور راستہ ہو ،تم ہی عظیم نباء (خبر)ہو، تم ہی صراط مستقیم ہو اور تم ہی اللہ کی سب سے اعلیٰ مثال (نمونہ) ہو۔
اس بنا پر اہلبیت(ع) سب سے بڑے عالم اور کمالات عبدی کے سب سے بڑے مظہر اور سب سے اعلیٰ نمونہ ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔سورہ نحل: ۶۰۔
۲۔ بحارالانوار: ج۲۶،ص۲۴۴۔
۳۔بحارالانوار: ج۳۶، ص۴۔

 
 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Oct. 21