Saturday - 2018 july 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 191109
Published : 24/12/2017 15:52

امیر المؤمنین(ع) کی نظر میں دولت کی مستی

حضرت امیر علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں: یہ وہ زمانہ ہوگا جس وقت تم بد مست وسرشار ہونگے ،شراب سے نہیں بلکہ دولت وخوش حالی کے نشہ سے ۔

ولایت پورٹل: امیرالمومنین(ع) اپنے کلمات میں ایک نکتہ کی طرف اشارہ فرماتے ہیں کہ «سُکرنعمت» دولت وخوشحالی سے پیدا ہونے والی مستی کہ جو اپنے ساتھ انتقام کی وباء لاتی ہے۔
آپ(ع) فرماتے ہیں :«ثُمَّ اِنَّکُمْ مَعْشَرَالْعَرَبِ اَغْرَاضُ بَلَایَاقَدِ اقْتَرَبَتْ فَاتَّقُوْاسَکَرَاتِ النِّعْمَةِ وَاحْذَرُوْا بَوَائِقَ النِّعْمَةِ»۔
ائے عرب والوتم! ایسی بلائوں کی آماجگاہ ہو کہ جو عنقریب آنے والی ہیں۔ نعمت کے نشہ اور اس کی مستی سے ڈرو اور انتقام کی بلا سے بچو۔
پھر حضرت علی علیہ السلام ان مسلسل ودائمی ناہنجاریوں کی مفصل شرح بیان فرماتے ہیں ،چنانچہ خطبہ ۱۸۵میں مسلمانوں کے خطرناک مستقبل کے بارے میں فرماتے ہیں:یہ وہ زمانہ ہوگا جس وقت تم بد مست وسرشار ہونگے ،شراب سے نہیں بلکہ دولت وخوش حالی کے نشہ سے ۔
دنیائے اسلام میں بے حساب دولت کی آمد مال کی غیر عادلانہ تقسیم اور عصبیت نے اسلامی معاشرہ کو عیش کوشی اور دنیا پرستی ایسے بھیانک مرض میں مبتلا کردیا تھا ۔
علی(ع) ان حالات سے کہ جو دنیائے اسلام کے لئے بہت بڑا خطرہ تھے مقابلہ کرتے رہے اور جو لوگ اس مرض کی پیدائش کا سبب تھے ان پر سخت تنقید فرماتے رہے۔ آپ(ع) نے اپنی شخصی اورانفرادی زندگی میں ان کے طرز بودوباش کے خلاف عمل کیا۔
جس وقت آپ(ع) (ظاہری) خلافت پر متمکن ہوئے تو ابتدائی پروگراموں میں انہی بحرانی حالات کے خلاف اقدام کیا ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ:
۱۔ نہج البلاغہ، خطبہ؍۱۲۹۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 july 21