Friday - 2018 August 17
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 191674
Published : 22/1/2018 19:13

امریکی بربریت میں داعش سے کم نہیں: شامی عوام

ایزویسٹیا اخبار کی رپورٹ کے مطابق شام کے عوام امریکہ سے حد درجہ نفرت کرتے ہیں چونکہ ادلب کے اطراف کے ایک ہی گاؤں پر امریکی اتحاد نے کئی ہوائی حملے کئے جن میں ۲۱۲ افراد ہلاک ہوئے تھے لہذا ان لوگوں کا کہنا ہے کہ امریکی وحشت و بربریت میں داعش سے پیچھے نہیں ہیں۔

ولایت پورٹل: رپورٹ کے مطابق مداد ریسرچ سینٹر نے حال ہی میں شام کے اندر داعش کے ساتھ ساتھ امریکی جرائیم اور تخریب کا حساب کتاب پیش کیا ہے جس کا خلاصہ یہ ہے:
امریکہ اس وقت شام میں داخل ہوا کہ جب ۲۰۱۴ میں کچھ دہشتگردوں نے شام کے کئی علاقوں پر اپنا قبضہ جمالیا تھا لہذا انسداد دہشتگردی کے عالمی اتحاد کے نام پر امریکی افواج شام میں اتاری گئیں جس کی آگ نے بہت سے بے گناہ شہریوں کے دامن کو جلا کر راکھ کردیا،اس اتحاد کی جارحیت اور اندھا دھند ہوائی حملوں میں نہ جانے کتنے شامی لوگ لقمہ اجل بنے،کتنوں کے گھر مسمار ہوئے غرض اس ملک کی تمام تنصیبات کو تباہ کرڈالا گیا۔
امریکیوں نے صرف انھیں مظالم پر اکتفاء نہ کیا بلکہ وہ شام کے حکومتی نظام اور اس کی سرحدوں میں تبدیلی کے خواہاں تھے۔
ایزویسٹیا اخبار کی رپورٹ کے مطابق شام کے عوام امریکہ سے حد درجہ نفرت کرتے ہیں چونکہ ادلب کے اطراف کے ایک ہی گاؤں پر امریکی اتحاد نے کئی ہوائی حملے کئے جن میں ۲۱۲ افراد ہلاک ہوئے تھے لہذا ان لوگوں کا کہنا ہے کہ امریکی وحشت و بربریت میں داعش سے پیچھے نہیں ہیں۔

 



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 August 17