Monday - 2019 January 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 191760
Published : 27/1/2018 16:31

جناب فاطمہ(س) کی شادی اور معنوی اقدار

شادی ایک مقدس فریضہ ہے اور کامل انسانوں کی تربیت کی اساس،لہٰذا اس میں جھوٹی قدروں اور ناپسندیدہ چیزوں کو اہمیت نہیں دینا چاہیئے بلکہ شادی کا معیار، لڑکا اور لڑکی کا جسمانی و روحانی نیز دینی لحاظ سے صحیح و سالم ہونا ہے۔
ولایت پورٹل: شادی ایک مقدس فریضہ ہے اور کامل انسانوں کی تربیت کی اساس،لہٰذا اس میں جھوٹی قدروں اور ناپسندیدہ چیزوں کو اہمیت نہیں دینا چاہیئے بلکہ شادی کا معیار، لڑکا اور لڑکی کا جسمانی و روحانی نیز دینی لحاظ سے صحیح و سالم ہونا ہے۔
قبیلوں کے سرداروں اور بڑے بڑے مالداروں نے مادی اور جاہلی نظریات کے تحت رسول(ص) کی بیٹی کی خواستگاری کی تو انہیں منفی جواب ملا۔
رسول(ص) اور فاطمہ(س) نے علی(ع) سے شادی کرنے کے سلسلہ میں اس وقت مثبت جواب دیاتھا جب حضرت علی(ع) کے پاس نہ سرمایہ تھا نہ زمین جائداد اور نہ ہی مال و دولت تھی بلکہ حضرت علی(ع) سے شادی کے سلسلہ میں فاطمہ(س) کی رائے میں معنوی اقدار اور اپنے ہونے والے شوہر کی عصمت تھی چنانچہ جب شب زفاف کی صبح کو رسول(ص) نے اپنی بیٹی سے معلوم کیا:کَیْفَ رَأَیْتَ زَوْجَکَ؟
بیٹی تم نے اپنے شوہر کو کیسا پایا؟
قالت:یَا اَبَةِ خَیْرُ زَوْجٍ
بابا،میں نے انھیں بہترین شوہر پایا ہے۔

 



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2019 January 21