Thursday - 2018 August 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192711
Published : 19/3/2018 16:44

اہل رجب اور ضیافت الہی

رجب ایک عظیم مہینہ ہے کہ جس میں اللہ نیکوں کا صلہ چند برابر کردیتا ہے اور گناہوں کو ختم کردیتا ہے ،جو شخص اس ماہ میں ایک روزہ رکھے تو جہنم کی آگ اس سے سو برس کے فاصلہ پر چلی جاتی ہے اور جو اس مبارک مہینہ میں تین روزے رکھ لے اس پر جنت واجب ہوجاتی ہے۔

ولایت پورٹل: قارئین کرام! یقیناً آپ بھی اس بات کی تصدیق کریں گے کہ پورے سال میں کچھ مہینے اور دن انسان کی زندگی کے لئے مقدر ساز ہوتے ہیں کہ جن سے زندگی کا طور طریقہ اور کیفیت ہی بدل جاتی ہے گویا ان کی آمد سے زندگی میں ایک خاص روحانی اور معنوی رونق آجاتی ہے چنانچہ انھیں مبارک اور مقدر ساز مہینوں میں سے ایک رجب کا مہینہ بھی ہے۔ ایسا مہینہ جو نوید رحمت و مغفرت اپنے ساتھ لایا ہے اس مہینہ کی فضیلت کے لئے آیا ہے:«رجب شھراللہ الاصب یصب اللہ فیہ الرحمۃ علی عبادہ»۔(۱)
سرکار رسالتمآب(ص) نے فرمایا: رجب اللہ کے فیض کا مہینہ ہے جس میں اللہ تعالیٰ اپنے بندوں پر فیضان رحمت نازل کرتا ہے۔
یا ایک دوسری روایت میں وارد ہوا ہے : «رَجَبٌ شَهْرٌ عَظِيمٌ يُضَاعِفُ اللَّهُ فِيهِ الْحَسَنَاتِ وَ يَمْحُو فِيهِ السَّيِّئَاتِ مَنْ صَامَ يَوْماً مِنْ رَجَبٍ تَبَاعَدَتْ عَنْهُ النَّارُ مَسِيرَةَ مِائَةِ سَنَةٍ وَ مَنْ صَامَ ثَلَاثَةَ أَيَّامٍ وَجَبَتْ لَهُ الْجَنَّة»۔(2)
رجب ایک عظیم مہینہ ہے کہ جس میں اللہ نیکوں کا صلہ چند برابر کردیتا ہے اور  گناہوں کو ختم کردیتا ہے ،جو شخص اس ماہ میں ایک روزہ رکھے تو جہنم کی آگ اس سے سو برس کے فاصلہ پر چلی جاتی ہے اور جو اس مبارک مہینہ میں تین روزے رکھ لے اس پر جنت واجب ہوجاتی ہے۔
اہل رجب پر اللہ تعالیٰ کی خاص عنایتیں
اگر ہم اس مہینہ میں ڈھنگ سے داخل ہوں اور اس کا استقبال بہتر طور پر کریں تو اللہ تعالٰی کی طرف سے خاص اکرام کے مستحق قرار پائیں گے اور جو لوگ اس مہینہ کا انتظار کرتے ہیں وہ درحقیقت ماہ مبارک رمضان میں پاکیزگی کے ساتھ داخل ہونے کے منتظر رہتے ہیں۔
انھیں لوگوں کو  اللہ کی خاص عنایت اور لطف  نصیب ہوتا ہے یہاں تک کہ ماہ رجب المرجب میں عبادت کرنے والوں کی قیامت میں بھی الگ ہی شان ہوگی چونکہ کسی بھی گروہ کو اس طرح آواز نہیں دی جائے گی جیسے اس مہینہ کے عابدوں کو دی جائے گی: «إِذَا كَانَ يَوْمُ الْقِيَامَةِ نَادَى مُنَادٍ فِي بُطْنَانِ الْعَرْشِ أَيْنَ الرَّجَبِيُّونَ ...»۔(3)
اور جب قیامت برپا ہوگی تو ایک منادی عرش سے ندا دے گا رجب والے کہاں ہیں؟
لہذا اس غیبی ندا کے بعد ایک گروہ اٹھے گا کہ جن کے چہرے چمک رہے ہوں گے جن کے سروں پر مروارید اور یاقوت کے بنے تاج سجے ہونگے اور ان میں سے ہر ایک انسان کے ساتھ ایک ہزار فرشتے داہنی جانب اور ایک ہزار فرشتے بائیں جانب کھڑے ہوکر اس سے کہیں گے کہ اے بندہ خدا! خدا کی دی ہوئی عزت تمہیں مبارک ہو!
فرشتوں کے بعد،خود عرش الہی سے آواز آئے گی اے میرے بندوں ! مجھے اپنی عزت و جلالت کی قسم!تم نے اس مہینہ میں بھوک کی زحمت اٹھائی اور روزے رکھے جس مہینے کو ہم نے محترم بنایا تھا تم نے اس کی حرمت کا  خیال رکھا اے میرے فرشتوں! میرے ان بندوں کو جنت تک لے جاؤ۔(4)
قارئین کرام! یہ ہے اس مہینہ کی عظمت ! لہذا اس مہینہ کے ہر پل اور لمحہ کو اپنے لئے غنیمت جانیں اور اس ایک مہینہ میں ہزاروں مہینوں کا راستہ طئے کیا جاسکتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
1- بحار الأنوار ، ج‏94، ص 36۔
2- ثواب الأعمال و عقاب الأعمال،ص54۔
3- روضه الواعظین،ص104۔
4- حوالہ سابق۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 August 16