Friday - 2018 August 17
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192754
Published : 25/3/2018 8:16

مشہور ٹی وی اینکر رویش کمارکی ہندوستان کے مسلمانوں سے دردمندانہ اپیل

یاد رکھیئے یہ مسابقاتی دور ہے *اور آپ ہر شعبہ میں پیچھے ہورہے ہیں* ۔کسی بھی قسم کے سرکاری مدد کا بھروسہ چھوڑ دیجیے۔ *جو کرنا ہے آپ اپنے دم پر کیجئے۔

6.jpg
ولایت پورٹل::گزشتہ دنوں مشہور ٹی وی اینکر رویش کمارنے ایک پروگرام کے دوران ہندوستان کے مسلمانوں سے دردمندانہ اپیل کی۔ذیل میں پیش ہے رویش کمار کی قیمتی باتیں۔

1- *آپ لوگ بی جے پی اور آر ایس ایس کی تنقید کرنا بند کردیں۔*
2-آپ کا مخالفت کرنا ہی ان کی طاقت ہے۔ویسے بھی جموں کشمیر کو چھوڑ کر نہ تو آپ کو کہیں کا وزیر اعلیٰ بننا ہے اور ناہی وزیر اعظم۔
3- جن کو کرسی پر بیٹھنا ہے وہ اپنے آپ بی جے پی اور آر ایس ایس کا مقابلہ کرلیں گے۔آپ کی مخالفت ہی سے بی جے پی اٹھارہ فیصدی مسلمانوں کا ڈر دکھا کر 80فیصدی ہندوﺅں کا ووٹ اپنے پالے میں لانے میں کامیاب رہتی ہے اور *پورے کھیل کے ڈائریکٹر تو اصل میں تین فیصد ہی ہیں۔*
4- آپ کو جس کسی بھی پارٹی کو ووٹ دینا ہے دو،جس کی حمایت کرنی ہے کرو، *پر بھول کر بھی بی جے پی ،آر ایس ایس ،مودی کی مخالفت مت کرو۔*
5- *بھول جاﺅ کہ آر ایس ایس نام کی کوئی تنظیم بھی ہے۔*
6- *بھول جاﺅ کہ بی جے پی کوئی پارٹی بھی ہے۔*
7- *بھول جاﺅ کہ مودی کوئی لیڈر بھی ہے۔*
8- آپ کی یہی حالت رہی تو *کچھ سالوں میں آپ سیاسی طور پر اچھوت بنا دیئے جائیں گے۔*پھر نا تو کانگریس آپ کو پوچھے گی ،نہ بی جے پی ،نہ سماجوادی اور نہ بہوجن سماجوادی۔
9-  جس ایم آئی ایم اور اویسی کی آپ آنکھ بند کر حمایت کررہے ہو اس کو انتخاب میں حصہ تبھی تک لینے دیا جائے گا جب تک بی جے پی کو ان کے الیکشن لڑنے سے فائدہ ہو رہا ہے۔جس دن بی جے پی کو لگے گا کہ اب ان کے چناﺅ لڑنے سے اسے نقصان ہورہا ہے اسی دن ایم آئی ایم پر پابندی لگادی جائے گی،جیسا کہ پہلے تیس چالیس سال تک پابندی لگی تھی۔
آپ صرف جدید ٹکنالوجی اورتعلیم پر دھیان دیں ،اتنے نمبرات لائیں کہ بغیر ریزرویشن کے ہی آپ سرکاری نوکریاں حاصل کرلیں۔
10- آزادی سے پہلے بھارت کے مسلمانوں کی آبادی 35فیصد تھی اور 35فیصد سرکاری نوکریوں پر مسلمانوں کا قبضہ تھا۔اس وقت یہ ریزرویشن جیسا کوئی قانون نہیں تھا۔ جو اس مقام تک پہنچتے تھے وہ اپنی قابلیت کے دم پر ہی پہنچتے تھے اور جو اپنے مذہبی اداروں میں زکواة وخیرات کا پیسہ دیتے ہیں ،بہتر ہوگا کہ آپ ان اداروں کو بھی زکواة وخیرات کا پیسہ دیں جو آپ کی تعلیم اور روزگار کیلئے کام کرے۔ *اگر ایسے ادارے نہیں ہیں تو بنائیے۔*
11- یاد رکھیئے یہ مسابقاتی دور ہے *اور آپ ہر شعبہ میں پیچھے ہورہے ہیں* ۔کسی بھی قسم کے سرکاری مدد کا بھروسہ چھوڑ دیجیے۔ *جو کرنا ہے آپ اپنے دم پر کیجئے*
باقی خدا مالک ہے۔
اعتماد




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 August 17