Tuesday - 2018 Oct. 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192865
Published : 29/3/2018 16:16

جشن مولود کعبہ(ع) اور ہماری ذمہ داری

اگر حقوق بشر کی تمام شقوں کو معاشرہ میں لانا ہو اور محض ایک نعرہ سے نکال کر اسے زندگی کے ہر شعبہ میں جاری و ساری کرنا ہو تو اس کے لئے ضروری ہے کہ ایک ایسے انسان کے پاس جائیں جو صرف حاکم نہیں ہے بلکہ حکومت تک پہنچنے سے پہلے وہ مزدور رہا ہے ، اس نے نہروں اور چشموں کو جاری کرنے میں انسانی مزدوروں کو بعد میں لگایا ہے سب سے پہلا پھاوڑا خود چلایا ہے سب سے پہلا بیلچہ خود چلایا ہے ، پہلا کدال خود چلایا ہے ، دنیا ایسا انسان کہاں سے لائے گی جس نے پیاسوں کےلئےچشمے خود جاری کیئے ہوں ، نہ کہیں سے بل پاس ہو جانے کا انتظار کیا نہ کہیں سے بجٹ کے آجانے کا انتظار کیا۔

ولایت پورٹل: عنقریب ہم سب امیر المؤمنین امام علی علیہ السلام کی ولادت با سعادت منانے کے لئے آمادہ ہیں ،۱۳ رجب کی تاریخ ایک بڑی تاریخ ہے اس دن تاریخ کے اس عظیم المرتبت انسان کی ولادت ہوئی ہے جس کی تعلیمات سے آج بھی بنی نوع بشر بہرہ مند ہو رہی ہے وہ انسان جسکا دل صرف اپنوں ہی کےلئےنہیں ہر ایک انسان کےلئے تڑپتا تھا ۔ کیا ایسے انسان کی ولادت کا جشن ہمارے ملک میں اس انداز میں نہیں  ہونا چاہیئے کہ دیگر قومیں متوجہ  اس بات کی طرف متوجہ ہوں کہ ہم  تاریخ کی کسی عظیم ہستی کی ولادت منا رہے ہیں اورجسکی ولادت منا رہے ہیں اس نے انسانیت کو کیا دیا ہے ؟  جب ہم امام علی علیہ السلام کی ولادت کا جشن منائیں تو کیا بہتر ہو کہ یہ جشن کچھ اس انداز سے منایا جائے کہ لوگوں کو آپ کے تعلیمات کا پتہ چل سکے اور خود ہم اس ۱۳ رجب کو عہد کریں کہ ہماری زندگی راہ علی پر گزرے گی  اسلئےکہ علی کی زندگی سیرت پیغبر ص کی آئینہ دار وہ زندگی ہے جسکا ایک ایک پل  ویسا گزرا جیسا خدا کو مطلوب تھا۔
اہلسنت عالم دین  سید ابوالحسن ندوی امام علی علیہ السلام کے پیغمبر سے مانوس ہونے کو بیان کرتے ہوئے لکھتے ہیں:''رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے خاندانی اورنسبی تعلق، ایک عمر کی رفاقت اور روز مرہ کی زندگی کو قریب سے دیکھنے کی وجہ سے سیدنا علی کرم اللہ وجہہ کو آپ کے مزاج افتاد طبع سے اور ذات نبوی کی خاص صفات و کمالات سے گہری مناسبت ہوگئی تھی، جن سے اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی برحق صلی اللہ علیہ وسلم کو نوازا تھا، وہ آپ کے میلان طبع اور مزاج کے رخ کو بہت باریک بینی اور چھوٹی بڑی باتوں کی نزاکتوں کو سمجھتے تھے، جن کا آپ کے رجحان پر اثر پڑتا ہے، یہی نہیں بلکہ سیدنا علی کرم اللہ وجہہ کو ان کے بیان کرنے اور ایک ایک گوشہ کو اجاگر کرکے بتانے میں مہارت تھی، آپ نے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے اخلاق و رجحان اور طریق تامّل کو بہت ہی بلیغ پیرایہ میں بیان کیا ہے''۔(۱) اسکا مطلب یہ ہے کہ چاہے ہم ہوں جو علی علیہ السلام کو اپنا پہلا امام مانتے ہیں چاہے ہمارے اہلسنت برادران ہوں اگر انہیں صحیح انداز میں آگے بڑھنا ہے اور زندگی کے نشیب و فراز سے سربلند گزرنا ہے تو ضروری ہے کہ وہ علی(ع) کی زندگی کے رہنما اصولوں کو اختیار کریں تاکہ دین و دنیا میں سرخ رو ہو سکیں۔ یقیناً ایسی شخصیت کی عملی زندگی سے آشنا ہونا ہم سب کے لئے ضروری ہے جسے اپنے تو کیا غیروں نے زبردست خراج عقیدت پیش کیا ہے۔
آئیں دیکھیں غیر مسلم دانشورں نے امام علی علیہ السلام کے بارے میں کیا کہا ہے اور ان کی گفتگو کے بعد ہماری ذمہ داری ایک پیرو علی(ع) ہونے کی حیثیت سے کیا ہے:
سلیمان کتانی  کا امام علی علیہ السلام کے بارے میں یہ  ایک جملہ کتنا سچا اور پیارا ہے کہ: تمام فضائل و خصائل علی علیہ السلام میں اکٹھے ہو گئے تھے، وہ جب منظر عام پر آئے تو انسان کی عظمت بلند ہوئی اور یہ علی علیہ السلام ہی کی مرہون منت ہے”-(۲)
ایک اور مقام پر کہتے ہیں: جس وقت علی علیہ السلام کو خلافت ظاہری حاصل ہوئی، توانہوں نے اپنا وظیفہ اور فرض سمجھا کہ دو محاذوں پر مقابلہ کیا جائے- پہلا محاذ لوگوں کو انسانی بلندی و عظمت سے آگاہ کرنا تھا اور دوسرا فتوحات جنگی کو اسلامی اصولوں کے تحت استوار کرنا تھا- یہی نکات تھے جو سرداران عرب کو ناپسند تھے اور انہوں نے بغاوت کے علم اٹھالئے”-(۳)
عیسائی مصنف(Poul Salama)امام علی(ع) کو یوں خراج عقیدت پیش کرتے ہیں:
جی ہاں میں ایک عیسائی  ہوں، لیکن  وسعت نظر کا حامل ہوں ، تنگ نظر نہیں، گرچہ میں عیسائی ہوں لیکن ایک ایسی شخصیت کے بارے میں بات کرنا چاہتا ہوں جس کے بارے میں تمام مسلمانوں کا کہنا ہے کہ خدا ان سے راضی ہے،  ایسی  شخصیت جس کا عیسائی احترام کرتے  ہیں اور اپنے اجتماعات میں ان کی ذات کو موضوع سخن قرار دیتے ہیں اور ان کے فرامین کو اپنے لئے نمونہ عمل سمجھتے ہیں، آئینہ تاریخ نے پاک و پاکیزہ اور اپنے نفس کو کچلنے والی بعض نمایاں ہستیوں کی واضح تصویر کشی کی ہے، ان میں علی(ع) کو سب سے برتری حاصل ہے۔یتیموں اور فقراء  کی حالت زار دیکھ کر غم سے نڈھال ہوکر آپ کی حالت ہی غیر ہوجاتی تھی اے علی(ع) آپ کی شخصیت کا مقام ستاروں کے مدار سے بھی بلند و برتر ہے۔ یہ نور کی خاصیت ہے کہ پاک و پاکیزہ باقی رہتا ہے اور اور گرد و نواح کے گرد و غبار اسے داغدار اور آلودہ نہیں کرسکتے۔وہ شخص جو شخصیت کے اعتبار سے آراستہ پیراستہ ہو وہ ہرگز فقیر نہیں ہوسکتا، آپ کی نجابت و شرافت دوسروں کے غم بانٹنے کے ذریعہ پروان چڑھی شک نہیں کہ دینداری اور ایمان کی حفاظت میں جام شہادت نوش کرنے والا مسکراتے ہوئے ہر درد و الم کو قبول کرتا ہے،،۔
کیا قابل غور نہیں  کہ ایک عیسائی اس والہانہ انداز میں گفتگو کر رہا ہے اور وہ بھی امام علی علیہ السلام کے سلسلہ سے۔اگر ایک عیسائی دانشور علی(ع) کی شخصیت میں دوسروں کا درد دیکھ رہا ہے اگر  فقراء کو دیکھ کر علی(ع) کا مچلنا دیکھ رہا ہے تو ایسے میں ہماری ذمہ داری کیا ہے ایک علی(ع) کے چاہنے والے کی حیثیت سے  ؟کیا علی (ع) کی زندگی ہم سے مطالبہ نہیں کرتی کہ ہم اپنے سماج اور معاشرہ میں غریب و نادار طبقے کا ہاتھ پکڑیں ؟ کیا علی(ع) کی زندگی ہم سے مطالبہ نہیں کرتی کہ دوسروں کا غم بانٹے انہیں ہلکا کریں  اگر  علی(ع) کی شخصیت درد و غم و اندوز سے نکھرتی ہے تو ہمیں بھی مصائب و آلام اور پریشانیوں میں خود کو سنبھالتے ہوئے جادہ عشق پر سر بلند و سرفراز ہو کر چلنا ہوگا۔
ایک اور مقام پر ایک اور مستشرق برطانوی مصنف جرنل سرپرسی سایکس(Journal Sir Percy Sykes)امام علی علیہ السلام کے بارے میں یوں کہتے نظر آتے ہیں:''حضرت علی(ع)دیگر خلفاء کے درمیان شرافت نفس، بزرگواری اور اپنے ماتحت افراد کا خیال رکھنے کے اعتبار سے بہت مشہور تھے۔ بڑے لوگوں کی سفارشات اور خطوط آپ کی کارکردگی پر اثرانداز نہیں ہوتے تھے اور نہ ہی ان کے تحفے تحائف پر آپ ترتیب اثر دیتے تھے'' ۔ امانتوں  کے معاملے میں حضرت علی(ع)کی دقت نظر اور ایمانداری  کے باعث لالچی عرب  آپ سے نالاں تھے''۔  
اس عیسائی مصنف کا امام علی علیہ السلام کے بارے میں یوں اظہار خیال  کیا ہم سے یہ تقاضا نہیں کرتا کہ آج سیرت علی(ع) پر عمل کرتے ہوئے ہمیں اپنی زندگی میں انہیں چیزوں کا اپلائی کرنا ہوگا جو امام علی علیہ السلام کی حیات میں نظر آتی ہیں ؟ اب ہمیں یہ دیکھنا ہوگا کہ چودہ صدیاں گزر جانے کے بعد ایک عیسائی مصنف اگر علی علیہ السلام کو اسلئےیاد رکھے ہوئے ہے کہ علی(ع) اپنے ماتحتوں کے ساتھ اچھا سلوک کرتے تھے تو ہم کہاں پر ہیں ؟ اپنے ما تحتوں کے ساتھ ہمارا طرز عمل کیا ہے ؟ علی(ع) اگر امانت کے سلسلہ سے بہت زیادہ حساس تھے تو ہم کتنے حساس ہیں؟
ایک اور برطانوی مصنف اور ماہر تعلیم سائمن اوکلے (1678-1720)   یوں کہتے نظر آتے ہیں:''علی(ع) ایسے صاحب فصاحت تھے کہ عرب میں ان کی باتیں زبان زد عام ہیں،آپٖ ایسے غنی تھے مساکین کا ان کے گرد حلقہ رہتا تھا ''۔ سوال یہ ہے کہ کیا ہماری زندگی ایسی ہے کہ ہمارے ارد گرد مساکین و فقراء کا حلقہ رہے ؟ یا ہم اس حلقہ کو ڈھونڈتے ہیں جہاں اغنیاء و ثروت مند افراد نظر آتے ہیں؟
فرانس کے میڈم ڈیالفو Madame Dyalfv کہتے ہیں : آپ اسلام کی سربلندی کے لیے  مظلومیت کے ساتھ وہ بھی جام شہادت نوش کرگئے،حضرت علی(ع) وہ باعظمت ہستی ہیں جنہوں نے ان تمام بتوں کو توڑ ڈالا جنہیں عرب یکتا خدا کا شریک ٹھہراتے تھے۔اس طرح آپ توحید پرستی اور یکتا پرستی کی تبلیغ کرتے تھے، آپ ہی وہ ہستی ہیں جس کا ہر عمل اور کام مسلمانوں کے ساتھ منصفانہ ہوا کرتا تھا
یہ صرف فرانس کے دانشور ہی نہیں بلکہ برطانوی ماہر تاریخ ایڈوڈ گیبن(1737-1794) بھی امام علی علیہ السلام کے بارے میں  کہتے نظر آتے ہیں :''حضرت علی(ع) لڑائی میں بہادر اور تقریروں میں فصیح تھے، وہ دوستوں پر شفیق اور دشمنوں پر فراخ دل تھے“۔
اب یہاں پر بھی ہمیں خود سے سوال کرنا ہے کیا ہمارا ہم و غم وہی ہے جو علی کا تھا؟ کیا ہماری زندگی میں وہ توحید پائی جاتی ہے جس کے لئے علی(ع) نے جنگیں لڑیں کیا ہمارا مزاج مسلمانوں کے ساتھ ویسے ہی منصفانہ ہے جیسا علی (ع) کا تھا؟ ان مصنفین کے جملوں کو دیکھیں اور خود کو ان جملوں کے میزان پر تولیں کیا ہم ایسے ہی ہیں؟ کیا ہم اپنے بھائیوں اور برادران دینی کے ساتھ منصفانہ مزاج رکھتے ہیں؟ کیا ہمارا کام ہمارا عمل حتی ہمارا نظریہ منصفانہ معیاروں پر استوار ہے؟ کیا جہاں ہم ہوں وہاں انصاف و عدل کی خوشبو آتی ہے یا جہاں پہنچ جائیں وہاں ظلم کا سیاہ دھواں اٹھتا نظر آتا ہے، کیا ہم اپنے دوستوں کے ساتھ شفقت کا برتاؤ کرتے ہیں کیا کیا اپنے دشمنوں کے ساتھ ہمارا عداوت و دشمنی کا کوئی معیار ہے، یا جو فراخ دلی امام علی علیہ السلام کی دشمنوں کے ساتھ تھی وہ ہم اپنے دوستوں کے ساتھ بھی نہیں دکھا پاتے ؟
معروف تاریخ  پروفیسرفلپ کے حتی1886-1978) کہتے ہیں:”سادگی حضرت علی(ع) کی پہچان تھی انھوں نے بچپن سے اپنا دل و جان رسول خدا(ص) کے نام کردیا تھا۔
کیا ہم اپنے طرز زندگی میں سادہ ہیں یا دنیا کی زرق و برق میں پوری طرح یوں غرق ہیں کہ سادگی محض ایک حرف بن کر رہ گئی ہے ہماری زندگی میں سب کچھ ہے سوائے سادگی کے ،ہم فیشن اور زمانے کی ضرورت کی آڑ میں وہ سب کچھ کرتے ہیں جسکی علی(ع)کی زندگی میں کوئی جگہ نہیں تھی بلکہ علی(ع) کی جنگ ہی انہی لوگوں سے تھی جو دنیا میں اس طرح رنگ گئے تھے کہ سادہ زیستی انکے لئے آبرو کا مسئلہ بن گئی تھی وہ ایک عام آدمی کی طرح سادہ نہیں جی سکتے تھے انہیں تام جھام کی ضرورت تھی ، انہیں اپنے انسان ہونے پر فخر نہ تھا بلکہ وہ اپنے مادی وسائل و ذرائع پر فخر کرتے تھے۔
سرویلیم مور (1905-1918) ایک الگ زاویہ کے تحت امام علیہ السلام کی زندگی میں پائی جانے والی دانشمندی و شرافت کو دیکھتے ہوئے کہتے ہیں :''حضرت علی(ع) ہمیشہ مسلم دنیا میں شرافت اور دانشمندی میں مثال رہیں گے”۔
اب ہم سوچیں کیا ہمارے زندگی کے فیصلہ ہماری دانشمندی کی علامت ہیں کیا ہم ایسے مسلمان ہیں جنہیں دیکھ کر ہمارے غیر مسلم بھائی کہہ سکیں کہ یہ ایسا علی علیہ السلام کا ماننے والا ہے جو دانشمندی و شرافت مندانہ زندگی میں علی علیہ السلام کی طرح بے مثال ہے۔
برطانوی ماہر جنگ جیرالڈ ڈی گورے 1897-1984):ایک مقام پر کہتے ہیں حضرت علی(ع) کے اسلام سے خالصانہ تعلق خاطر اور  معاف کرنے کی فراخدلی نے ہی ان کے دشمنوں کو شکست دی”۔ اب ہم سوچیں کہ ہمارا اسلام سے تعلق کس قدر خالص ہے اور کیا ہم کسی خطا کا شکار ہونے والے اپنے ہی دوست کو معاف کرنے پر تیار ہیں؟ یا ہر وقت بدلہ لینے کی فکر ہمیں ستائے رہتی ہے اور جب تک ہم بدلہ نہ لے لیں آتش انتقام خاموش نہیں ہوتی؟
امام علی علیہ السلام کے سلسلہ سے مختلف مکاتب فکر سے متعلق دانشوروں کے اظہار خیال کے یہ چند نمونے تھے جنہیں ہم نے آپ کے سامنے پیش کیا ،اس طرح اور اس سے بھی بہتر ایسے مسحور کن جملے آپکو امام علی علیہ السلام کے سلسلہ سے بہت ملیں گے جن کو پڑھ کر یا سن کر آپ وجد میں آ جائیں لیکن اس منزل پرآگے بڑھ کر ہمارا سوال خود سے ہے کہ چاہے وہ  دوستوں سے شفقت ہو یا  سادگی و شرافت یا پھر دوسروں کو معاف کر دینے کا جذبہ  ہمیں یہ خود سے پوچھنا ہوگا کہ یہ غیر مسلم دانشور امام علی(ع) کے جن صفات کی دہی کرتے ہوے انہیں سراہ رہے  ہیں ہم بھی انہیں سراہیں تو ہم میں اور ان میں فرق کیا ہوگا؟ کیا فرق صرف مانننے اور تسلیم کرنے میں ہے یا فرق عمل میں ہونا چاہیے ؟ اگر فرق عمل میں ہے تو ہمارا عمل کہاں ہے اور علی(ع) کی زندگی کہاں ہے ؟
علی کی کتاب نہج البلاغہ آج ہمارے یہاں کیوں مظلوم ہے وہ  کتاب جس کے بارے میں یہی سلیمان کتانی لبنانی مفکر کہتے نظر آتے ہیں:” کونسی ایسی چیز ہے جو نہج البلاغہ میں بیان کی گئی ہے اور وہ ایک حقیقت کی عکاس نہ ہو؟ ایسا لگتا ہے جیسے آفتاب کا تمام نور سمٹ کر پیکر علی ابن ابی طالب علیہ السلام میں سماگیا ہو کونسا ایسا کام ہے جو علی علیہ السلام نے اپنی زندگی میں انجام دیا ہو اور اس کا انجام انتہائی  اعلی نہ ہو۔(۴)
ہمارا یہ خود سے سوال ہونا چاہیئے کہ جب غیر اسلامی دانشور و اسکالرز امام علی علیہ السلام کے بارے میں اتنے خوبصورت انداز میں اظہار خیال کر رہے ہیں تو ہمیں پھر کیسا ہونا چاہئے  ہمارا عمل کیسا ہونا چاہئے ؟
کیا آج کی اس دنیا میں ہمارےلئےضروری نہیں کہ انسانیت کی قدروں کو اجاگر کرنے کےلئےخود بھی علی(ع) کے اصولوں  پر چلیں اور دنیا کے سامنے ان کی کتاب کے تعلیمات کو بھی عام کریں۔
آج دنیا میں یہ نعرہ تو بہت دیا جاتا ہے کہ ہم سب ایک دوسرے کے بھائی ہیں اور حقوق بشر کی عالمی قرارداد میں بھی یہ بات موجود ہے لیکن سوال یہ ہے کہ اگر عالمی حقوق بشر کے حوالہ سے پوری دنیا کے لوگ ایک دوسرے کے بھائی ہیں ، تو پھر یہ جنگ و جنایت کیسی ؟ کیوں دنیا میں چین و سکون کیوں نہیں ؟ کیا اس کی بنیاد یہ نہیں کہ انسانی حقوق کے دعویدار خود دنیا میں جنگ کی آگ بھڑکانے میں مصروف ہیں جو حقوق بشر کا نعرہ دے رہے ہیں وہی اپنے مفادات کےلئےدوسروں کے حقوق کو چھین رہے ہیں۔  
ایسے میں کیا ضرورت نہیں ایک ایسے انسان کا دامن تھاما جائے  جو صرف حقوق بشر کا نعرہ لگانے والا نہ ہوکر حقیقی معنی میں حقوق بشر کا محافظ ہو اور ایسا  انسان علی(ع) کے علاوہ  کہیں مل جائے تو دنیا بتائے؟ سبکو اسی کی پناہ میں جانا چاہیے لیکن افسوس کہ ایسی شخصیت علی کے علاوہ کہیں اور نظر نہیں آتی ، حقوق بشر کا منشور لکھنے والے تو بہت ہیں لیکن حقیقی معنی میں انسان کے ہمہ جہت حقوق کی رعایت کرنے والی ذات بس علی(ع) کی ہے۔ علی(ع) ان لوگوں کی طرح نہیں جو ایک منشور لکھتے ہیں اور جب وہ منشور اپنے مفادات سے ٹکڑاتا ہے تو اسے ہی کنارے ڈال دیتے ہیں بلکہ علی(ع) اس شخصیت کا نام ہے جو پہلے عمل کرتا ہے پھر دوسروں کو بتاتا ہے حضرت علی(ع) نے اس حقوق بشر کے منشور کو  اگر مالک اشتر کےمکتوب میں درج فرمایا تو اس پر عمل بھی  کیا جبکہ علی(ع)کے  علاوہ  لوگوں نے انسانی حقوق کا قانون تو لکھا لیکن ھرگز خود اس پر عمل نہیں کیا ۔آج آپ عالمی منظر نامہ پر نظر ڈالیں اور انسانی حقوق کے منشور کو دیکھیں  تو آپکو نظر آئے گا کہ حقوق بشر کا نعرہ لگانے والے عالمی سامراجیت کے شانہ بشانہ جیسے کل اپنے مفادات کی جنگ میں مشغول تھے آج بھی ہیں  یہی وجہ ہے کہ  انسانی حقوق کی  بازیابی کی آڑ میں انسانی اقدار و حقوق انسانی کی دھجیاں اڑائی جاتی ہیں کبھی شام پر حملہ ہوتا ہے کبھی یمن پر کبھی افغانستان و عراق پر۔
 وہ مظلوموں کے خون سے رنگیں سرزمین یمن ہو ، دہشت گردوں کی وحشیانہ کاروائیوں سے کھنڈرات میں تبدیل سرزمین شام ، یا پھر  بے گناہوں کے لہو سے رنگین عراق و افغانستان ،یہ بے گناہوں کا خون ارزاں رہے گا تب تک جب تک کہ ہم دنیا کے اندر انصاف کا مزاج نہ پیدا کر دیں اور لوگوں کے دلوں میں وہ درد نہ منتقل کر دیں جسے درد علی(ع) کہا جاتا ہے ۔ وہ انصاف کی خو ہو یا علی(ع)کا درد دونوں ہی چیزوں کو علی(ع) کی کتاب نھج البلاغہ بیان کر رہی ہے ۔  ورنہ دنیا میں انسان بھیڑیا بن کے اپنے ہی ہم نوعوں کو  چیرتا پھاڑتا رہے گا  جیسا کہ توماس ھابس کے مشہور نعرہ میں آیا:''انسان ہی ،انسان کے لئے بھیڑیا ہے''۔ یہی نعرہ عملی ہوتا رہے۔
بالکل واضح  ہے کہ ''انسانوں کے درمیان مساوات ''مقررہ حقوق اور تکلیف کے مقابلے میں، پاک اور متمدن انسانوں کی دلی خواہش رہی ہے،لیکن افسوس کی بات ہے جیسا کہ قدیم اور جدید زمانے سے انسانوں کی تاریخ شاہد ہے،کہ یہ مفہوم بھی''انسانی حقوق'' کے نعرہ کی طرح یا تو تحریر و تقریر اور اشتہارات کا وسیلہ بن کر رہ گیا ہےجسے دوسروں کے لئے بیان کیا جاتا ہے اور بس ،یا ناتواں اور سادہ لوح افراد کوفریب دینے کا وسیلہ ہے جو کہ اس نعرہ کی ظاہری خوبصورتی کو دیکھ ساتھ آ جائیں۔ جبکہ اگر حقوق بشر کی تمام شقوں کو معاشرہ میں لانا ہو اور محض ایک نعرہ سے نکال کر اسے زندگی کے ہر شعبہ میں جاری و ساری کرنا ہو تو اس کے لئے ضروری ہے کہ ایک ایسے انسان کے پاس جائیں جو صرف حاکم نہیں ہے بلکہ حکومت تک پہنچنے سے پہلے وہ مزدور رہا ہے ، اس نے نہروں اور چشموں کو جاری کرنے میں انسانی مزدوروں کو بعد میں لگایا ہے سب سے پہلا پھاوڑا خود چلایا ہے سب سے پہلا بیلچہ خود چلایا ہے ، پہلا کدال خود چلایا ہے ، دنیا ایسا انسان کہاں سے لائے گی جس نے پیاسوں کےلئےچشمے  خود جاری کیئے ہوں ، نہ کہیں سے بل پاس ہو جانے کا انتظار کیا  نہ کہیں سے بجٹ کے آجانے کا انتظار کیا ، نہ ہی عوامی اعتراض کا سامنا کرنے پر اسے کسی کے سامنے مجبور ہونا  پڑا بلکہ اس نے دیکھا کہ انسانیت کو پانی کی ضرورت ہے تو نکل پڑا کہیں قناتیں بنائیں  کہیں چشموں کو پھوڑا کہیں نہرو اور ندیوں کے رخ کو کھیت کھلیان کی طرف موڑا ا ایسا انسان جس نے ضرورت مندوں کےلئے حمالوں کو نہیں ڈھونڈا کہ کوئی مل جائے تو دو پیسے دیکر اس پر بوجھ لاد دیا جائَے بلکہ جب دیکھا کہ کسی کو ضرورت ہے اور اس سے اپنا بوجھ نہیں اٹھ رہا تو آستینوں کو چڑھا کر آگے آ گیا کہ میں ہوں ، ایسا انسان جس نے لوگوں کی خاطر حمالی کی ایسا انسان جس نے بیواؤں اور یتیموں کےلئےخود کھانا بنایا ایسا انسان جس نے اپنی جوتیاں خود سیں ایسا انسان جو کبھی کھیت میں کام کرتا نظر آیا کبھی یہودی کے باغ میں آبیاری کرتا نظر آیا کبھی جنگوں میں تلوار چلاتا نظر آیا یقیناً اتنا حق ہم سب پر رکھتا ہے کہ اس نے جب قلم اٹھا کر کچھ لکھا ہے تو ہم سب دیکھیں کہ اس نے انسانیت کو اپنی تحریر میں کیا دیا ہے۔ لیکن یہ سب تب ہوگا جب ہم اس کی کتاب کو پڑھیں گے اور دیکھیں گے ہم سے مخاطب ہو کر اس نے کیا کہا ہے۔
آج جب ہم تیرہ رجب کی خوشیاں منانے میں مصروف ہیں ، جب ہر طرف چراغانی ہے ، جب ہر طرف مبارکبادی کے سلسلے ہیں  پھول ہیں ، گلدستے ہیں ، عطر آگیں ماحول ہے ، ایسے میں کیا ضروری نہیں کہ ہم اپنی فریاد کرتی چیختی چلاتی روح کی طرف ایک نیم نگاہ کریں اور دیکھیں کہ وہ کیوں فریادی ہے ، کیا بہترین ردیف و بہترین قافیوں کی بندش میں امام علی علیہ السلام کی شان میں قصائد سپرد قرطاس کرنے والوں پر لازم نہیں کہ دیکھیں امام علی علیہ السلام ان سے کیا کہہ رہے ہیں ، نھج البلاغہ ان سے کیا کہہ رہی ہے ؟
کہیں ایسا نہ ہو کہ ہمارا حال بقول رہبر انقلاب اسلامی ایک ایسے بیمار کا ہو جس کی جیب میں یا الماری میں ایک ماہر طبیب کا نسخہ پڑا ہوا ہے لیکن وہ اس نسخے کو کھول کر نہیں دیکھتا اور اس پر عمل نہیں کرتا جبکہ اپنے مرض کی تکلیف سے تڑپتا بھی ہے۔
تیرہ رجب میں جتنی خوشیاں منائی جائیں کم ہیں ، جتنی چراغانی ہو ، جتنی محافل سجیں کم ہیں کہ جس شخصیت کے لئے یہ سب ہو رہا ہے وہ یکتائے روز گار ہے، لیکن کاش ہماری تھوڑی توجہ اس بات پر بھی ہو جائے کہ جس شخصیت کی ولادت کا جشن ہم منا رہے ہیں اسکی کتاب بالکل اسی کی طرح تنہا و اکیلی ہے ، ہمارے درمیان ویسے ہی جیسے علی  علیہ السلام تنہا تھے نیزوں پر قرآن اٹھانے والوں کے درمیان ، آج نھج البلاغہ تنہا  و اکیلی ہے علی علی کے نعروں کے درمیان حیدر حیدر کے نعروں کے درمیان ، کیا ہی مزہ دوبالا ہو جائے اور ان نعروں میں ایک نئی روح دوڑ جائِے اگر ہم ان نعروں کے ساتھ نھج البلاغہ کے تعلیمات پر بھی کچھ توجہ کر لیں ، ۱۳ رجب کی اس عظیم تاریخ میں جب ہر سو خوشیوں کے میلے ہیں اگر ہم نھج البلاغہ کو اس کی غربت سے نکالنے کے لئے ایک قدم بھی اٹھا سکےتو شاید علی علیہ السلام بھی ہمیں مسکرا کر گلیں لگا کہ مرحبا  میرے چاہنے والے تونے میری ولادت کی خوشی ویسے منائی جیسی میں چاہتا تھا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
حوالہ جات:
۱۔المرتضی ۔
۲۔کتاب امام علی، مشعلی و دژی مصنف:سلیمان کتانی،ترجمہ جلال الدین فارسی،صفحہ۸۷-
۳۔ایضاً،صفحہ۱۳۴-
۴۔ایضاً،صفحہ۲۱۳-

تحریر: سید نجیب الحسن زیدی


 

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Oct. 16