Friday - 2018 August 17
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192870
Published : 29/3/2018 17:56

پوری تاریخ میں کوئی علی(ع) جیسا نہیں جس کی تابناک حقیقت پر سب کا اتفاق ہو: رہبر انقلاب

آج آپ حضرات دنیا پر نظر ڈالئے، صرف عالم اسلام پر نہیں بلکہ پوری دنیا پر علی(ع) کی مدح کرنے والے کس قدر ہیں، بہت سے ہیں جو اسلام کو نہیں مانتے لیکن تاریخ کے ایک تابناک چہرے کے عنوان سے علی بن ابی طالب(ع) کو مانتے ہیں یہی اس تابناک جوہر کا روشن و آشکار ہونا ہے، خدا اس مظلومیت کی آپ(ع) کو جزا دیتا ہے کہ جہاں گھٹن کے اس ماحول میں زندگی بسر کی، آپ(ع) کی شخصیت کو چھپانے کی کوشش کی گئی لیکن آپ(ع)حضرات پوری تاریخ میں علی(ع) جیسا تلاش نہیں کرسکتے کہ جس کی تابناک حقیقت پر سب کا اتفاق ہو۔

ولایت پورٹل: حضرت علی علیہ السلام کی کامیابی کا ایک اہم عنصر یہ ہے  کہ آپ(ع) اپنی زندگی میں ان تمام دشواریوں میں کامیاب ہوئے جو آپ پر تحمیل (تھوپی) کی گئیں یعنی دشمن کے مضبوط محاذ، اس کی تشریح میں بعد میں کروںگا۔ مختصر یہ کہ وہ علی(ع) کو مات نہیں دے سکے بلکہ سب نے آپ(ع) سے شکست کھائی۔ آپ کی درخشاں حقیقت آپ کی شہادت کے بعد بھی روزبروز آشکار ہوتی رہی، یہ مراتب میں آپ(ع)کی زندگی کے زمانہ سے زیادہ تھی۔ آج آپ حضرات دنیا پر نظر ڈالئے، صرف عالم اسلام پر نہیں بلکہ پوری دنیا پر علی(ع) کی مدح کرنے والے کس قدر ہیں، بہت سے ہیں جو اسلام کو نہیں مانتے لیکن تاریخ کے ایک تابناک چہرے کے عنوان سے علی بن ابی طالب(ع) کو مانتے ہیں یہی اس تابناک جوہر کا روشن و آشکار ہونا ہے، خدا اس مظلومیت کی آپ(ع) کو جزا دیتا ہے کہ جہاں گھٹن کے اس ماحول میں زندگی بسر کی، آپ(ع) کی شخصیت کو چھپانے کی کوشش کی گئی آپ(ع) پر عجیب و غریب تہمت لگائی گئی اور ان تمام باتوں پر آپ(ع) نے جو صبر کیا ہے اس کی خدا کے پاس جزاء ہے یہ بھی اس کی ایک پاداش ہے کہ آپ(ع)حضرات پوری تاریخ میں علی(ع) جیسا تلاش نہیں کرسکتے کہ جس کی تابناک حقیقت پر سب کا اتفاق ہو، آج امیرالمؤمنین کے بارے میں جو کتابیں لکھی گئی ہیں اور جو ہماری نظر میں ہیں ان میں سے جو کتابیں عاشقانہ ترین انداز میں لکھی گئی ہیں وہ غیر مسلموں نے لکھی ہیں، میری نظر میں تین صاحبانِ قلم مسیحی ہیں کہ جنہوں نے امیرالمؤمنین کے بارے میں ستائش کے پیرایہ اور عاشقانہ انداز میں کتابیں لکھی ہیں۔ یہ عقیدت پہلے دن ہی سے شروع ہوگئی تھی یعنی جب سب آپ(ع) کے خلاف گواہی دے رہے تھے، آپ(ع) کے خلاف پروپیگنڈہ کررہے تھے (یعنی شام کی حکومت کے نمک خوار، صاحبان اقتدار اور علی(ع) کی تلوار و عدل کے مارے ہوئے)اور آپ(ع)کے خلاف زہر اگل رہے تھے۔ یہ قضیہ اسی وقت واضح ہوگیا تھا۔ میں یہاں ایک نمونہ پیش کرتا ہوں:عبداللہ بن عروہ بن زبیر کے بیٹے نے اپنے باپ (عبداللہ بن عروہ بن زبیر) کے سامنے امیرالمؤمنین(ع)کو برا بھلا کہا، زبیر کا پورا خاندان(سوائے مصعب بن زبیر کے) علی(ع) کے خلاف تھا۔ مصعب بن زبیر بہادر، سخی اور وہ شخص تھا کہ کوفہ کے معاملات میں مختار کے مقابلہ میں اور پھر عبدالملک سے لڑا تھا۔ اس کے علاوہ زبیر کا سارا خاندان پشت در پشت امیرالمومنین کا مخالف تھا جب کوئی تاریخ کا مطالعہ کرے گا تو اسے معلوم ہوگا کہ اس بدگوئی کے بعد باپ نے بیٹے کو جو جواب دیا ہے وہ بھی بہت زیادہ طرفدارانہ نہیں ہے لیکن اس میں بہت اہم باریکی ہے، اسے میں نے نوٹ کرلیا ہے۔ عبداللہ نے اپنے بیٹے سے کہا:«وَاللّٰهِ ما بَنَی النَّاسُ شَیْئًا قَطُّ اِلَّا ھَدَمَهٗ الدّینُ وَلَا بَنَی الدِّینُ شَیْئًا فَاسْتَطَاعَتِ الدُّنْیَا ھَدْمَهٗ»
یعنی دین نے جس چیز کی بنیاد رکھی ہے اور جس پر دین کی بنیاد استوار ہے،دنیا والوں نے اسے خراب کرنے کی لاکھ کوشش کی لیکن کامیاب نہیں ہوسکے۔
یعنی علی(ع) کے نام کو (کہ جس کی بنیاد دین و ایمان پر استوار ہے اسے) بدنام کرنے کی کوشش عبث ہے۔ اس کے بعد کہا:« اَلَمْ تَرَی الیٰ عَلِیِّ تُظْھِرُ بَنُو مَرْوَانَ مِنْ عَیْبِهٖ وَذَمِّهٖ وَاللّٰهِ لَکَاَنَّمَا یَأْخُذُونَ بِنَاصِیَتِهٖ رَفْعًا اِلٰی السَّمَاء»
دیکھو! بنی مروان کس طرح ہر موقع پر اور ہر منبر سے علی بن ابی طالب کو برابھلا کہتے ہیں لیکن ان کا برا بھلا کہنا بھی حضرت کی شخصیت کو بلند اور آپ کے چہرہ کو منور کرتا ہے۔
علی کی برائی کرنے سے لوگوں کے دلوں پر برعکس اثر ہوتا ہے۔ دوسرے مدمقابل بنی امیہ ہیں:«وَمَا تَرَی مَا یَنْدِبُوْنَ بِهٖ مَوْتَاھُمْ مِنَ الْمَدیْحِ واللّٰهِ لَکَانَّما یَکشفُونَ بِهِ عَنِ الْجِیْفِ»۔(نثرالدرر، ج۳،ص۱۸۶)۔
ترجمہ:اور کیا تم نہیں دیکھتے ہو کہ بنی امیہ اپنے مر جانے والوں کی جس قدر تعریف کرتے ہیں لوگوں کے دلوں میں ان کی طرف سے اتنی ہی نفرت ہوتی ہے ۔
شاید یہ باتیں حضرت علی(ع) کی شہادت کے تقریباً تیس سال بعد کہی گئی ہیں یعنی امیرالمؤمنین(ع) اپنی تمام مظلومیتوں کے باوجود اپنے زمانہ میں بھی تاریخ میں بھی اور لوگوں کی یادداشت میں بھی کامیاب ہیں۔

            


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 August 17