Saturday - 2018 Oct. 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 193689
Published : 12/5/2018 16:44

کیا آخرت طلبی دنیا کو چھوڑ دینے کا نام ہے؟

یہ خیال رہے کہ آخرت طلبی دنیا طلبی کی مخالف نہیں ہے بلکہ بنیادی مشکل جہاں سے پیدا ہوتی ہے وہ یہ ہے کہ جب انسان ہر چیز کو مادیات اور دنیا میں تلاش کرنے لگتا ہے اور اپنے تمام وقت کو دنیا کے حصول میں گذار دیتا ہے یہ ایک خطرناک چیز ہے لیکن اگر اس دنیا کا حصول آخرت کے لئے ہو تو پھر یہ دنیا دنیا نہیں دین بن جاتی ہے اوریہی آخرت کی کھیتی کہلاتی ہے۔

ولایت پورٹل: ہم انسان اکثر دنیا کی رعنائیوں میں اتنا غرق ہوجاتے ہیں کہ ہمارا سارا ہم و غم صرف یہ ہوتا ہے کہ ہم کسی طرح بھی ان تک پہونچ جائیں  اور آخرت کو بھول جاتے ہیں چنانچہ معصومین علیہم السلام کی بہت سی احادیث میں اس طرف اشارہ ہوا ہے کہ اکثر اوقات انسان اس دنیا کی لذات و نعمات میں اتنا گم ہوہوجاتا ہے کہ اگر اس کے ہاتھ سے آخرت کا توشہ(دینی عقیدہ اور عمل) بھی چلا جائے تو اسے پتہ تک نہیں چلتا۔ جبکہ یہ دنیا ہمیں یہاں رہنے کے لئے نہیں دی گئی ہے بلکہ یہ آخرت سدھارنے کے موقع کے طور پر مرحمت کی گئی ہے۔اور ہم دنیا سے بقدر ضرورت اتنا لیں اور حاصل کریں کہ جو یہاں ایک آبرو مندانہ اور شرافت مندانہ زندگی کے لئے کام آسکے۔
دنیا آخرت آباد کرنے کا ذریعہ
اسلام نے بہتر زندگی کے طور پر اس دنیا کے حصول کو منع نہیں کیا ہے۔(۱) بلکہ خیر دنیا اور خیر آخرت کو کسب و طلب کرنے کی ترغیب دلائی ہے ۔(۲) لیکن ساتھ ہی یہ بھی بتلا دیا ہے کہ دنیا آخرت کے لئے کھیتی ہے۔(۳) اس کی نعمتیں ختم ہوجانے والی اور آخرت باقی رہنے والی ہے۔(۴)
لیکن ان سب کے باوجود کچھ لوگ ایسے بھی ہوتے ہیں جو ان سب سے غافل ہوجاتے ہیں اور دینی اثاثے کو چھوڑ کر دنیا کے اسیر ہوجاتے ہیں اور اپنی تمام ہمت کو یہ دنیا اکھٹا کرنے میں صرف کردیتےہیں اگرچہ انہیں کچھ اس کا حصہ تو مل بھی جاتا ہے لیکن اکثر ان کی زندگی سے چین و سکون چھن جاتا ہے۔
ہم سب پر یہ مثال کتنی صادق آتی ہے:’’اکثر غنی محتاج ہوتے ہیں‘‘۔ یہ مثال اس امر کی غمازی کرتی ہے کہ کبھی کبھی آخرت کو بھلا کر یہ دنیا تشویش اور ٹینشن کا باعث بن جاتی ہے ،چونکہ بہت سے ایسے جوان بھی ہوتے ہیں جو مادیات کی عینک سے شادی کے مقدس رشتے کو دیکھ کر ایک دوسرے کے ساتھ رہتے ہیں اور ایک مثالی زندگی کی تشکیل کے لئے کوشش کرتے ہیں لیکن مقصد سے پہلے ہی یہ قافلہ بچھڑ جاتا ہے۔
نیز یہ بھی تجربات سے ثابت ہے کہ اگر کسی کے یہاں دو بچے ہوں اور ان میں سے ایک بے دین اور دوسرا پابند دین ہو اور جب بڑھاپہ کی دھوپ میں والدین کے سر کے بال سفید ہونے لگتے ہیں تو وہی بچہ کام آتا ہے جس کا خدا، دین اور قیامت پر محکم عقیدہ ہے۔وہ اپنے والدین کا بڑھاپے میں سہارا بنتا ہے۔
لیکن یہ خیال رہے کہ آخرت طلبی دنیا طلبی کی مخالف نہیں ہے بلکہ بنیادی مشکل جہاں سے پیدا ہوتی ہے وہ یہ ہے کہ جب انسان ہر چیز کو مادیات اور دنیا میں تلاش کرنے لگتا ہے اور اپنے تمام وقت کو دنیا کے حصول میں گذار دیتا ہے یہ ایک خطرناک چیز ہے لیکن اگر اس دنیا کا حصول آخرت کے لئے ہو تو پھر یہ دنیا دنیا نہیں دین بن جاتی ہے اوریہی آخرت کی کھیتی کہلاتی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔سورہ بقره:201
۲ـ نہج البلاغہ،ص 209
۳۔ سورہ النساء: 134
۴۔سورہ شوری:36

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 Oct. 20