Tuesday - 2018 June 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 193999
Published : 28/5/2018 13:21

گلگت بلتستان کو آئینی صوبہ تسلیم کرانے کے لئے پورے علاقہ میں مظاہرے

مجلس وحدت مسلمین کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان کے عوام کو جلد از جلد آئینی و قانونی حقوق دینا وقت کی سب سے اہم ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ عوام کا مطالبہ بالکل جائز اور قانونی ہے کہ گلگت بلتستان کو صدارتی احکامات کے تحت چلانے کے بجائے آئینی صوبہ تسلیم کرتے ہوئے پاکستان کا حصہ بنایا جائے۔
ولایت پورٹل: پاکستانی ذرائع ابلاغ کے مطابق جی بی آرڈر دو ہزار اٹھارہ کے نفاذ کے خلاف پورے گلگت بلتستان میں ہڑتال اور مظاہرے کئے جا رہے ہیں اور اتوار کے روز مکمل ہڑتال بھی کی گئی۔گلگت اور اسکردو سمیت مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہرے اور ریلیاں بھی نکالی گئیں۔ گلگت بلتستان کے عوام علاقے کو مکمل صوبے کے درجہ دینے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔اس سے قبل جب اتوار کی صبح پاکستان کے وزیر اعظم شاہد خاقان نے، جی بی اسمبلی سے خطاب کے دوران جب نئے آرڈر کے نفاذ کا اعلان کیا تو اپوزیشن اراکین نے شدید احتجاج کیا تھا۔
اپوزیشن ارکان نے نئے جی بی آرڈر کی کاپیاں پھاڑ دیں اور ایوان سے واک آؤٹ کرکے شہر میں جاری احتجاجی ریلی میں شامل ہو گئے۔ریلی میں متحدہ اپوزیشن اور عوامی ایکشن کمیٹی کے رہنماؤں کا کہنا ہے کہ عوام کے مطالبات پورا ہونے تک احتجاج اور مظاہرں کا سلسلہ جاری رکھا جائے گا۔ادھر مجلس وحدت مسلمین کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان کے عوام کو جلد از جلد آئینی و قانونی حقوق دینا وقت کی سب سے اہم ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ عوام کا مطالبہ بالکل جائز اور قانونی ہے کہ گلگت بلتستان کو صدارتی احکامات کے تحت چلانے کے بجائے آئینی صوبہ تسلیم کرتے ہوئے پاکستان کا حصہ بنایا جائے۔





آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 June 19