Monday - 2018 Nov 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 194157
Published : 10/6/2018 13:6

فکر قرآنی:

قیامت کی عدالت کے گواہ

قیامت کے روز اللہ کی عدالت میں انسان کے اعمال کی بہت سی چیزیں گواہ ہونگی جن میں نبی، امام اور فرشتوں کے علاوہ اس کے اعضاء و جوارح اور وجدان انسان کے عمل پر گواہ ہونگے۔

ولایت پورٹل: {وَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّنِ افْتَریٰ عَلَی اللّٰہِ کَذِباً أُوْلٰئِکَ یُعْرِضُوْنَ عَلٰی رَبِّھِمْ وَیَقُوْلُ الْأَشْھَادُ ھؤُلائِ الَّذِیْنَ کَذَبُوا عَلٰی رَبِّھِمْ أَلَا لَعْنَۃُ اللّٰہِ عَلَی الظَّالِمِیْنَ}۔(۱)
اور اس سے بڑا ظالم کون ہے جو اللہ پر جھوٹا الزام لگاتا ہے ۔یہی وہ لوگ ہیں جو خدا کے سامنے پیش کئے جائیں گے تو سارے گواہ گواہی دیں گے کہ ان لوگوں نے خدا کے بارے میں غلط بیانی سے کام لیا ہے تو آگاہ ہوجاؤ کہ ظالمین پر خدا کی لعنت ہے۔
قیامت کی عدالت میں کافی سارے گواہ ہیں:
الف:    خداوند متعال کی ذات کہ جو ہمارے تمام اعمال کی شاہد ہے{اِنَّ اللّٰہَ عَلٰی کُلِّ شَیٍٔ شَہِیْدٌ}۔(۲)
 ب:پیغمبر اکرم(ص) کی ذات بابرکت{فَکَیْفَ اِذَاجِئْنَا مِنْ کُلِّ اُمَّۃٍ بِشَہِیْدٍ وَجِئْنَابِکَ عَلٰی ھٰؤُلٓائِ شَہِیْداً}۔(۳)
ج:ائمہ معصومین علیہم السلام کا وجود ذیجود{وَکَذَالِکَ جَعَلْنَاکُمْ اُمَّۃٌ وَّسَطاًلِتَکُوْنُوْا شُھَدَآئَ عَلَی النَّاسِ}۔(۴)
ہم نے آپ کو درمیانہ امت قرار دیا تا کہ یہ لوگوں کے گواہ رہیں ،روایات کے مطابق امت سے مراد آئمۂ معصومین علیہم السلام ہیں اس لئے کہ امت کے دوسرے افراد نہ ہی معصوم ہیں اور نہ ہی وہاں گواہی دینے کے لئے کافی علم رکھتے ہیں ۔
د:فرشتے{وَجَآئَتْ کُلُّ نَفْسٍ مَعَھَاسَآئِقٌ وَّشَھِیْدٌ}۔(۵)
روز قیامت انسان کے ساتھ دو فرشتے بھی آئیں گے ایک اس کو کھینچے گا اوردوسرا گواہی دے گا۔
ھ:زمین { یَؤْمَئِذٍ تُحَدِّثُ اَخْبَارَھَا}۔(۶)
قیامت کے دن زمین اپنی خبروں کو بیان کر دے گی۔
و:انسان کا وجدان اور ضمیر{اِقْرَئْ کِتَابَکَ کَفٰی بِنَفْسِکَ الْیَوْمَ حَسِیْباً}۔(۷)
اپنے نامۂ اعمال کو پڑھواور خود ہی فیصلہ کرو کہ تمہارے ساتھ کیا سلوک کیا جائے۔
ز:انسانی بدن کے اعضاء{ یَوْمَ تَشْھَدُ عَلَیْھِمْ اَلْسِنَتُھُمْ وَاَیْدِیْھِمْ وَ اَرْجُلُھُمْ}۔(۸) قیامت کے دن انسان کی زبان اورہاتھ پیر بات کرنے لگیں گے اور انسان کے خلاف گواہی دیں گے۔
ح:امام سجاد(ع) صحیفۂ سجادیہ کی چھٹی دعا میں فرماتے ہیں{ھٰذَا یَوْمٌ حَادِثٌ جَدِیْدٌ وَھُوَ عَلَیْنَا شَاھِدٌ عَتِیْدٌ} آج نیا دن ہے کہ جو قیامت کے دن ہمارے اعمال کا گواہ ہے جو ہم انجام دیتے ہیں۔
ط:عمل {وَجَدُوْا مَاعَمِلُوْ احَاضِراً}۔(۹)
قیامت کے دن انسان کے اعمال مجسم ہو جائیں گے اور اس کے سامنے حاضر ہوجائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔سورۂ ہود، آیت:۱۸۔
۲۔سورۂ حج،آیت:۱۷۔
۳۔سورۂ نساء ،آیت:۴۱۔
۴۔سورۂ بقرہ ،آیت:۱۴۳۔
۵۔سورۂ ق،آیت: ۲۱۔
۶۔سورۂ زلزال: ۴۔
۷۔ سورۂ اسراء،آیت: ۱۴۔   
۸۔سورۂ نور،آیت: ۲۴۔
۹۔سورۂ کہف:۴۸۔







آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Nov 19