Wed - 2018 Nov 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 194344
Published : 28/6/2018 14:40

ڈیرہ اسماعیل خان کے ایک امام بارگاہ پر حملہ،ایک مقامی شیعہ شہید اور دوسرا زخمی

رپورٹ کے مطابق پاکستان کے شہر ڈیرہ اسماعیل خان میں سپاہ صحابہ نامی کلعدم تکفیری ٹولہ نے امام بارگاہ کے سیکورٹی گارڈ لعل شاہ پر جان لیوا حملہ کیا جس میں سیکورٹی گارڈ تو بچ گیا لیکن ایک مقامی شیعہ شہید اور ایک شدید زخمی ہوگیا ہے۔

ولایت پورٹل: رپورٹ کے مطابق پاکستان کے شہر ڈیرہ اسماعیل خان میں سپاہ صحابہ نامی کلعدم تکفیری ٹولہ نے امام بارگاہ کے سیکورٹی گارڈ لعل شاہ پر جان لیوا حملہ کیا جس میں سیکورٹی گارڈ تو بچ گیا لیکن ایک مقامی شیعہ شہید اور ایک شدید زخمی ہوگیا ہے۔
بات در اصل یہ ہے کہ پاکستان میں ابھی کچھ دن بعد الیکشن ہونے والے ہیں اور دہشتگردوں کے سرغنہ پاکستان بھر میں دندناتے پھر رہے ہیں اور اس سے بھی بڑھ کر یہ مشہور و معروف دہشتگردوں کو مختلف پارٹیاں الیکشن میں اتار چکی ہیں اب ایسے میں پاکستان کے شیعہ مسلمانوں کو خاص  چیلینج کا سامنا ہے۔
موصولہ اطلاعات کے مطابق اس حملہ سے کچھ دیر پہلے ہی ڈیرہ اسماعیل خان کے وہابی سرغناؤں نے یہ فتوی جاری کیا تھا کہ شیعہ مسلمان نہیں بلکہ کافر ہیں اور اسی کے کچھ دیر بعد یہ پہلی واردات انجام پائی ہے۔
یاد رہے کہ تقریباً 35 برس سے پاکستان میں سعودی عرب اور امریکہ کے مشترکہ بجٹ سے دہشتگرد پالنے کے بڑے بڑے مراکز قائم ہیں جن کو ملک کی اقلیت اور خاص طور پر شیعوں کے ٹارگیٹ کرنے کے لئے ٹرینڈ کیا جاتا ہے ان سالوں میں تقریباً لاکھوں شیعہ ان وحشیوں کی درندگی کا شکار ہوچکے ہیں۔
لیکن سوچنے والی بات یہ نہیں ہے کہ دہشتگرد آزاد گھوم رہے ہیں بلکہ اس سے بھی زیادہ افسوس کا مقام یہ ہے کہ حکومت کی ناک کے نیچے یہ سب کام ہورہے ہیں ایسے میں ملک کی سیکورٹی بدحالی کا ذمہ دار حکومت کو کہا جائے یا فوج کو؟




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Nov 21