Thursday - 2018 Nov 22
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 194372
Published : 2/7/2018 14:48

الحدیدہ میں جنگ بندی کا اعلان اماراتی افواہ ہے،الحدیدہ کا کنٹرول کسی صورت اقوام متحدہ کو نہیں دیا جائے گا:انصار اللہ

متحدہ عرب امارات کی وزارت خارجہ کے مشیر انور قرقاش نے ایک ٹوئیٹ کر یہ اظہار کیا تھا کہ ان کے ملک نے یمن کے الحدیدہ میں وقتی طور پر جنگ بندی کے منصوبہ پر عمل در آمد کردیا ہے۔ اماراتی مشیر نے دعوٰی کیا تھا کہ یہ جنگ بندی در حقیقت یمن کے معاملات میں اقوام متحدہ کے ایلچی مارٹین گریفیٹس کے کہنے پر اس لئے کی گئی ہے تاکہ وہ حوثیوں کو الحدیدہ سے غیر مشروط طور پر نکلنے کے لئے راضی کرسکیں۔

ولایت پورٹل: رپورٹ کے مطابق یمن کی رضاکار فورس انصار اللہ کے ترجمان محمد عبد السلام نے العالم کو دیئے انٹریو میں عرب امارات کی طرف سے الحدیدہ میں جنگ کے متوقف کردیئے جانے سے انکار کرتے ہوئے کہا ہے کہ یمن میں الحدیدہ اور مغربی ساحل پر جنگ ابھی پہلے کی طرح جاری ہے اور عرب امارات کی طرف سے جنگ بندی کا اعلان محض جھوٹ پر مبنی ایک افسانہ ہے تاکہ یہ ظاہر کیا جاسکے کہ یمن کے معاملات میں اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی کی بات انہوں نے تسلیم کی ہے۔
انصار اللہ کے ترجمان کے مطابق الحدیدہ میں جنگ بندی کی افواہ پھیلا کر مغربی ساحل پر ملنے والی تاریخی شکست کو اماراتی حکام چھپانا چاہتے ہیں۔
انصار اللہ کے ترجمان کے مطابق وہ اقوام متحدہ کے مشوروں پر عمل کرنے کے لئے تیار ہیں لیکن الحدیدہ کو کسی صورت اقوام متحدہ کے کنٹرول میں نہیں دیں گے۔
عبدالسلام نے وضاحت کی کہ اقوام متحدہ کے یمن میں خصوصی ایلچی کو الحدیدہ کا کنٹرول دیئے جانے کا کوئی مطلب ہی نہیں ہے ۔
یاد رہے کہ متحدہ عرب امارات کی وزارت خارجہ کے مشیر انور قرقاش نے ایک ٹوئیٹ کر یہ اظہار کیا تھا کہ ان کے ملک نے یمن کے الحدیدہ میں وقتی طور پر جنگ بندی کے منصوبہ پر عمل در آمد کردیا ہے۔ اماراتی مشیر نے دعوٰی کیا تھا کہ یہ جنگ بندی در حقیقت یمن کے معاملات میں اقوام متحدہ کے ایلچی مارٹین گریفیٹس کے کہنے پر اس لئے کی گئی ہے تاکہ وہ حوثیوں کو الحدیدہ سے غیر مشروط طور پر نکلنے کے لئے راضی کرسکیں۔
یہ دعوٰی ایسے وقت میں سامنے آیا ہے کہ جب مغربی ساحل اور الحدیدہ پر ۵۰ دن سے مسلسل سعودی اتحاد  اپنے مغربی حلیفوں،امریکہ،فرانس،برطانیہ اور اسرائیل کے ساتھ ملکر اپنا غاصبانہ قبضہ قائم کرنا چاہتا ہے تاکہ یمن کے عوام تک  پہونچنے والی غذائی سامان اور ادویہ جات  سے انہیں محروم کردیا جائے لیکن یمن کی فوج اور رضاکاروں نے اس محاذ پر ان کو چھٹی کا دودھ یاد دلا دیا ہے۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Nov 22