Saturday - 2018 Sep 22
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 194474
Published : 10/7/2018 18:4

رہبر انقلاب کی نظر میں امام صادق(ع) کے قیام کی نوعیت

قیام کرنے والا اسے کہتے ہیں جو حکمراں طاقت کے خلاف مضبوطی کے ساتھ کمربستہ ہو جائے اور اٹھ کھڑا ہو۔ اس کا مطلب لازمی طور پر عسکری قوت نمائی کے ساتھ ہونا نہیں ہے لیکن بہرحال ایک تعارض اور یلغار کی نشاندہی اور ایک بڑے اور بھرپور اقدام کی عکاسی ضرور کرتا ہے وہ بھی فکری و نظریاتی سرگرمیوں کے میدان میں یا افراد کی تیاری کے اعتبار سے یا ایک تنظیم کی تشکیل اور ایک خفیہ تحریک کی قیادت کی صورت میں لیکن بہر صورت قہر وتعارض کے ساتھ ۔

ولایت پورٹل: حضرت امام صادق علیہ کے متعلق بہت سی ایسی روایات ملتی ہیں جن سے پتہ چلتا ہے کہ آپ قیام کریں گے لیکن سوال یہ ہے کہ قیام کرنے والے سے کیا مراد ہے؟
اس سے مراد ’’تبلیغ و ارشاد اور احکامِ دین کے بیان کے لئے قیام‘‘ ہو سکتا ہے یا وہ مفہوم ہو سکتا ہےجو ہم اس تعبیر سے آج سمجھتے ہیں؟ اس کا جواب نفی میں ہے۔ ائمہ اور شیعوں کے عرف میں قیام اسی مفہوم کا حامل ہے جو آج اس لفظ سے لیا جاتا ہے۔ قیام کرنے والا اسے کہتے ہیں جو حکمراں طاقت کے خلاف مضبوطی کے ساتھ کمربستہ ہو جائے اور اٹھ کھڑا ہو۔ اس کا مطلب لازمی طور پر عسکری قوت نمائی کے ساتھ ہونا نہیں ہے لیکن بہرحال ایک تعارض اور یلغار کی نشاندہی اور ایک بڑے اور بھرپور اقدام کی عکاسی ضرور کرتا ہے وہ بھی فکری و نظریاتی سرگرمیوں کے میدان میں یا افراد کی تیاری کے اعتبار سے یا ایک تنظیم کی تشکیل اور ایک خفیہ تحریک کی قیادت کی صورت میں لیکن بہر صورت قہر وتعارض کے ساتھ ۔
لہٰذا امام محمد باقر(ع) کے فرمان کے مطابق اس بارے میں کوئی بحث نہیں کہ ان کے فرزند جعفر ابن محمد قیام کریں گے۔ بے شک انہیں اپنی تعارض آمیز تحریک کا آغاز کرنا چاہیۓ تھا، رہی یہ بات کہ آیا ان کی حرکت و قیام آخری مرحلہ (یعنی عسکری اقدام اور آخرکار کامیابی اور اقتدار کے حصول) تک پہنچ پائے گا یا نہیں، یہ ایک ایسی چیز ہے کہ جس کا تعین آئندہ پیش آنے والے واقعات و حوادث اور معاملات کی پیش رفت کی کیفیت سے وابستہ ہے۔۔۔ گویا اسی حوالے سے ایک دوسری حدیث میں امام صادق(ع) کی تحریک اور آپ(ع) کے اقدام کا انجام دوٹوک لہجے میں نہ سہی لیکن ناامیدی و مایوسی کے  انداز میں ضرور آیا ہے۔ اس روایت میں بھی امام محمد باقر(ع) اپنے ایک نزدیکی صحابی سے مخاطب ہیں۔
ابوصباح کنانی کہتے ہیں کہ امام محمد باقر(ع)نے اپنے فرزند ابی عبداللہ کی طرف دیکھا اور فرمایا کہ تم انہیں دیکھ رہے ہو؟ یہ ان لوگوں میں سے ہیں جن کے بارے میں خدا نے فرمایا ہے کہ ’’ہمارا ارادہ یہ ہے کہ ہم زمین کے مستضعف لوگوں پر احسان کریں اور انہیں زمین کا حکمراں اور وارث قرار دیں۔۔۔،،
شاید ان ہی بیانات کا اثر تھا کہ امام جعفر صادق(ع) کے قیام اور ان کی خلافت کا نظریہ خاص شیعوں کے درمیان بھی رائج ہوچکا تھا اور امام کے نزدیک ترین اصحاب اور آپ(ع) کے پدر بزرگوار اس کی نوید حتمی طور پر دیا کرتے تھے۔




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 Sep 22