Wed - 2018 Nov 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 194490
Published : 12/7/2018 14:35

فکر قرآنی:

آدم علیہ السلام کی بازگشت خدا کی طرف

یہ صحیح ہے کہ حضرت آدم علیہ السلام نے حقیقت میں کوئی فعل حرام انجام نہیں دیا تھا لیکن یہی ترک اولٰی ان کے لئے نافرمانی شمار ہوتا ہے، حضرت آدم فوراً اپنی کیفیت و حالت کی طرف متوجہ ہوئے اور اپنے پروردگار کی طرف پلٹے۔بہر حال جو کچھ نہیں ہونا چاہیئے تھا [یا ہونا چاہیئے تھا] وہ ہوا اور باوجودیکہ آدم کی توبہ قبول ہوگئی لیکن اس کا اثر وضعی یعنی زمین کی طرف اترنا یہ متغیر نہ ہوا۔

ولایت پورٹل: قارئین کرام! ہم نے گذشتہ کالم یہ عرض کیا تھا کہ جس جنت میں خدا نے حضرت آدم علیہ السلام کو رکھا تھا وہ کونسی جنت تھی؟ اور اللہ نے حضرت آدم علیہ السلام کو کس غلطی(ترک اولٰی) کے سبب جنت سے نکالا؟ آئیے اس تحریر میں پڑھتے ہیں کہ پھر حضرت آدم(ع) کس طرح توبہ کے ذریعہ اپنے پروردگار کے حضور لوٹے۔قارئین اسی موضوع پر پہلی تحریر پڑھنے کے لئے اس لنک پر کلک کیجئے!
آدم علیہ السلام کونسی جنت میں تھے؟
گذشتہ سے پیوستہ:وسوسہ ابلیس اور آدم کے جنت سے نکلنے کے حکم جیسے واقعات کے بعد آدم متوجہ ہوئے کہ واقعاً انہوں نے اپنے اوپر ظلم کیا ہے اور اس اطمئنان بخش اور نعمتوں سے مالا مال جنت سے شیطانی فریب کی وجہ سے نکلنا پڑا اور اب زحمت مشقت سے بھری ہوئی زمین میں رہیں گے اس وقت آدم اپنی غلطی کی تلافی کی فکر میں پڑے اور مکمل جان و دل سے پروردگار کی طرف متوجہ ہوئے ایسی توجہ جو ندامت و حسرت کا ایک پہاڑ ساتھ لئے ہوئے تھی اس وقت خدا کا لطف و کرم بھی ان کی مدد کے لئے آگے بڑھا اور جیسا کہ قرآن میں خداوندعالم کہتا ہے:’’ آدم نے اپنے پروردگار سے کچھ کلمات حاصل کئے جو بہت مؤثر اور انقلاب خیز تھے ان کے ساتھ توبہ کی خدا نے بھی ان کی توبہ قبول کرلی کیونکہ وہ تواب و رحیم ہے‘‘۔(۱)
یہ صحیح ہے کہ حضرت آدم علیہ السلام نے حقیقت میں کوئی فعل حرام انجام نہیں دیا تھا لیکن یہی ترک اولٰی ان کے لئے نافرمانی شمار ہوتا ہے، حضرت آدم فوراً اپنی کیفیت و حالت کی طرف متوجہ ہوئے اور اپنے پروردگار کی طرف پلٹے۔
بہر حال جو کچھ نہیں ہونا چاہیئے تھا [یا ہونا چاہیئے تھا] وہ ہوا اور باوجودیکہ آدم کی توبہ قبول ہوگئی لیکن اس کا اثر وضعی یعنی زمین کی طرف اترنا یہ متغیر نہ ہوا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ:
۱۔سورہ بقرہ:۳۷۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Nov 21