Saturday - 2018 Sep 22
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 194497
Published : 12/7/2018 18:21

شیعہ عقیدہ کے مطابق تصور قبر و برزخ

روایات میں قبر کو جنت کے باغات میں سے ایک باغ یا جہنم کی گھاٹیوں میں سے ایک گھاٹی کہا گیا ہے: ’’ القبر روضۃ من ریاض الجنۃ او حفرۃ من حفر النیران‘‘۔’’قبر جنت کے باغات میں سے ایک باغ یا جہنم کے گڑھوں میں سے ایک گڑھا ہے ‘‘۔

ولایت پورٹل: موت کے ساتھ ہی انسان کی برزخی زندگی کا آغاز ہو جاتا ہے، موت سے قیامت تک کے فاصلہ کو برزخ کہا جاتا ہے۔ جیسا کہ قرآن کریم میں بھی ارشاد ہے: ’’وَمِنْ وَرَائِہِمْ بَرْزَخٌ إِلَی یَوْمِ یُبْعَثُون‘‘۔(۱)
عالم برزخ کا سب سے پہلا مرحلہ وہ سوالات ہیں جو توحید و نبوت یا دوسرے عقائد کے بارے میں فرشتے مرنے والے سے دریافت کرتے ہیں۔
ان سوالات کے جو جوابات دئے جاتے ہیں ان کا تعلق عموماً انسان کی دنیاوی زندگی کے ایمان و عقاید سے ہوتا ہے ، یہ مرحلہ جسے ’’ قبر کے سوال ‘‘ کہا جاتا ہے شیعوں کے مسلم عقائد میں شامل ہے جیسا کہ  شیخ صدوق(رح) نے اپنے رسالہ ’’ اعتقادات ‘‘ میں تحریر کیا ہے:’’ قبر میں سوال جواب کے بارے میں ہمارا عقیدہ یہ ہے کہ یہ حق ہے اور جو شخص ان سوالات کے صحیح جوابات دے گا، رحمت الٰہی اس کے شامل حال ہوجائے گی اور جو شخص غلط جواب دے گا عذاب الٰہی میں مبتلا ہوجائے گا‘‘۔ (۲)
شیخ مفید (رح) نے قبر میں سوال کے مسئلہ کو ذکر کرنے کے بعد یہ یاد دہانی فرمایا ہے کہ: ’’قبر میں سوال ہونا اس بات کی دلیل ہے مردے قبر میں زندہ ہوتے ہیں اور ان کی یہ زندگی قیامت تک جاری رہتی ہے ‘‘۔(۳)
 بعض انسانوں سے مخصوص عذاب قبر کے بارے میں محقق طوسی(رح) فرماتے ہے :’’ عذاب قبر کا وقوع یقینی ہے کیونکہ یہ عقلاً ایک ممکن امر ہے ، اور اس کے بارے میں متواتر روایات موجود ہیں۔ (۴) 
روایات میں قبر کو جنت کے باغات میں سے ایک باغ یا جہنم کی گھاٹیوں میں سے ایک گھاٹی کہا گیا ہے: ’’ القبر روضۃ من ریاض الجنۃ او حفرۃ من حفر النیران‘‘۔’’قبر جنت کے باغات میں سے ایک باغ یا جہنم کے گڑھوں میں سے ایک گڑھا ہے ‘‘۔(۵) 
اس قسم کی روایات میں مقصود وہ قبر نہیں ہے جس میں انسان کے بدن کو دفن کیا جاتا ہے بلکہ اس قبر سے برزخی مقام اور ٹھکانہ مراد ہے۔ (۶)
واضح رہے کہ عدل و انصاف کے اصول اور دینی نصوص کے (۷ ) مطابق قبر میں سوال صرف ان ہی لوگوں سے ہوگا جن کے اندر فرائض کی ادائیگی کے شرائط موجود ہوں گے( یعنی وہ مکلف ہوں گے) اس بناء پربچوں، کم عقل افراد اور، مستضعفین سے سوال نہ ہوگا اسی لئے روایات میں یہ تذکرہ ہے کہ صرف مؤمنین اور کافرین سے ہی سوال ہوگا ۔(۸) 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔ مومنون / ۱۰۰   
۲۔الاعتقادات فی دین الامامیہ باب ۱۷ ۔ ص ۳۸
۳۔ تصحیح الاعتقاد، ص/ ۳۶ ۔ ۴۶       
۴۔کشف الاسرار مقصد/ ۶ مسئلہ/ ۱۶
۵۔خصال شیخ صدوق ، خصلت ھای سہ گانہ ح /۱۸    
۶۔ گذشتہ حوالہ   
۷۔ فروع کافی ج/۱ ص/ ۲۳۵ ۔ ۲۳۷
۸۔بحارا لانوار ج/۶/ ص ۲۷۰ ۔ ۲۷۶







آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 Sep 22