Tuesday - 2018 Dec 11
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 195109
Published : 25/8/2018 8:13

آل سعود کے نزدین حج صرف آمدنی کا ایک ذریعہ

آل سعود خود کو حاجیوں کا خدام کہتی ہے لیکن حقیقت اس کے بر عکس ہے سعودی حکام مناسک حج سے سوء استفادہ کرتے ہیں۔

ولایت پورٹل:حج کے سلسلہ میں آل سعود کی مینجمنٹ پر نظارت کرنے والی بین الاقوامی کمیٹی کا کہنا ہے کہ آل سعود خود کو حاجیوں کا خدام کہتی ہے لیکن حقیقت اس کے بر عکس ہے  سعودی حکام مناسک حج سے سوء استفادہ کرتے ہیں ، ان کے نزدیک یہ انتہائی اہم اسلامی فریضہ صرف آمدنی کے ایک ذریعہ کی حیثیت رکھتا ہے  جس کا ایک واضح ثبوت حاجیوں سے وصول کیے جانے والے انواع اقسام کے ٹیکس ہیں  جنہیں ادا کرنے کے لیے لاکھوں حاجیوں کو قرضے لینا پڑتے ہیں ، زائرین خانہ ٔ خدا جب مکہ میں داخل ہوتے ہیں تو وہاں کے خرچوں کو دیکھ  ان کے ہوش اڑجاتے ہیں  جیسے، مشعر الحرام جانے کے لیے 250 سعودی ریال  ٹرین کا کرایہ، میدان عرفات میں ٹینٹوں کا کرایہ، وغیرہ، الجزائر سے آنے والے ایک حاجی کا کہنا تھا کہ مکہ میں ہوٹل کا کرایہ اس قدر زیادہ ہے  کہ ہمیں  بہت دور اور نہایت ہی معمولی ہوٹل لینا پڑا لیکن پھر بھی ہمیں دو وقت کے کھانے کے لیے مشکلات کا سامنا کر نا پڑا کیونکہ آل سعود تو صرف اپنا فائدہ دیکھتی ہے اور حاجیوں کو جتنا لوٹ سکتی ہے لوٹتی ہے تاکہ بعد  میں یہ پیسہ آپ میں بانٹ سکیں اور دنیا کا امیر ترین خاندان کہلائیں۔




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Dec 11