Monday - 2019 January 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 195492
Published : 27/9/2018 8:17

دفاع مقدس کے مجاہدین کی قربانیاں پوری دینا کو معلوم ہونا چاہیے:رہبر معظم

دفاع مقدس کے مکتوب آثار اور اس سے متعلق بننے والی فلموں کا ترجمہ کرکے مجاہدین کے ایمان اور ناقابل شکست جذبہ کو پوری دنیا تک پہنچانا چاہیے۔
ولایت پورٹل:دفاع مقدس اور ایران کے شہر آبادان کی بعثیوں کے چنگل سے آزادی کی سالگرہ کی مناسبت سے منعقد ہونے والے پروگرام میں تقریر کرتے ہوئے  رہبر معظم نے فرمایا کہ دفاع مقدس کے مکتوب آثار اور اس سے متعلق بننے والی فلموں کا ترجمہ کرکے مجاہدین کے ایمان  اور ناقابل شکست جذبہ کو پوری دنیا تک پہنچانا چاہیے،آپ نے دفاع مقدس اقدار کے سلسلہ میں کام کرنے والے افراد کی کوششوں کو سراہتے ہوئے مجاہدین اور ان گھرانوں کے واقعات ایک بے نظیر سرمایہ قرار دیا اور فرمایا کہ اس سرمایہ کی حفاظت کرنا چاہیے،آپ نے اس وقت کے حالات کو بیان کرتے ہوئے فرمایا کہ دفاع مقدس کے مجاہدین نے اپنے عمل سے اس دور کی وحشی ،ظالم اور معنویت سے دور دنیا کی تصویر کھینچی،رہبر معظم نے بعثی جارح دشمن کے مقابلہ میں ایرانی قوم  کی شرائط کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا کہ اس وقت ہمیں کانٹے دار تار جیسے معمولی سے معمولی امکانات سے استفادہ کی بھی اجازت نہیں دیتے تھے اور دوسر طرف دشمن کوکیمیکل جیسے جدیدترین اسلحہ سے لیس کر  رہےتھےجس سے وہ نہ صرف فوجی ٹھکانوں بلکہ ایران کے شہروں کو بھی نشانہ بناتا تھا، آپ نے فرمایا اس وقت ہم پر نہ صرف سیاسی اور اقتصادی پابندیاں تھیں بلکہ میڈیا میں ہمیں اپنی بات بھی نہیں رکھنے کی اجازت نہیں تھی اور نہ ہی ہماری بات کو ئی سنتا تھا جبکہ دوسری طرف پورے عالمی میڈیا پر صیہونیوں کا قبضہ تھا وہ جیسے چاہتے تھے ذرائع ابلاغ کو ہمارے خلاف استعمال کرتے تھے، آپ نے فرانس اور جرمنی کی طرف بعثیوں کو اسلحہ دیے جانے کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا کہ آج ان ممالک کی عوام کو معلوم نہیں ہونا چاہیے کہ ان کے ممالک نے آٹھ سال ایرانیوں کے ساتھ کیا کیا؟،آج  بھی سامرجی نظام کی جتنی صاف تصویر ہمارے پاس ہے اتنی دنیا میں کسی کے پاس نہیں جو ہمیں دنیا کو دکھانا ہوگی،آپ نے فرمایا کہ آج مغربی فلمی فیسٹیولوں میں ایران فلموں سے کہیں کمتر کیفیت کی فلمیں دکھائی جاتی ہیں لیکن ہمارے دفاع مقدس کی کوئی فلم نہیں دکھاتے ہیں کیونکہ انھیں اس سے خوف ہے اس لیے کہ ان میں سامراجی نظام کی تصویر نظر آتی ہے، یہ ہمارا کا م ہے کہ دنیا کہ زندہ زبانوں میں اس دفاع کے آثار کا ترجمہ کریں  تاکہ دنیا کو معلوم ہوخرم شہر اور آبادان میں دشمن نے ایرانی قوم کے ساتھ کیا کیا اس کے علاوہ اگر ہمارے جوان بھی ان مجاہدین کی قربانیوں پر غور کریں گے تو ان کے دل سےسامراج کا خوف وہراس ختم ہوجائے گا۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2019 January 21