Friday - 2019 January 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 195494
Published : 27/9/2018 16:20

مہمان نوازی کے نام پر بیوی پر ظلم

ہم بڑے فخر سے کہتے ہیں کہ ہمارا دروازہ کھلا ہے اور ہم تو مہمان نواز لوگ ہیں ،جبکہ یہ بھول جاتے ہیں کہ جو مہمان نوازی کسی دوسرے انسان پر ظلم کا سبب بنے وہ مہمان نوازی نہیں ہے۔
ولایت پورٹل: قارئین کرام! ہم میں سے بعض لوگوں کی یہ عادت ہوتی ہے یا اپنی یہ عادت بنا لیتے ہیں کہ ہم اپنے یہاں آئے لوگوں کی ضیافت کریں گے  اور اس کا نام ’’مہمان نوازی‘‘ رکھتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہم مرد ہیں، اور مرد کا دروازہ ہمیشہ دوسروں کے لئے کھلا رہتا ہے ،اور عالم یہ ہے کہ ایک مہمان آرہا ہے اور دوسرا جارہا ہے،دوپہر میں مہمان ، شام میں مہمان،رات کو مہمان۔
یہ امر بذات خود ایک اچھا فعل ہے ، لیکن ہم دوسری طرف اس بات کی رعایت نہیں کرتے کہ وہ عورت کہ جو ہمارے گھر میں ہے اور شرعی طور پر ہمیں یہ حق حاصل نہیں ہے کہ ہم اسے اذیت پہونچائے ، چونکہ وہ ایک آزاد و مختار ہے،اور ہمارے گھر میں کام کرتی ہے ،اور مشقت اور زحمات اٹھاتی ہے اور ہم اسے مہمان نوازی کا نام دیتے ہیں اور بڑے فخر سے کہتے ہیں کہ ہمارا دروازہ کھلا ہے اور ہم تو مہمان نواز لوگ ہیں ،جبکہ یہ بھول جاتے ہیں کہ جو مہمان نوازی کسی دوسرے انسان پر ظلم کا سبب بنے وہ مہمان نوازی نہیں ہے۔

منبع: انسان کامل،شہید مطہری، ص263




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2019 January 18